منگلورو: 44سال پہلے صندل سپلائی کے معاملے میں مطلوب 65سالہ شخص گرفتار

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 28th July 2018, 12:25 AM | ساحلی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

منگلورو/کاسرگوڈ  :27/جولائی (ایس اؤ نیوز) دکشن کنڑا ضلع کی پتور  پولس نے 65 سالہ ایک معمر شخص کو اُس کے گھر سے یہ کہہ کر گرفتار کرلیا   کہ یہ شخص 44 سال پرانے ایک صندل کی لکڑی کے معاملے میں پولس کو مطلوب تھا۔ گرفتار شدہ شخص کی شناخت عباس کے طور پر کی گئی ہے۔ گرفتار شخص کو بعد میں عدالت نے ضمانت پر رہا کردیا۔

ذرائع سے ملی اطلاع کے مطابق 44برس پرانے کیس میں دکشن کنڑا ضلع پتور کی پولس  عباس کو گرفتار کرنے جب اُس کے گھر  پہنچی تو ملزم حیرت زدہ رہ گیا۔ بتایا گیا ہے کہ  15جولائی 1974کو عباس اپنی بائک کے ذریعے 7 کلو  صندل کی لکٹری لے جارہاتھاتو بلیری چک پوسٹ پر ڈیوٹی پر تعینات ہیڈ کانسٹبل گنگوجی راؤ سواریوں کی  جانچ   کررہے تھےتو اس دوران  عباس فرار ہونے  میں کامیاب ہوگیا تھا ، مگر  قادر نامی ایک شخص پولس کے ہتھے چڑھ گیا تھا۔  بتایا گیا ہے کہ عباس اور اس کے ساتھی قادر کے خلاف  پتور پولس تھانےمیں کیس درج ہواتھا۔ مگر قادر عدالت کی سنوائی کے بعد بے قصور ہوکر رہا ہوگیا تھا۔   جب کہ عباس مفرور قرار دیا گیا تھا۔

اطلاع کے مطابق  ہیڈکانسٹبل پرمیشور اس معاملے کی جانکاری جٹانے کے لئے پچھلے 4مہینوں  سے مصروف تھے۔ اور جانکاری ملتے ہی وہ  کیرلا کے کاسرگوڈ ضلع چنگل دیہات کے کونیلا پہنچے اور 44 سال پرانے کیس میں مطلوب عباس کو گرفتار کرنے میں کامیابی حاصل کی۔ پولس کا کہنا ہے کہ  44 سال قبل جب عباس فرار ہوا تھا تو اُسی وقت   عباس نے  اپنا گھر اور پتہ بدل کر کیرلا چلا گیا پھر وہاں اپنا نام  بدل کر بشیر کے نام سے رہائش اختیار کی تھی، پولس کا دعویٰ ہے کہ گرفتاری کے بعد ابتداء میں اس نے اپنے جرم کو قبول کرنے سے انکارکیا تھا لیکن سختی کے بعد اس نے اپنا جرم  قبول کرلیا۔ بتایا گیا ہے کہ گرفتاری کے بعد جب عباس کو عدالت میں پیش کیا گیا تو عدالت نے اسے ضمانت پر رہا کردیا ہے۔

معاملے کے متعلق پولس نے واضح کیا ہے کہ وہ پچھلے کئی مہینوں سے طویل المدت بقیہ کیسوں کی چھان بین کررہی ہے ، اس سلسلے میں کئی ملزموں کی گرفتاری کا سلسلہ جاری ہے عباس کا معاملہ بھی اسی کی ایک کڑی  ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل میونسپل پارک کی تجدیدکاری میں بدعنوانی کا الزام۔ ڈپٹی کمشنر کے نام میمورنڈم

