شمالی کینرا پارلیمانی حلقہ میں کانگریس اور جے ڈی ایس کی کسرت : کیا ہیگڈے کو شکست دینا آسان ہوگا ؟

Source: Vasanth Devadiga/S O News Service | Published on 20th March 2019, 10:37 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

ضلع اترکنڑا  میں   کانگریسی لیڈران کی موجودہ حالت کچھ ایسی ہے جیسے بغیر رنگ روپ والے فن کار کی ہوتی ہے۔ لوک سبھا انتخابات سے بالکل ایک دو دن پہلے تک الگ الگ تین گروہوں میں تقسیم ہوکر  من موجی میں مصروف ضلع کانگریسی لیڈران  مرتا کیا نہ کرتا کے مصداق  ان کی بھاگم بھاگ کو دیکھیں تو پتہ چلتاہے کہ ضلع میں کانگریس کس حدتک مضبوط ہے ، اور اسی کا نتیجہ ہے کہ ہاتھ (کانگریس ) کے گھر میں کسان (جنتادل)  کو جگہ ملی ہے۔

پچھلے دودہوں کی اترکنڑا ضلع  کانگریس کی سرگرمیوں کو دیکھیں  تو وزیر آر وی دیش پانڈے کا ہی یہاں دربار رہاہے!۔ کسی بھی ودھان سبھا حلقہ میں کب، کس کو رکن اسمبلی بنانا ہے  اس کا فیصلہ کرتے ہوئے دیش پانڈے ابھی تک اپنا رعب و دبدبہ باقی رکھتے  آئے ہیں، ان کی اثراندازی کا حال یہ ہےکہ  پارٹی پروگراموں کے لئے وہ  عطیات  جمع کرکے دینے میں ماہر ہیں تو اعلیٰ  سطح کے لیڈران سے بھی سلامی لیتے رہے ہیں۔ اسی کا نتیجہ ہے کہ ہائی کمان کی سطح پراثردار شخصیت مارگریٹ آلواکو بھی دیش پانڈے کے سامنے کچھ کہنا ممکن نہیں ہوا۔ ان سب کھیلوں کو دیکھتے ہوئے کہا جاسکتا ہے کہ شراوتی ندی میں پانی بہت زیادہ  بہہ چکا ہے۔ دیش پانڈے عمر رسیدہ ہوتے جارہے ہیں، ان کے اپنے حلقہ ہلیال میں ہی پارٹی کے اندر مخالفین ان کے خلاف کھڑے ہونے کا موقع تلاش رہے ہیں۔ اسی طرح دیش پانڈے کو جی حضور کہنے والے ضلع کے مختلف تعلقہ جات کے لیڈران کا احساس ہے کہ وقت کے مطابق ہمیں استعمال کرنے والے دیش پانڈے کے خلاف موقع کا فائدہ اٹھانے کے موڈ  میں ہیں۔ یہ سب پارٹی کی اندرونی سیاست کانتیجہ ہے جس کی وجہ سے کہا جارہاہے کہ اس وقت دیش پانڈے تنہائی محسوس کررہے ہیں۔ کیایہی سبب ہے کہ دیش پانڈے انتخابات  قریب ہونے پربھی اپنی جگہ خاموش تھے؟کوئی واضح جواب مل نہیں پارہاہے۔ اس کے ساتھ ہی کانگریس لیڈر بی کے ہری پرساد جب اترکنڑا ضلع کانگریس میں  آنے کااظہار کررہے تھے تو دیش پانڈے اندر سےکتنے ٹوٹ گئے تھے دیکھنے کے لئے دوربین کی ضرورت نہیں ہے۔ ذرائع کا کہنا ہےکہ انہی وجوہات کی بنیاد پر دیش پانڈے نے جے ڈی ایس کے لئے اُتر کنڑ احلقہ کا  ٹکٹ چھوڑدینے کا ذہن بنا لیا تھا ۔ جس کے ثبوت کے طورپر جے ڈی ایس لیڈر وائی ایس وی دتا کا بیان کافی ہے جنہوں نے کہاہے کہ اگر دیش پانڈے اترکنڑا حلقہ کے لئے ضد پر اڑے رہتے تو ہم کچھ نہیں کرسکتے تھے۔ ان کے  بیان کے بعد ضلع کانگریس لیڈران کو اچھی طرح سمجھ میں آگیا ہوگا کہ کیوں اس حلقہ کو جے ڈی ایس کے حوالے کیا گیا ہے۔

