ہوناور قومی شاہراہ پرگزرنےو الی بھاری وزنی لاریوں سے سڑک خستہ؛ میگنیز کی دھول اور ٹکڑوں سے ڈرائیوروں اور مسافروں کو خطرہ

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 22nd January 2019, 9:05 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

بھٹکل:22؍جنوری (ایس او نیوز) حکومت عوام کو کئی ساری سہولیات مہیا کرتی رہتی ہے، مگر ان سہولیات سے استفادہ کرنے  والوں  سے زیادہ اس کاغلط استعمال کرنے والے ہی زیادہ ہوتے ہیں، اس کی زندہ مثال  فورلین میں منتقل ہونے والی  قومی شاہراہ 66 پر سے گزرنے والی بھاری اور  وزنی لاریاں  ہیں۔

قومی شاہراہ 66پر قوت سے زیادہ بھاری وزنی لاریاں گزررہی ہیں، ایسا بھی نہیں کہ یہ بات پولس محکمہ نہیں جانتا۔ میگنیز لوڈ لے کر گزرنےو الی بھاری وزنی لاریوں سے نہ صرف سڑک کی حالت خستہ ہورہی ہے بلکہ عوام کے لئے بھی ان لاریوں سے  خطرہ درپیش ہے۔ اپنی قوت سے زیادہ مینگنیز کا لوڈ  لے کر گزرنے والی ان  لاریوں سے راستے  پر گرنے والاپاوڈر بائک سواروں سمیت  کاروں اور بس سواروں کے لئے بھی پریشانی کا باعث بنتا جارہاہے۔ یہ پاوڈر ڈرائیورو ں کے ساتھ ساتھ مسافروں کی آنکھوں کے لئے بھی نقصان دہ ہے، شاہراہ پر لاریوں سے مینگنیز کے ٹکڑے گرنا عام بات ہے۔

منگلورو بندرگاہ سے ہبلی ،باگلکوٹ ،گلبرگہ کے لئے روزانہ سینکڑوں لاریاں حد سے زیادہ لوڈ لے کر گذرتی  رہتی ہیں۔ کہا جاتاہے کہ لاریوں کے مالکان ہر ماہ تھانہ والوں کو رقم دیتے ہیں۔ ان لاریوں سے راستے پر گرنے والے مینگنیز ٹکڑوں کی نشاندہی کی گئی ہے، مصری کی مانند سیاہ ٹکڑوں کا ڈھیر راستے کنارے دیکھا جاسکتاہے، اسی طرح قومی شاہراہ پر مینگنیز کے بڑے بڑے پتھر بھی نظر آئیں گے۔ عوام نے ایسی لاریوں کو نہ روکنے اور سرکاری محکمہ کی جانب سے انکھیں بند کرنے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے  ان اوور لوڈ اور اوور ویٹ لاریوں کو روکنا ضروری قرار دیا ہے، ورنہ فورلین کی شاہراہ عوام کے لئے رحمت کے بجائے زحمت کی وجہ بننے کی تنبیہ کی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

لوک سبھا انتخابات: کیا اُترکنڑا میں انکم ٹیکس کے مزید چھاپے پڑنے والے ہیں؟

پارلیمانی الیکشن کے پس منظر میں محکمہ انکم ٹیکس اور انتخابی نگراں اسکواڈ کی طرف سے مختلف ٹھکانوں پر جو چھاپے مارے جارہے ہیں، اس تعلق سے خبر ملی ہے کہ ضلع شمالی کینرا میں مزیدکئی سیاسی لیڈروں اورتاجروں کے ٹھکانوں پر چھاپے پڑنے والے ہیں۔

شمالی کینرا پارلیمانی امیدوار آنند اسنوٹیکر کی انتخابی مہم میں وزیراعلیٰ کمارا سوامی اور ضلع انچارج وزیر دیشپانڈے کی شرکت

ضلع شمالی کینرا کی پارلیمانی سیٹ پرمرکزی وزیر اور بی جے پی امیدواراننت کمار ہیگڈے کے خلاف جنتادل ایس اور کانگریس کے مشترکہ امیدوار آنند اسنوٹیکر کی تشہیری مہم میں اس وقت تیزی آگئی جب ریاستی وزیراعلیٰ کماراسوامی اور ضلع انچارج وزیر آر وی دیشپانڈے نے مختلف مقامات پر انتخابی ...

ضلع شمالی کینرا میں محکمہ انکم ٹیکس کے چھاپے۔ بی جے پی امیدوار اننت کمار ہیگڈے کے قریبی افراد پر۔87.70لاکھ روپے ہوئے ضبط

ضلع ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر ہریش کمار کی طرف سے جاری کی گئی رپورٹ کے مطابق مصدقہ اطلاعات کی بنیا د پر انتخابی ضابطہ اخلاق لاگو کرنے پر تعینات فلائی اسکواڈ اور محکمہ انکم ٹیکس نے سرسی اور سداپور میں بی جے پی امیدوار اننت کمار ہیگڈے کے شناسا افراد پر چھاپہ ماری کی اوراس کے نتیجے میں ...

