’راہل گاندھی سبھی اپوزیشن پارٹیوں کو جوڑیں‘، سنجے راؤت نے ممتا کی مہم کو دیا جھٹکا

Source: S.O. News Service | Published on 8th December 2021, 10:55 AM | ملکی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

ممبئی، 8؍دسمبر (ایس او نیوز؍ایجنسی) شیوسینا رکن پارلیمنٹ سنجے راؤت نے منگل کی شام کانگریس کے سابق صدر راہلگ اندھی سے ان کی رہائش گاہ پر ملاقات کی۔ راہل گاندھی سے ملاقات کے بعد نکلے سنجے راؤت نے کہا کہ راہل گاندھی جی کو آگے آنا چاہیے باقی پارٹیوں سے بات کرنے کے لیے۔ ملک میں کانگریس کے بغیر کوئی الگ فرنٹ ممکن نہیں۔ اپوزیشن محاذ کا چہرہ موضوعِ بحث ہو سکتا ہے۔ اپوزیشن ک ایک ہی محاذ ہونا چاہیے۔

سنجے راؤت نے کہا کہ راہل گاندھی سے طویل بات ہوئی ہے اور جو بات چیت ہوئی ہے فطری ہے، سیاسی ہے۔ سب کچھ ٹھیک ہے۔ راہل گاندھی ممبئی آنے والے ہیں، ایک پروگرام میں حصہ لیں گے۔ فی الحال یہ پوری طرح سے طے نہیں ہوا ہے۔ امید ہے کہ 28-27 دسمبر کو راہل ممبئی آئیں گے۔ ان کی ادھو ٹھاکرے سے ملاقات ہو سکتی ہے۔

اس سے قبل مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی کے بیان کو لے کر شیوسینا نے اپنے رسالہ ’سامنا‘ میں تلخ اداریہ لکھا تھا۔ ’سامنا‘ کے اداریہ میں لکھا گیا تھا کہ ’’کانگریس کو قومی سیاست سے دور رکھنا اور اس کے بغیر یو پی اے کے یکساں اپوزیشن اتحاد بنانا برسراقتدار بی جے پی اور فاشسٹ طاقتوں کو مضبوط کرنے جیسا ہے۔ یہ صحیح ہے کہ ممتا بنرجی نے بنگال میں کانگریس، بایاں محاذ پارٹی کا صفایہ کر دیا، لیکن کانگریس کو قومی سیاست سے باہر رکھنا ایک طرح سے موجودہ فاشسٹ طاقتوں کو مضبوط کرنا اور فروغ دینا ہی ہے۔‘‘

غور طب ہے کہ مہاراشٹر میں شیوسینا، این سی پی اور کانگریس کے اتحاد کی حکومت ہے۔ ایسے میں سنجے راؤت کا راہل گاندھی سے ملاقات کرنا اتحاد کو اور مزید مضبوط کرنے والا قدم ہے۔ خاص طور پر ایسے وقت میں جب ٹی ایم سی چیف ممتا بنرجی اور پارٹی کے مشیر پرشانت کشور لگاتار کانگریس پارٹی پر نشانہ سادھ رہے ہیں۔ ساتھ ہی پارٹی کی توسیع کرنے کے لیے لگاتار ٹی ایم سی میں کانگریس کے لیڈروں کو شامل کرایا جا رہا ہے۔ اس کے علاوہ قیاس آرائیاں ہو رہی ہیں کہ مہاراشٹر یمں برسراقتدار اتحاد کا حصہ شیوسینا اور کانگریس کے رشتے اب قومی سطح پر بھی مضبوط ہو رہے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی میں شامل ہونے والے اسیم ارون پر اکھلیش یادو کا حملہ ’کیسے کیسے لوگ وردی میں چھپے بیٹھے تھے‘

اتر پردیش میں اسمبلی انتخابات سے قبل سابق آئی پی ایس اسیم ارون کے بی جے پی کی رکنیت حاصل کرنے پر سماجوادی پارٹی کے سربراہ اکھلیش یادو نے سخت ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ جو افسران پانچ سال تک بی جے پی کے لئے کام کر رہے تھے آج انہوں نے اپنی اصلیت ظاہر کر دی۔ انہوں نے کہا کہ وہ اس ...