بھٹکل بلدیہ کے حدود میں بندر روڈ پر واقع سردار ولبھ بھائی پٹیل پارک کی تجدید کاری میں بدعنوانی کا الزام لگاتے ہوئے  آسارکیری کے عوام  نے بلدیہ انجینئر کو پارک میں طلب کرکے ڈپٹی کمشنر کے نام میمورنڈم دیا جس میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ یہاں ہورہی بدعنوانی کی تحقیقات کروائی جائے۔

کاروار کے ہوم گارڈس دفتر اورکیگا شہری تحفظ مرکز میں یوم ِآزادی کی خصوصی تقریب

شہر میں ہوم گارڈس دفتر میں 72واں یوم ِ آزادی کا جشن پرچم کشائی کے ساتھ منایاگیا ۔ ضلعی آفیسر دیپک گوکرن  نے جھنڈا لہرانے کے بعد خطاب کرتے ہوئے کہاکہ ہمیں یہ آزادی کئی ایک مہان ہستیوں کی قربانی کے بعد ملی ہے۔ یہ ملک تکثریت میں وحدت پیش کرنے والا ایک انوکھا ملک ہے۔انہوں نے کہاکہ ...

کاروار : ضلع پنچایت اورمیڈیکل کالج میں یوم ِ آزادی کا جشن :ایمانداری سے اپنے فرائض کو انجام دینا  سچی دیش بھگتی  

اترکنڑا ضلع کے مرکزی مقام کاروار میں اترکنڑا ضلع پنچایت اور میڈیکل سائنس سنٹر میں  جوش و خروش کے ساتھ یوم آزادی کا جشن منایا ۔ جس کی مختصر تفصیل ذیل میں دی جارہی ہے۔ ...

بھٹکل میں یوم آزادی کا جشن پورے جوش وخروش کے ساتھ منایا گیا؛ تعلقہ انتظامیہ کی جانب سے اسسٹنٹ کمشنر نے لہرایا جھنڈا

ہر سال کی طرح امسال بھی بھٹکل میں پورے جوش و خروش کے ساتھ  یوم آزادی کی تقریب منائی گئی اور تعلقہ انتظامیہ سمیت مختلف سرکاری اور غیر سرکاری اداروں سمیت تعلیمی اداروں میں بھی  ترنگا جھنڈا لہرایا گیا۔

کورگ میں بارش کی بھاری تباہی ، تین اموات،زمین کھسکنے کے متعدد واقعات 

جنوبی ہند کا کشمیر کہلانے والے ریاست کے کورگ ضلع میں بارش نے زبردست تباہی مچادی ہے۔ ایک طرف بارش کا سلسلہ رکنے کا نام نہیں لے رہا ہے تو دوسری طرف پڑوسی ریاست کیرلا میں طوفانی بارش کے سبب وہاں کی ندیوں کا پانی بھی کرناٹک کی طرف بہادیا گیا ہے،

مہادائی ٹریبونل کے فیصلے کا چیلنج کرنے ریاستی حکومت تیار

ریاستی وزیر برائے آبی وسائل ڈی کے شیوکمار نے کہاکہ شمالی کرناٹک کے بعض اضلاع کو پینے کے پانی کی فراہمی کا واحد ذریعہ مہادائی کے پانی کی تقسیم کے سلسلے میں حال ہی میں ٹریبونل نے جو فیصلہ صادر کیا ہے ریاستی حکومت اس کا سپریم کورٹ میں چیلنج کرے گی۔

بھٹکل میونسپل پارک کی تجدیدکاری میں بدعنوانی کا الزام۔ ڈپٹی کمشنر کے نام میمورنڈم

بھٹکل بلدیہ کے حدود میں بندر روڈ پر واقع سردار ولبھ بھائی پٹیل پارک کی تجدید کاری میں بدعنوانی کا الزام لگاتے ہوئے  آسارکیری کے عوام  نے بلدیہ انجینئر کو پارک میں طلب کرکے ڈپٹی کمشنر کے نام میمورنڈم دیا جس میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ یہاں ہورہی بدعنوانی کی تحقیقات کروائی جائے۔