اسکولی کتابوں میں 'کیو آر کوڈ' کا استعمال؛ اساتذہ اور طلباء کو مزید سہولتیں فراہم کرنے کا منصوبہ

Source: S.O. News Service | By Staff Correspondent | Published on 30th October 2018, 8:34 PM | ساحلی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

کاروار30؍اکتوبر(ایس او نیوز) حکومت کی طرف سے اسکول کی نصابی کتابوں میں پہلی مرتبہ ’کیو آر کوڈ‘( quick response code)کا استعمال کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔ جس کی وجہ سے اساتذہ او رطلبہ کے لئے سیکھنا اور سکھانا مزید آسان ہوجائے گا کیونکہ کیو آر کوڈ کی وجہ سے متعلقہ مضمون کے اسباق کوموبائل پر ڈاؤن لوڈ کیا جاسکے گا۔

مرکزی وزارت فروغ انسانی وسائل نے ’دیکشا‘ نامی موبائل فون ایپلی کیشن تیار کیا ہے۔ اس کا استعمال کرتے ہوئے نصابی کتابوں کے کیوآر کوڈ کو اسکیان کرنا اوراستفادہ کرنا آسان ہوجائے گا۔ریاستی سرکار کی طرف سے فراہم کی جانے والی چھٹی جماعت سے دسویں جماعت تک حساب، سائنس اور انگلش کی نصابی کتابوں میں کیو آر کوڈ کا استعمال کیاجارہا ہے۔اس کی وجہ سے طلبہ، اساتذہ اور والدین پڑھائے جارہے مضامین کو ڈیجیٹل طریقے سے ڈاؤن لوڈ کر سکیں گے۔یہ سلسلہ ریاستی تعلیم و تحقیق اور تربیت کے محکمے (ڈی ایس ای آر ٹی)کی جانب آئندہ تعلیمی سال کے ساتھ عمل میں آئے گا۔اس سہولت کی وجہ سے امتحان کے دنوں میں اسباق کو اچھی طرح سمجھنے اور یاد کرنے میں طلبہ کو ا س سے بڑی مدد ملے گی۔ابتدا میں کنڑا اور انگریزی زبان کے لئے کیو آر کوڈ سے ڈاؤن لوڈ کرنے کی سہولت رہے گی۔ اس کے بعد آگے چل کر بقیہ زبانوں جیسے اردو، تمل، ہندی اور مراٹھی زبان میں اس کا استعمال کیا جاسکے گا۔اس کے لئے طلبہ کو پہلے کتابوں پر موجود کیو آر کوڈ اپنے موبائل فون پر اسکیان کرنا ہوگا پھر اس کے بعد’دیکشا‘ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرکے اس کے تعلق سے اضافی معلومات حاصل کی جاسکیں گی۔ خاص بات یہ ہے کہ نصابی کتابوں سے متعلقہ مواد اس ایپ میں آڈیو اور ویڈیو کی شکل میں ہوگا۔

ایک نظر اس پر بھی

لوک سبھا انتخابات؛ اُترکنڑا میں کیا آنند، آننت کو پچھاڑ پائیں گے ؟ نامدھاری، اقلیت، مراٹھا اور پچھڑی ذات کے ووٹ نہایت فیصلہ کن

اُترکنڑا میں لوک سبھا انتخابات  کے دن جیسے جیسے قریب آتے جارہے ہیں   نامدھاری، مراٹھا، پچھڑی ذات  اور اقلیت ایک دوسرے کے قریب تر آنے کے آثار نظر آرہے ہیں،  اگر ایسا ہوا تو  اس بار کے انتخابات  نہایت فیصلہ کن ثابت ہوسکتےہیں بشرطیکہ اقلیتی ووٹرس  پورے جوش و خروش کے ساتھ  ...

بھٹکل میں بی کے ہری پرساد کا بی جے پی اور مودی پر راست حملہ، کہا؛ پسماندہ طبقات کومزید کمزور کرنے کی سازش رچی جارہی ہے

بی جے پی بھلے ہی اپنے آپ کو اقلیت مخالف پارٹی کے طور پر پیش کرتی ہو، مگر  دیکھا جائے تو یہ پارٹی حقیقتاً پسماندہ طبقات، دلت اور ادیواسیوں کو  مزید  کمزور کرنے کی سازش میں لگی ہوئی ہے اور صرف ایک طبقہ کو برسراقتدار پر لانے میں کوشاں ہے۔ یہ بات  آل انڈیا کانگریس کمیٹی (اے آئی ...

اگر آپ عزت دار ماہی گیر ہیں تو آننت کمار ہیگڈے کو ہرگز ووٹ نہ دیں؛ بھٹکل میں ماہی گیروں سے پرمود مدھوراج کی اپیل

اگر آپ عزت دار ماہی گیر ہیں تو  آپ کو چاہئے کہ  ماہی گیروں کی پرواہ نہ کرنے والے بی جے پی اُمیدوار آننت کمار ہیگڈے  کو ہرگز ووٹ  نہ دیں۔ ملپے سے نکلی سات ماہی گیروں پر مشتمل بوٹ لاپتہ ہوکر  پانچ ماہ ہوچکے ہیں مگر مرکزی وزیر آننت کمار ہیگڈے کو ماہی گیروں کی پرواہ ہی نہیں ہے۔ ...

منگلورو میں ایک عجیب سانحہ۔بوتھ کے آخری ووٹر نے ووٹ دینے کے بعد لی آخری سانس

پاجیرو گاؤں کے پانیلا میں ایک شخص نے پولنگ بوتھ میں اپنا ووٹ ڈالنے کے بعد گھر لوٹتے ہی دم توڑ دیا۔پانیلا کے رہنے والے والٹر ڈیسوزا(۴۰سال) گردے کی بیماری میں مبتلا تھاجس کے لئے وہ بہت عرصے سے زیرعلاج تھا۔

لوک سبھا انتخابات: اُترکنڑا ڈپٹی کمشنر نے کمٹہ اوربھٹکل میں پارلیمانی انتخابات کی تیاریوں کا لیا جائزہ

ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر ہریش کمار نے ضلع شمالی کینرا کے حلقے میں واقع کمٹہ اور بھٹکل شہروں میں پارلیمانی الیکشن کے لئے انتظامیہ کی طرف سے کی گئی حتمی تیاریوں کا معائنہ کیا۔

دو مراحل میں ایس پی۔بی ایس پی اور کانگریس ’ صفر‘: یوگی

اتر پردیش کے وزیر یوگی آدتیہ ناتھ نے جمعہ کو کہا کہ لوک سبھا انتخابات کے لئے ووٹنگ کے اختتام پذیر ہو چکے دو مراحل میں ایس پی، بی ایس پی اور کانگریس ’ صفر‘ رہی ہیں۔ یوگی نے سنبھل میں ایک جلسہ عام میں کہا کہ ووٹنگ کے دو مرحلے ہو چکے ہیں۔ بی جے پی کو سب سے زیادہ ووٹ ملے ہیں۔ انہوں نے ...

لوک سبھا انتخابات: کیا اُترکنڑا میں انکم ٹیکس کے مزید چھاپے پڑنے والے ہیں؟

پارلیمانی الیکشن کے پس منظر میں محکمہ انکم ٹیکس اور انتخابی نگراں اسکواڈ کی طرف سے مختلف ٹھکانوں پر جو چھاپے مارے جارہے ہیں، اس تعلق سے خبر ملی ہے کہ ضلع شمالی کینرا میں مزیدکئی سیاسی لیڈروں اورتاجروں کے ٹھکانوں پر چھاپے پڑنے والے ہیں۔