کانگریس پارٹی نے کیا غیر رہائشی ہندوستانی ووٹروں کے لئے ڈسٹرکٹ کوآر ڈینیٹرکے بطوربھٹکل کے قمر سعدا کا تقرر

بھٹکل کے مشہورغیر رہائشی سماجی خدمت گار اور سعودی عرب کے تاجر قمر سعدا صاحب کو کرناٹکا پردیش کانگریس کی طرف سے پارلیمانی انتخابات کے موقع پر ووٹنگ کے لئے وطن میں تشریف لانے والے این آر آئیز کے لئے’ ڈسٹرکٹ کوآر ڈینیٹر‘ مقرر کیا ہے ۔

مرڈیشورمیں گندگی اور آلودگی کی بھرمار : عوام سمیت سیاح بھی پریشان؛ قریب میں پولنگ بوتھ ہونے سے ووٹروں کو بھی ہوسکتی ہے بڑی پریشانی

مشہور سیاحتی مرکز مرڈیشور فی الحال یتیمی کی صورت حال سے دوچار ہے، انتظامیہ کی بدنظمی سے مرڈیشور کا ماحول خراب حالت کو پہنچا ہواہے، کچرے میں لگاتار اضافہ ہونے سے مرڈیشور میں عوام کا  چلنا پھرنا بھی دوبھر ہوگیا ہے۔ 

کیا مخلوط حکومت کے تقاضے پورے کرنے میں کانگریس پارٹی ناکام رہے گی۔ ضلع شمالی کینرا میں ظاہری خاموشی کے باوجود اندرونی طوفان موجود ہے

ضلع شمالی کینرا کی پارلیمانی سیٹ پر انتخاب کے لئے ابھی صرف کچھ دن ہی باقی رہ گئے ہیں لیکن انتخابی پارہ پوری طرح اوپر کی طرف چڑھتا ہوا نظر نہیں آرہا ہے۔

شمالی کینرا پارلیمانی حلقہ میں کانگریس اور جے ڈی ایس کی کسرت : کیا ہیگڈے کو شکست دینا آسان ہوگا ؟

ضلع اترکنڑا  میں   کانگریسی لیڈران کی موجودہ حالت کچھ ایسی ہے جیسے بغیر رنگ روپ والے فن کار کی ہوتی ہے۔ لوک سبھا انتخابات سے بالکل ایک دو دن پہلے تک الگ الگ تین گروہوں میں تقسیم ہوکر  من موجی میں مصروف ضلع کانگریسی لیڈران  مرتا کیا نہ کرتا کے مصداق  ان کی بھاگم بھاگ کو دیکھیں ...

شمالی کینرا پارلیمانی سیٹ کو جے ڈی ایس کے حوالے کرنے پر کانگریسی لیڈران ناراض؛ کیا دیش پانڈے کا دائو اُلٹا پڑ گیا ؟

ایک طرف کانگریس اور جنتا دل ایس کی مخلوط حکومت نے ساجھے داری کے منصوبے پر عمل کرکے سیٹوں کے تقسیم کے فارمولے پر رضامند ہونے کا اعلان کیا ہے تو دوسری طرف کچھ اضلاع سے کانگریس پارٹی کے کارکنان اور مقامی لیڈران میں بے اطمینانی کی ہوا چل پڑی ہے۔ جس میں ضلع اڈپی کے علاوہ شمالی کینرا ...

پاکستان پر فضائی حملے سے بی جے پی کے لئے پارلیمانی الیکشن کا راستہ ہوگیا آسان !  

پاکستان کے بہت ہی اندرونی علاقے میں موجود دہشت گردی کے اڈے پر ہندوستانی فضائی حملے سے بی جے پی کو راحت کی سانس لینے کا موقع ملا ہے اور آئندہ پارلیمانی انتخابات جیتنے کی راہ آسان ہوگئی۔اور اب وہ سال2017میں یو پی کے اسمبلی انتخابات جیتنے کی طرز پر درپیش لوک سبھا انتخابات جیتنے کے ...

ہندوستان میں اردو زبان کی موجودہ صورتحال، عدم دلچسپی کے اسباب اوران کا حل ۔۔۔۔ آز: ڈاکٹر سید ابوذر کمال الدین

یہ آفتاب کی طرح روشن حقیقت ہے کہ اردو بھی ہندی، بنگلہ، تلگو، گجراتی، مراٹھی اور دیگر ہندوستانی زبانوں کی طرح آزاد ہندوستان کی قومی اور دستوری زبان ہے جو دستورِ ہند کی آٹھویں شیڈول میں موجود ہے۔ لہٰذا یہ کوئی نہیں کہہ سکتا کہ اردو ہندوستان کی زبان نہیں ہے۔ جو ایسا کہتا ہے اور ...