ریاست میں لوک سبھا انتخابات کابخار تیز کانگریس اور جے ڈی ایس کیلئے بی جے پی سے سخت ٹکر متوقع

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 11th March 2019, 11:11 AM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بنگلورو ،11؍مارچ (ایس او نیوز) ریاست کرناٹک میں آئندہ ہونے ولے لوک سبھا انتخابات کا بخار دن بدن تیز ہوتا جارہا ہے ۔ کانگریس اور اپوزیشن بی جے پی نے ریاست میں رائے دہند گان کو لبھانے کی اپنے اپنے طریقے سے کوشش شروع کردی ہے ۔الیکشن کمیشن سے لوک سبھا انتخابات کا اعلان ہوچکا ہے ۔ اس کے ساتھ ہی ملک بھر میں انتخابی ضابطہ اخلاق نافذ ہوجائے گا ۔ اس سے قبل بڑی سیاسی پارٹیوں نے انتخابی مہم کا آغاز کردیا ہے۔وزیراعظم نریندر مودی نے کرناٹک میں کلبرگی سے جہاں اپنی پارٹی کیلئے انتخابی مہم کا آغاز کیا وہیں کانگریس صدر راہل گاندھی نے ہاویری سے پارٹی کیلئے انتخابی مہم کاآغاز کیا ہے ۔حالانکہ حالیہ دنوں میں ملک کی سیاست میں کئی اہم تبدیلیاں رونما ہوئیں ۔ پہلے پلوامہ دہشت گردانہ حملہ اس کے بعد پاکستان پر سرجیکل اسٹرائک جس میں 300سے زیادہ دہشت گرد وں کے مارے جانے کا دعویٰ پھرمارنے والوں کی تعداد سے متعلق مرکزی حکومت پر سوالات کا انبار، اس کے بعد اچانک رافیل جنگی طیاروں کا معاملہ دوبارہ اٹھایا جانا، ان تمام رونما ہونے والے واقعات سے یہ خیال کیا جارہا تھا کہ مودی کی مقبولیت اب گھٹ گئی ہے ۔ لیکن نریندر مودی نے6مارچ کو حیدر آباد کرناٹک سے جب انتخابی مہم کا آغاز کیا تو انہیں دیکھنے کیلئے ہزاروں لوک اکٹھا ہوئے تھے ، اس کو دیکھتے ہوئے سیاسی حلقوں میں کہا جارہا ہے کہ مودی کی مقبولیت اب بھی باقی ہے۔ اس مرتبہ ریاست میں کانگریس اورجے ڈی ایس مل کر لوک سبھا انتخابات کا سامنا کررہے ہیں ۔ پہلے جے ڈی ایس نے 12سیٹیں ان کے لئے چھوڑ دینے کا مطالبہ رکھا تھا بعد میں راہل اور دیوے گوڈا کے درمیان ہوئی بات چیت کے دوران 6سیٹوں کو چھوڑ نے پر اتفاق ہوا ۔لیکن جے ڈی ایس مزیدد و سیٹوں کامطالبہ کررہی ہے لیکن ابھی یہ واضح نہیں ہوا ہے کہ جے ڈی ایس کو 6سیٹیں چھوڑی جائیں گی یا 8ابھی اس میں کچھ الجھن پائی جاتی ہے۔اس وقت ریاست کے کل 28سیٹوں میں سے کانگریس کے 10اور جے ڈی ایس کے دو ارکان پارلیمان ہیں جبکہ بی جے پی کے 16ارکان پارلیمان ہیں ۔ اب بی جے پی 22سیٹوں پر کامیابی حاصل کرنے کا دعویٰ کررہی ہے۔حالانکہ ریاست میں کانگریس اور جے ڈی ایس کے درمیان انتخابی سمجھوتہ ہوچکا ہے اس کے باوجود دونوں پارٹیوں کو بی جے پی سے سخت مقابلہ متوقع ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

ہندو لیڈر سورج نائک سونی نے اننت کمار ہیگڈے کو کہا،مودی حکومت کا داغدار وزیر؛ اُس کی مخالفت میں کام کرنے کے لئے نوجوانوں کی ٹیم تیار

ضلع شمالی کینرا میں ایک نوجوان ہندو لیڈر کے طور پر اپنی پہچان رکھنے والے کمٹہ کے سورج نائک سونی نے اخباری کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ’’ وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت میں چل رہی مرکزی حکومت میں اننت کمار ہیگڈے کی حیثیت ایک داغداروزیر کی ہے۔ اور ایسا لگتا ہے کہ انہیں ...

کرناٹک میں نوٹیفکیشن کے پہلے دن 6؍امیداروں کی نامزدگیاں داخل 

ریاست میں لوک سبھا الیکشن کے پہلے مرحلہ میں 14؍سیٹوں پر 18؍اپریل کو ہونے والے الیکشن کے لئے پرچہ نامزدگی کرنے کا آغاز ہوگیا ۔ پہلے دن چار حلقوں میں6؍ امیدواروں کی جانب سے 11؍ مزدگیاں داخل کئیں۔ یہ اطلاع ریاستی الیکشن افسر سنجیو کمار نے دی۔

بنگلورو کے تینوں پارلیمانی حلقوں میں ڈی سی پیز کی زیرنگرانی سخت بندوست لائسنس یافتہ 7؍ہزار ہتھیارات تحویل میں :پولیس کمشنر ٹی۔ سنیل کمار

پولیس کمشنر ٹی۔ سنیل کمار نے بتایا کہ بنگلور سنٹرل ،بنگلور نارتھ اور بنگلور ساؤتھ لوک سبھا حلقوں میں ہونے والے پارلیمانی انتخابات کے لئے ڈپٹی کمشنر آف پولیس (ڈی سی پی) سطح کے پولیس افسروں کی نگرانی میں پولیس کا سخت بندوبست کیاگیا ہے۔

مالیگاؤں 2008ء بم دھماکہ معاملہ: موقع واردات پر موجود دو زخمیوں کی گواہی عمل میں آئی،ابتک 68؍ سرکاری گواہوں کی گواہیاں مکمل

 مہاراشٹر کے گنجان مسلم آبادی والے شہر مالیگاؤں میں 29؍ ستمبر 2008ء کو رو نما ہونے والے بم دھماکہ معاملے کی سماعت میں ہائی کورٹ کے حکم کے مطابق روز بہ روز جاری ہے ،

پربھنی میں جمعیۃعلماء مراٹھواڑہ کی ورکنگ کمیٹی میں اہم امور طے ہوئے

جمعیۃعلماء مراٹھواڑہ کے اراکین عاملہ کا ایک اہم اجلاس مفتی مرزا کلیم بیگ ندوی صدر جمعیۃعلماء مراٹھواڑہ کی صدارت میں سٹی فنکشن ہال ،پربھنی میں منعقد ہوا ،جس میں حالات حاضرہ اور دیگر چند اہم امور پر تبادلہ خیال کے بعد فیصلہ لیا گیا ۔مجلس عاملہ جمعیۃعلماء مراٹھواڑہ کے اس اجلاس ...