کرناٹکا کی مخلوط سرکار اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد کا سامنا کرنے تیار؛ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد اسپیکر نے کہا،استعفوں کے تعلق سے مزید وقت درکار ہے؛ کماراسوامی کا استعفی دینے سے انکار

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 12th July 2019, 4:58 AM | ریاستی خبریں | ملکی خبریں |

بنگلور 11/جولائی (ایس او نیوز) کرناٹک میں جاری سیاسی ہنگامہ اور ڈرامے کے درمیان کانگریس اور جے ڈی ایس کی مخلوط حکومت کی کابینہ نے اہم فیصلہ کرتےہوئے اعلان کیا ہے کہ ان کی سرکار اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد کاسامنا کرنے کو تیار ہے۔ وزیراعلیٰ  کماراسوامی کی صدارت میں ہونے والی کابینہ کی میٹنگ میں متعدد وزراء شریک ہوئے اور سبھی نے اتفاق رائے سے یہ قرار داد منظور کی کہ اگر سرکار کو اسمبلی میں تحریک عدم اعتماد کا سامنا کرنے پر مجبور کیا جاتا ہے تو وہ اس کے لئے بھی تیار ہیں۔ ساتھ ہی کابینہ نے یہ اعتماد بھی ظاہر کیا کہ  کرناٹک میں ان کی سرکار کو کوئی خطرہ نہیں ہے اور وہ اسمبلی کا ٹیسٹ بھی پاس کرلیں گے۔

ایک طرف ریاست میں سیاسی بحراان جلد ختم ہونے کے آثار نظر نہیں آرہے ہیں، وہیں ریاستی مخلوط حکومت کی بحالی کا خطرہ بھی بڑھتا نظر آرہا ہے۔

اس سے قبل باغی اراکین کی عرضداشت پر شنوائی کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے اسمبلی کے اسپیکر کے آر رمیش کو یہ حکم دیا تھا کہ وہ جمعرات کی شام تک اراکین کے استعفوں پر فیصلہ کرلیں لیکن اسپیکر کی جانب سے اس معاملے میں  مزید وقت طلب کیا گیا ہے۔ ایسے میں سپریم کورٹ نے اس معاملے کی شنوائی جمعہ کو بھی رکھی ہے اور اس میں اسپیکر کے فیصلوں کے مطابق شنوائی کی جائے گی۔ دوسری طرف اسپیکر کے آر رمیش  نے بھی   اعلان کیا ہے کہ وہ باغی اراکین سے ہونے والی گفتگو اور ان کے استعفوں پر ہونے والی تمام کاروائی کی وڈیو گرافی  عدالت کو  روانہ کریں گے تاکہ عدالت کو حقیقت کا پتہ چلے۔

 آٹھ ارکان اسمبلی کے استعفیٰ کا فارمیٹ غلط؛ جلد بازی میں نہیں کروں گا فیصلہ:  کرناٹک کے سیاسی بحران پر سپریم کورٹ کی ہدایت کے بعد باغی ارکان نے اسپیکر کے  آر رمیش کمار سے ملاقات کی۔ باغی ارکان اسمبلی سے ملنے کے بعد  اسپیکر کے آر رمیش کمار نے ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ  میں جلد بازی میں کام نہیں کرتا ہوں میں جانچ پڑتال کے بعد   آئین کے مطابق  ہی  فیصلہ کروں گا ۔ کمار نے کہا کہ  ارکان اسمبلی سے ہوئی پوری گفتگو  کی وڈیو گرافی کرائی گئی ہے اور میں اُسے  سپریم کورٹ میں ثبوت کے طور پر پیش کروں  گا۔اسپیکر کے آر رمیش نے کہا کہ  مجھ پر دھیمی سنوائی کا جو الزام لگایا گیا ہے میں اُس سے کافی دُکھی ہوں، پچھلے 40 سالوں سے عوامی زندگی میں ہوں، میں  زندگی کو عزت کے ساتھ جینے کی کوشش کرتا ہوں، انہوں نے کہا کہ استعفیٰ دینے کا ایک  فارمیٹ ہے، ان استعفوں میں سے آٹھ صحیح فارمیٹ میں نہیں تھے۔

ارکان اسمبلی کے الزام پر اسپیکر  نےآگے کہا کہ آرکان اسمبلی 6 جولائی  کو 2:30 بجے استعفیٰ دینے آئے تھے جبکہ میں اُس دن  12:45 بجے تک آفس میں رہا ا تھا ور اس کے بعد چلا گیا تھا۔ حالانکہ  ان اراکین نے  مجھے آنے کی کوئی جانکاری تک نہیں دی تھی۔ اُن لوگوں نے مجھ سے ملنے کا وقت تک نہیں مانگا تھا، اس کے بعد بھی کہا جارہا ہے کہ میں بھاگ گیا تھا۔

