مرڈیشور  سمندر میں لگاتار تیسرے دن  بھی لائف گارڈس نے بچائی سیاحوں کی جان

Source: S.O. News Service | By Abu Aisha | Published on 9th October 2019, 7:46 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل:09؍اکتوبر(ایس اؤ نیوز)بارش کے بعد سیاحت کے لئے مرڈیشور پہنچنے والے سیاحوں کی تعداد میں اضافہ ہونے کے ساتھ   ساتھ تفریح کے طورپر سمندر میں تیرنے کے دوران غرق ہونے سے لائف گارڈوں سے حفاظت کئے جانے کے واقعات باربار وقوع پذیر ہورہے ہیں۔ بدھ کو  لگاتار تیسرے دن  بھی مرڈیشور سمندر میں تیرنے کے دوران لائف گارڈس کے ذریعے  2سیاحوں کو بچانے کا واقعہ پیش آیا ہے۔  

سمندر میں غرق ہونے سے بچنے والوں کی شناخت بنگلورو بسون گڈھی کے منوہر ایم بی (26) ، جگدیش کے ٹی (27) بتائی گئی ہے۔ دونوں کو  پولس  اپنی تحویل میں  لے کر سخت تاکید کرنےکے بعد چھوڑدیاگیا ہے۔ سیاحوں کو بچانے میں بیچ سپر وائزر نرسمہا موگیر کی نگرانی میں محافظ دستہ کے ششی دھرنائک اور چندرشیکھر دیواڑیگا شریک تھے۔ پچھلے تین دنوں میں کل 10سیاحوں کی جان بچا کر ساحل پہنچانے میں لائف گارڈس کامیاب ہوئے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

کورونا وائرس وباء:اڈپی ضلع میں 13مریضوں کو آئسولیشن وارڈ میں داخل کیا گیا۔ پوزیٹیو معاملات کے لئے مختص کیا گیا اسپتال

اڈپی ضلع ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر ڈاکٹر سوڈ نے بتایا ہے کہ کورونا وائرس سے متاثر ہونے کے شبہ میں یکم اپریل کے دن 13 مریضوں کو  ضلع کے مختلف اسپتالو ں میں داخل کیا گیا ہے۔

بھٹکل لاک ڈاون: مرڈیشور سینٹر میں کورنٹائن لوگوں کو مل گئی چھٹی، بنگلوراور میسورکے بعد ضلع اُترکنڑا بھی ریڈ زون میں شامل؛ سخت نگرانی رکھے جانے کےاحکامات

بھٹکل میں  ایک طرف مکمل لاک ڈاون چل رہا ہے،  لوگوں اور سواریوں کی چہل پہل مکمل طور پر بند ہے، ہر طرف سناٹا اور خاموشی چھائی ہوئی ہے.مگر کل منگل کو مزید ایک نوجوان کی رپورٹ کورونا پوزیٹیو موصول ہونے اور ضلع اُترکنڑا میں کورونا   متاثرین کی  تعداد بڑھ کر آٹھ ہونے کے بعد  اب ضلع ...

بھٹکل میں کورونا وائرس کےبڑھتے مشتبہ مریضوں کے پیش نظراندرونی محلوں اور گلیوں پر نظر رکھنے پولس نے کیا ڈرون کیمروں کا استعمال

بھٹکل میں کورونا وائرس کے مریضوں کی  تعداد میں ہورہے مسلسل  اضافہ کو دیکھتے ہوئے  شہر میں جاری لاک ڈاون میں مزید سختی برتی جارہی ہےاور اس بات کو یقینی بنایا جارہا ہے کہ عوام اپنے گھروں میں ہی بند رہیں  یہاں تک کہ شہر کے اندرونی محلوں اور گلی کوچوں میں جہاں پولس پہنچنے سے قاصر ...