بھٹکل میں زوردار بارش سے ہوئے نقصانات پر ایم ایل اے نے کہا؛ 4483 بارش سے متاثرہ مکانات میں سے اب تک 3890 گھروالوں میں معاوضہ تقسیم

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 9th August 2022, 7:22 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل 9 اگست (ایس او نیوز)   2 اگست کو بھٹکل میں  ہوئی زوردار بارش کے نتیجے  میں جو  نقصانات  ہوئے تھے، اس پر بھٹکل  ایم ایل اے  سنیل نائک نے کہا کہ مشکل کی  اس گھڑی میں پہلے دن سے ہی  وہ عوام کے ساتھ کھڑے ہیں ۔ بارش سے جملہ  4483    مکانات میں پانی گھس جانے سے گھروں کے اندر موجود کافی چیزوں کو نقصان پہنچا تھا،  جس میں  سے اب تک 3890   گھروں کو دس دس ہزار روپیہ  فی کس معاوضہ فراہم کیا گیا ہے۔ 

منگل کو پریس کانفرنس کا انعقاد کرتے ہوئے سنیل نائک نے کہا کہ   7/ اگست سے  بارش سے متاثرہ لوگوں کو  معاوضہ تقسیم کرنے کا کام شروع کیا گیا  تھا  اور آج 9/ اگست تک  تقریبا تمام متاثرہ لوگوں کو معاوضہ تقسیم کرنے کا کام  مکمل ہوچکا ہے۔

سنیل نائک کی فراہم کی گئی اطلاع کے مطابق  4483 مکانات میں پانی گھس جانے کی شکایتیں موصول ہوئی تھیں جس میں سے اب تک   3890 مکان والوں کو دس دس ہزار روپئے کے حساب سے  معاوضہ ڈائرکٹ اُن کے بینک اکاونٹ میں جمع کرائی  جاچکی ہے۔ آگے بتایا کہ  بارش سے 88 مکانات کو نقصان پہنچا تھا جس میں سے 59 مکان والوں میں معاوضہ تقسیم کیا جاچکا ہے،  مزید بتایا کہ  پچاس ہزار روپئے سے لے کر  پانچ لاکھ روپئے  تک کا معاوضہ دیا گیا ہے۔ مُٹھلی میں پہاڑی چٹان کا حصہ  کھسکنے سے جن چار لوگوں  کی موت ہوئی تھی، اُن کے اہل خانہ کو   پانچ پانچ لاکھ کے حساب سے جملہ بیس لاکھ روپئے معاوضہ دیا جاچکا ہے۔

سنیل نائک کے مطابق  بھٹکل تعلقہ میں جملہ 365 دکانوں کے اندر پانی جانے اور دکانوں کا مال خراب ہونے کی شکایتیں موصول ہوئی تھیں، اِن دکان والوں میں  معاوضہ تقسیم کرنے کا کام باقی ہے، اسی طرح 36 کشتیوں اور 107 مچھلیاں پکڑنے کی جال کو نقصان پہنچنے کی شکایتیں ملی تھیں، ان  ماہی گیروں کو بھی معاوضہ تقسیم کرنے کا کام باقی ہے۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سنیل نائک نے بتایا کہ  2 اگست کو بھٹکل میں جو بارش ہوئی، ایسی خطرناک بارش انہوں نے اپنی پوری زندگی میں نہیں دیکھی تھی، جیسے ہی مجھے پتہ چلا کہ مُٹھلی میں پہاڑی چٹان کا  کھسک کر گھر پر گرا ہے اور چار لوگ  اُس میں دب گئے ہیں، تو فوری طور پر این ڈی آر ایف ٹیم کو بھٹکل  بلایا گیا تھا، لیکن چونکہ  کمٹہ  اور  شرالی ہائی وے پر بارش کا پانی جمع ہونے سے سڑک بند ہوگئی تھی، این ڈی آر ایف ٹیم کو بھٹکل  پہنچنے میں کافی دشواری پیش آئی اور وہ ٹیم  کافی تاخیر سے بھٹکل پہنچی، لیکن میں اپنے بی جے پی کارکنوں کو ساتھ لے کر فوری طور پر عوام کی مدد کے لئے نکل پڑا تھا۔ پانی بھرجانے کی وجہ سے  مُٹھلی جانے کا تمام راستہ بند تھا، لیکن  ہم لوگ  ریلوے اسٹیشن سے بریج  پار کرکے پیدل ہی متعلقہ مقام پر پہنچ گئے تھے اور قریب میں واقع ایک ہیتاچی مشین کے ذریعے  مکان پر گری ہوئی چٹان اور مٹی کو ہٹانے کا کام شروع کردیا تھا۔