دارا سنگھ سماجوادی پارٹی میں شامل، یوگی کے تیسرے وزیر اکھلیش کی سائیکل پر سوار

 سوامی پرساد موریہ کے نقش قدم پر چلتے ہوئے بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کو خیر آباد کہنے والے یوگی حکومت کے سابق وزیر دارا سنگھ چوہان نے اتوار کے روز سماج وادی پارٹی (ایس پی) کا دامن تھام لیا۔

جیل سے رہا ہونے کے بعد رامپور پہنچے عبد اللہ اعظم ’ہم پر جتنا ہو سکتا تھا ظلم ہوا، میرے والد کی جان کو خطرہ‘

اتر پردیش میں انتخابات سے قبل سماجوادی پارٹی کے قدآور لیڈر اعظم خان کے بیٹے عبداللہ اعظم کو بڑی راحت ملی ہے۔ تقریباً 23 مہینے بعد جیل سے رہا ہونے کے بعد عبد اللہ اعظم نے حکومت اور انتظامیہ پر جم کر نشانہ لگایا۔

کانگریس لیڈران نے مرکزی حکومت پر لگایا پسماندہ ہندو سماج اورمظلوم طبقے کی ہتک کرنے کا الزام

ہرسال یوم جمہوریہ کی تقریب میں ریاستوں کی نمائندگی کرنےوالی نمائش  کا اہتمام ہوتاہے۔ اس مرتبہ  ریاست کیرلا کی جانب سےبھیجے گئے انقلابی شخصیت ، سماجی مصلح شری نارائن گرو مجسمہ کو نمائش میں شامل کرنے سے مرکزی حکومت نے انکار کیاہے۔ اس طرح  مرکزی حکومت نے بھارت کی تاریخی ، اہم ...

راگھو چڈھا کا الیکشن کمیشن پر الزام، کہا،الیکشن کمیشن کسی پارٹی کی مددکر رہا ہے

راگھو چڈھا نے آج پریس کانفرنس کرتے ہوئے الیکشن کمیشن پر بڑا الزام لگایا ہے۔ انہوں نے کہاہے کہ چند روز قبل ہم نے پریس کانفرنس کے ذریعے بتایا تھا کہ الیکشن کمیشن رولز میں تبدیلی کرکے نئی سیاسی جماعت کو رجسٹر کرناچاہتاہے۔ الیکشن کمیشن اس پارٹی کو انتخابی نشان دینے جا رہا ہے۔ ...

دہلی میں صبح سے دھند کی چادر، سردی کا ستم جاری

 قومی راجدھانی دہلی اور اس سے ملحقہ علاقوں کو ہفتہ کو دھند نے اپنی لپیٹ میں لے لیا اور سردی کی لہر جاری رہی۔ محکمہ موسمیات کے مطابق راجدھانی اور این سی آر میں اگلے چار دنوں تک گھنی سے درمیانی دھند چھائی رہ سکتی ہے۔

جامعہ اسلامیہ بھٹکل کے ہونہار فرزند کابڑا کارنامہ ۔ انٹرنیشنل سطح پر روشن کیا بھٹکل کانام

کہتے ہیں کہ درخت اپنے پھل سے پہچانا جاتا ہے اور تعلیمی ادارے اپنے فارغین کی لیاقت اور صلاحیت سے پہچانے جاتے ہیں، ہندوستان میں بڑے تعلیمی اداروں کا نام کچھ شخصیات نے ہی روشن کیا ہے ،  الحمد للہ بھٹکل کے دینی و عصری تعلیم گاہوں کے طلبہ و طالبات بھی بڑی حد تک اپنی مادر علمی کی نیک  ...