آپ کو یہ جان کر تعجب ہوگا کہ  بی جے پی امیدوار اننت کمار ہیگڈے نے  کیا کچھ نہیں کہا،  دستور بدلنے کا بیان دیا ، اس وقت کے وزیراعلیٰ کو بوٹ چاٹنے کے لئے کہا ، سرسی میں ایک ڈاکٹر کی پیٹائی کی ، اور نہ جانے  کیا  کیا کچھ نہیں  بولا  ،مگر کبھی ضلعی کانگریسی لیڈران کی طرف سے   کوئی  مضبوط احتجاج ، دھرنا  یا مذمتی بیان سامنے نہیں آیا۔ مگر جیسے ہی  گذشتہ روز  سنیل ہیگڈے نے دیش پانڈے کو کمیشن پانڈے کہا تو کانگریس کے لیڈران مشتعل ہوگئے  اور احتجاج پر اُتر آئے،  پریس کانفرنس کرنے لگے۔

 اب  کہا جارہا ہے کہ  دیش پانڈے اترکنڑا کی ٹکٹ   کانگریس  کے لئے  مانگ رہے ہیں ! آپ سوچ رہے ہوں گے کہ وہ  کس کے لئے ٹکٹ مانگ رہے ہوں گے کیونکہ  اُن کے  ارد گرد چکر لگانے والے  بھیمنانائک اور  ایس ایل گھوٹنیکر ہیں، کیا اُن کے لئے مانگ رہے ہیں ؟ 

اگر کانگریس کی قیادت کرنےو الے بھیمنانائک کو ٹکٹ دیں گے تو عوام کے سامنے وہ کس منہ سے ووٹ  مانگیں گے اور کس طرح بی جےپی کے سامنے جوابدہ ہوں گے ؟ گر بھیمنا نائک کے لئے نہیں  تو   کیا گھوٹنیکر کے لئے ٹکٹ مانگیں گے  ؟ گھوٹنیکر کے لئے  ٹکٹ نہیں  مانگ سکتے کیونکہ اس کی وجہ عوام خود جانتے ہیں اور  اس کی  زیادہ وضاحت کی ضرورت بھی  نہیں ہے۔ ضلع  اُترکنڑا میں میں چل رہے کھیل  سے سابق وزیر اعلیٰ سدرامیا جیسے لیڈران بھی  بیزار ہوچکے ہیں  جس کی وجہ سے اگر وہ جے ڈی ایس  کو ایک موقع فراہم کرنے کی بات کہتے ہیں تو  اُس میں کوئی مضائقہ نہیں ہے۔

ایک سوال یہ بھی ہے کہ  کیا کانگریس کے بجائے جےڈی ایس ضلع میں جیت حاصل کرسکتی ہے؟۔بات یہ نہیں ہے کہ  اننت کمار ہیگڈے کے خلاف جے ڈی ایس امیدوار کے طورپر آنند اسنوٹیکر جیت حاصل کرسکتے ہیں یا نہیں ، بات یہ ہے کہ اسنوٹیکرانتخابی مہم   کے دوران گالی گلوج پر اُتر ائیں، مشکل میں پڑسکتے ہیں۔ یہاں ایک بات دیکھنے کی ہے کہ  اسنوٹیکر جب  بی جے پی میں شامل ہوکر باہر نکلے تھے تو اُس وقت  نظریاتی طورپر کچھ  کمزور لگ رہے تھے، مگر اب اننت کمارہیگڈے کے خلاف مقابلہ کرتے ہوئے وہ ضلع میں اننت کمار کے  نظریاتی مخالفین کو متحد کرنےکی کوششوں  میں مصروف لگ رہے  ہیں۔ان کی یہ کوشش اگلے دنوں میں کانگریس کے لئے معاون ہوسکتی ہے۔ پچھلے 7-8برسوں سے اسنوٹیکر اور دیش پانڈے کے تعلقات خراب  چل رہے ہیں، اور کہا جارہا ہے کہ  دیش پانڈے  اب اسی اسنوٹیکر کو لے کر انتخابی تشہیر کرنے کے لئے تیار نہیں ہیں، اسی وجہ سے وہ خود کے لئے  اترکنڑا ضلع کے لئے کانگریس کا ٹکٹ مانگ رہے ہیں، لیکن اب ان کی مانگ میں کوئی دم نظر نہیں آرہا ہے۔ ایسے میں  ایک خبر یہ بھی آر ہی ہے کہ مارگریٹ آلوا بیدا ر ہوگئی ہیں۔ سمجھا جارہا ہے کہ  اب آلوا کی پرانی سرگرمیوں کی بنیاد پر ہی کانگریس کو کچھ فائدہ ہوسکتاہے۔ آگے آگے دیکھئے ہوتا ہے کیا !!!