سنیل نائک نے بتایا کہ   بھٹکل میں بارش سے ہوئی تباہ کاریوں کی اطلاع ملتے ہی  اُسی دن  وزیر شیورام ہیبار  بھٹکل پہنچ گئے تھے جبکہ اگلے ہی روز وزیراعلیٰ  بومائی سمیت دیگر وزراء  آر۔ اشوک،  کوٹا سری نواس پجاری اور شیورام ہیبار بھی بھٹکل پہنچ گئے  اور متاثرہ علاقوں کا دورہ کرتے ہوئے خود نقصانات کا مشاہدہ کرکے  بھٹکل کے لئےخصوصی فنڈ فراہم کرنے کا اعلان کیا تھا۔ سنیل نائک کے مطابق زوردار بارش کے دوران وہ خود ہی اپنے کارکنوں کو ساتھ لے کر  رات دو بجے  ہی   متاثرین کی مدد کے لئے گھر سے نکل  پڑے تھے۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ لوگوں کو   متاثرہ علاقوں سے بچاکر محفوظ مقامات پر منتقل کرنے کے لئے تعلقہ انتظامیہ بھی   صبح کا اُجالا پھیلنے سے پہلے   ہی متحرک ہوگئے تھے اور مختلف ٹیمیں ترتیب دے کر متاثرہ علاقوں میں پہنچنا شروع کیا تھا۔ سنیل نائک نے  پریس کانفرنس میں بارش سے متاثرہ لوگوں کی مددکرنے اور لوگوں کو بچاکر محفوظ مقامات پر منتقل کرنے والے تمام افسران اور سماجی کارکنوں کا شکریہ ادا کیا۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل: ایس پی کے تبادلے کی افواہوں کو ڈسٹرکٹ انچارج منسڑ نے دی مزید ہوا، کہا؛ افسران کے تبادلے کوئی نئی بات نہیں!

ایماندار افسر کے طورپر مشہور اترکنڑا ضلع ایس پی ڈاکٹر سمن پنیکر کے تبادلے کی افواہوں کو ہوا دیتےہوئے ضلع نگراں کار وزیر پجاری نے کہاکہ افسران کے تبادلے کوئی نئی بات تو نہیں ہے۔

بھٹکل: معاوضہ تقسیم میں تفریق پر رکن اسمبلی کا سخت اعتراض : وزیر شری نواس پجاری نے افسران کو کی فوری کارروائی کی تاکید

گذشتہ ماہ 2اگست کو برسی موسلا دھاربارش سےنقصان اٹھانے والےمتاثرین میں امداد تقسیم کےدوران تفریق کی گئی ہے اور غریبوں کو امداد فراہم کرنےمیں افسران پس و پیش کئے جانے پر رکن اسمبلی سنیل نائک نے سخت اعتراض جتایا ۔

ہلیال:  آوارہ کتوں کو پکڑنے کا معاملہ - چیف آفیسر کے خلاف کیس درج 

آوارہ کتوں کو پکڑ کر جنگل میں چھوڑنا ہلیال ٹی ایم سی کے چیف آفیسر پرشورام شیندے کو مہنگا پڑا کیوںکہ اس کارروائی کو ظالمانہ انداز میں انجام دئے جانے کا الزام لگاَتے ہوئے چیف آفیسر کے خلاف پولیس میں معاملہ درج کیا گیا ہے ۔