وزیراعلیٰ کماراسوامی کا استعفیٰ سے انکار:  سیاسی بحران کے درمیان وزیر اعلیٰ  کماراسوامی نے آج جمعرات کو  عہدہ سے استعفیٰ دینے سے صاف انکار کردیا اور کہا کہ حکومت کو فوری طور پر کوئی خطرہ نہیں ہے، فی الحال ایسے حالات پیدا نہیں ہوئے ہیں کہ انہیں یہ عہدہ چھوڑنا پڑے ۔ انہوں نے یہ  اُمید ظاہر کی کہ مخلوط حکومت کے اراکین اسمبلی کی بغاوت سے پیدا ہونے والا بحران جلد ختم ہوجائے گا۔ کماراسوامی نے اس اُمید کا بھی اظہار کیا کہ  اسمبلی رکنیت سے استعفی دینے والے سبھی 16 اراکین اسمبلی اپنا استعفیٰ واپس لے لیں گے اور حکومت کو اپنی تائید جاری رکھیں گے۔

ایک نظر اس پر بھی

شیواجی نگر حلقے سے کانگریس کا راست مقابلہ بی جے پی سے عوام کو حلقے کی فلاح کے حق میں فیصلہ لینا ہوگا۔ انتشار سے فرقہ پرست بی جے پی کو فائدہ ہوگا: رضوان ارشد

یواجی نگر اسمبلی حلقہ جو ان اسمبلی حلقوں میں شامل ہے جس کے اراکین اسمبلی نے بی جے پی کے آپریشن کنول کا حصہ بن کر اپنی رکنیت سے استعفیٰ دیا اور نا اہل قرار پائے اس حلقے میں 5دسمبر کو ضمنی انتخابات کے لئے تینوں اہم سیاسی جماعتوں سے امیدوار میدان میں آچکے ہیں۔

بیدر میں گرلزاسلامک آرگنائزیشن کی جانب سے یومِ اُردو کا انعقاد؛ ”ایک قدم...اُُردو کی بقاء ترقی و ترویج کیلئے“

گرلز اسلامک آرگنائزیشن آف انڈیا کرناٹک (بیدریونٹ) کی جانب سے یومِ اُردو بعنوان ”ایک قدم...اُردو کی بقا ء ترقی و ترویج کیلئے“کا انعقاد بیدر میں منعقد ہوا  جس میں مہمانِ خصوصی کی حیثیت سے خطاب کرتے ہوئے محترمہ ڈاکٹر سرورعرفانہ سی آر پی بھا لکی محکمہ تعلیمات عامہ بیدر نے کہا کہ ...

ریاست میں ڈینگو بخار سے عوام پریشان : جنوری سے ابھی تک 14757افراد ڈینگو میں مبتلا

ریاست میں ڈینگو بخار کا ہنگامہ جاری ہے، محکمہ صحت اور خاندانی فلاح وبہبودی کے مطابق یکم جنوری سے ابھی تک 14757افراد ڈینگو میں مبتلا پائے گئے ہیں، جس سے پچھلے ایک دہے میں سب سے زیادہ ڈینگو معاملات امسال درج کئے گئے ہیں۔

آپریشن کنول کا بھانڈا پھوٹا؛کمارسوامی حکومت کوگرانے کی کوشش امیت شاہ کی ہدایت پر ہوئی:رمیش جارکی ہولی

کل ہی بی جے پی میں شمولیت اختیار کرنے والے نا اہل اراکین اسمبلی نے جہاں سابقہ مخلو ط حکومت کوگرانے کے لئے کئے گئے آپریشن کنول کے متعلق انکشافات کئے ہیں وہیں ان باغیوں کے لیڈر سمجھے جانے والے رمیش جارکی ہولی نے یہ علی الاعلان کہا ہے کہ ریاست کی کمارسوامی حکومت کو مرکزی وزیر ...

جھارکھنڈ میں بنے گی کانگریس حکومت، گزشتہ 5 سالوں میں بی جے پی حکومت ہر محاذ پر ناکام

جھارکھنڈ کانگریس کے ایگزیکٹو چیئرمین سنجے پاسوان نے دعوی کیا کہ ریاست میں ہونے والے اسمبلی انتخابات میں کانگریس-جھارکھنڈ مکتی مورچہ-آر جے ڈی 'مهاگٹھبدھن' کی ہی جیت ہوگی، کیونکہ لوگوں نے دیکھ لیا ہے کہ گزشتہ پانچ سالوں میں بی جے پی حکومت ہر محاذ پر ناکام رہی ہے۔

جوسر مشین، بلیوٹوتھ اسپیکر میں سونا چھپاکر لا رہا ایک شخص دہلی ہوائی اڈے پر گرفتار

دہلی کے اندرا گاندھی بین الاقوامی ہوائی اڈے پر کسٹم حکام نے ایک شخص کوجوسر مشین، بلیوٹوتھ اسپیکرس میں سونا چھپا کر لانے کے الزام میں گرفتار کیا ہے۔کسٹم محکمہ نے ایک بیان میں کہا کہ دبئی سے آئے ایک مسافر کو جمعرات کو آمد دروازے پر ہی روک لیا گیا۔

بی جے پی بتائے کہ اسے انتخابی بانڈ کے ذریعے کتنے ہزار کروڑ روپے کا چندہ ملا: کانگریس

کانگریس نے ایک میڈیا رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے پیر کو دعوی کیا کہ انتخابی بانڈ سے غیراعلانیہ چندے اور منی لانڈرنگ میں اضافہ ہوگا۔بی جے پی حکومت پر نشانہ لگاتے ہوئے کانگریس کے چیف ترجمان رندیپ سرجیوالا نے سوال کیا کہ حکمران پارٹی کو بتانا چاہئے کہ انتخابی بانڈ کے ذریعے اسے کتنے ...