ایک نظر اس پر بھی

منگلورو میں سی اے اے مخالف احتجاج کے دوران ہوئی پولیس فائرنگ میں ہلاک ہونے والے افراد کے خاندانوں کو معاوضہ

بنگلورو میں آئی یو ایم ایل کے نیشنل سکریٹریٹ کا اجلاس منعقد ہوا۔ اس موقع پر کرناٹک کے ساحلی شہر منگلورو کے دو متاثرہ خاندانوں کو پانچ پانچ لاکھ روپئے کے چیک دئے گئے۔

سرسی میں راہ گیرعورتوں کے  زیورات چھین کر فرار ہونے والا لٹیرا گرفتار

راہ چلتی خواتین کے گلےمیں اور ان کے  جسم  پر موجود سونے کے زیورات کو چھین کر فرار ہونے والے لٹیرے کو شہر کی مارکیٹ تھانہ  پولس نے گرفتار کرتےہوئے 1لاکھ روپئے  مالیت کے سونے کے زیورات ضبط کرلینے کا واقعہ پیش آیا ہے۔

بھٹکل انجمن حامئی مسلمین کی نومنتخب مجلس عاملہ کی میٹنگ میں اگلی میعاد کے لئے عہدیداران کا انتخاب : ایڈوکیٹ مزمل قاضیا صدر اور اسماعیل صدیق جنرل سکریٹری منتخب

مشہور و معروف قو می تعلیمی ادارے انجمن حامئی مسلمین بھٹکل کی مین آفس  شمس الدین بلاک میں 22فروری کو محمد شفیع شاہ بندری پٹیل کی صدارت میں  منعقدہ  انجمن کے نومنتخب مجلس انتظامیہ کی میٹنگ میں ہائی کورٹ کے وکیل  ایڈوکیٹ محمد مزمل قاضیا کو صدر اور  جنرل سکریٹری کے طورپردوبارہ ...

بھٹکل میں موٹر گاڑیوں کی بڑھتی تعداد۔ آمدورفت کی دشواریوں پر قابو پانے کے لئے ٹریفک پولیس اسٹیشن کا قیام اشد ضروری

بھٹکل شہر تعلیمی، معاشی اور سماجی طور پرتیز رفتاری کے ساتھ ترقی کی طرف گامزن ہے۔ لیکن اس ترقی کے ساتھ یہاں پر موٹر گاڑیوں کی تعداد میں بھی بے حد اضافہ ہوا ہے جس سے ٹریفک کے مسائل پیدا ہوگئے ہیں۔ دوسری طرف ٹریفک قوانین کی خلاف ورزیاں بھی بڑھتی جارہی ہیں اوراس سے سڑک حادثے بھی ...

اسمبلی الیکشن: الٹی ہو گئیں سب تدبیریں۔۔۔ آز: ظفر آغا

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں... جی ہاں، دہلی اسمبلی الیکشن جیتنے کی بی جے پی کی تمام تدبیریں الٹی پڑ گئیں اور آخر نریندر مودی اور امت شاہ کو کیجریوال کے ہاتھوں منھ کی کھانی پڑی۔ دہلی میں بی جے پی کی صرف ہار ہی نہیں بلکہ کراری ہار ہوئی۔

اسکول کا ناٹک ۔پولس حیلہ بازی کا ناٹک                        ۔۔۔۔۔۔بیدر کے شاہین اسکول کے خلاف ہوئی پولس کاروائی پر نٹراج ہولی یار کی خصوصی رپورٹ

بیدر کے شاہین اسکول میں کھیلے گئے ایک ڈرامے میں اداکاری کرنے والے   اسکولی بچوں سے بار بار پوچھ تاچھ کرنے والے  پولس  کا رویہ ، نہایت  خطرناک اور  خوف میں مبتلا کرنے والا ہے۔ ایک وڈیو کلپ پر انحصار کرتےہوئےمتعلقہ  ڈرامے میں شہری ترمیمی قانون کی تنقید کئے جانے اور وزیرا عظم کی ...