منگلورو سمارٹ سٹی میں قصائی خانے کی تعمیر۔ بی جے پی نے لگایا یوٹی قادر پر اختیارات کے غلط استعمال کا الزام۔قادر نے کیا پلٹ وار، کہا؛ طاقت ہو تو منصوبہ رکوا کر دکھائو

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 9th October 2018, 11:49 PM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

منگلورو 9؍اکتوبر (ایس او نیوز)منگلورو سمارٹ سٹی میں قصائی خانے کی تعمیر کو لے کر جب  بی جے پی نے  یوٹی قادر پر اختیارات کے غلط استعمال کا الزام عائد کیا تو یوٹی قادر نے  پلٹ وار کرتے ہوئے کہا کہ اگر آپ میں  طاقت ہو تو منصوبہ رکوا کر دکھائو۔

ذرائع سے ملی اطلاع کے مطابق بی جے پی ایم ایل اے سنجیو ماٹندور نے ایک پریس کانفرنس کے دوران ضلع انچارج وزیر یو ٹی قادر پر الزام لگایا تھا کہ  انہوں نے اپنے اختیارات کا غلط استعمال کرتے ہوئے سمارٹ سٹی پروگرام کے تحت کودرولی میں 15کروڑ روپے کی لاگت سے قصائی خانہ تعمیر کرنے کا منصوبہ پیش کیا ہے۔ اور ا س طرح ضلع انچارج وزیر اقلیتی طبقے کو خوش کرنے اور رقم بٹورنے کی پالیسی اپنا رہے ہیں۔

رکن اسمبلی سنجیو نے یوٹی قادر پرالزام لگاتے ہوئے کہا تھا کہ:’’ سمارٹ سٹی کے نام پر اس منصوبے کی سفارش کرنے سے پہلے اراکین پارلیمان اور اراکین اسمبلی اور دیگر متعلقہ افرادکو اعتماد میں نہیں لیا گیا۔اور یو ٹی قادر نے سماج کے ایک طبقے کی خوشامد کرنے کے لئے اپنے اختیارات کا بے جا استعمال کیاہے۔‘‘

سمارٹ سٹی بورڈ کے ڈائریکٹروں میں سے ایک ڈائریکٹر پریمانند شیٹی نے کہا تھا کہ:’’ضلع انچارج منسٹر یو ٹی قادر نے براہ راست ایم سی سی کے کمشنر کواپنی تجاویز والا مراسلہ دیا ہے اوروہاں سے سمارٹ سٹی بورڈ کے چیرمین پونوراجو کو بھیجا گیا ہے۔ جبکہ اصولی طریقہ کار کے مطابق اسے میئر کے پاس دیا جانا چاہیے تھا۔ اور کارپوریشن کاونسل میں اس منصوبے کو منظوری دی جانی چاہیے تھی۔ انہوں نے سوال کیا تھا کہ کارپوریشن کاونسل کی منظوری کے بغیر ایسے منصوبوں کو کس طرح سمارٹ سٹی پروجیکٹ میں شامل کیا جاسکتا ہے۔‘‘

لیکن جب میڈیا والوں نے قصائی خانے سے متعلق سوالات پوچھنے شروع کیے تو رکن اسمبلی سنجیوماٹندور نے پریس کانفرنس چھوڑ کرباہر کی طرف نکلنا شروع کیا اس پر میڈیا والوں نے سوال کیا کہ جب پریس کانفرنس انہوں نے بلائی ہے تو پھرسوالات کا جواب دئے بغیروہ درمیان میں کیسے اٹھ کر جاسکتے ہیں۔ اس کا کوئی بھی جواب دینے سے انکار کرتے ہوئے پریمانند شیٹی کو ہی پریس والوں کے جوابات دینے کی ذمہ داری سونپ کر وہ باہر نکل گئے۔

ادھر دوسری طرف ضلع انچارج وزیر یو ٹی قاد ر نے کل ہی بی جے پی کے اعتراض پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا تھا کہ انہوں نے سمارٹ سٹی کے مختلف منصوبوں کے لئے مشورے اورتجاویز دی ہیں۔ ایک سال قبل خود بی جے پی والوں نے شہر میں موجود قصائی خانے میں بنیادی سہولتوں کی کمی اور صفائی ستھرائی نہ ہونے کی شکایات کی تھیں۔ سمارٹ سٹی میں ہر ایک شعبے کو صاف ستھرا رکھنا ضروری ہے۔صرف ہمارے گھروں کے پاس پڑا ہوا کچرا ہٹانے سے صاف ستھرا شہر وجود میں نہیں آتا۔گوشت جو کھایا جارہا ہے وہ بھی حفظان صحت کے اصولوں کے مطابق ہونا چاہیے۔بورڈ کمیٹی کی میٹنگ میں بی جے پی کے اراکین بھی موجود تھے۔

یوٹی قادر نے واضح وارننگ دینے جیسے انداز میں  کہا کہ اب بھی چاہیں تو ضلع کے رکن پارلیمان اس کے خلاف مرکزی حکومت کو مراسلہ بھیج سکتے ہیں، مگر  ہر معاملے میں سیاست کرنا اچھی بات نہیں ہے۔ یوٹی قادر نے کہا کہ عوامی نمائندوں کو جذبات بھڑکانے کا کام نہیں کرنا چاہیے۔ میں نے جو بھی تجاویز دی ہیں وہ دور اندیشی کے ساتھ دی ہیں۔

یوٹی قادر نے کہا کہ  خواہ مخواہ الزام لگانے والوں میں اگر دم ہے تو وہ مرکزی حکومت کو مراسلہ بھیجیں اوراگر طاقت ہے تو پھر اس منصوبے پر روک لگاکر دکھائیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ چاہے تو  سمارٹ سٹی میں گؤ شالہ کو ترقی دینے کے لئے اپیل کریں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایک طرف جانور کاٹے جارہے ہیں۔ گوشت بیرونی ممالک کو ایکسپورٹ کیا جارہا ہے ، انہوں نے پوچھا کہ  ایسے میں  ہمارے یہاں اس کا صحیح نظام کیوں نہیں کیاجانا چاہیے۔
 

ایک نظر اس پر بھی

ایران میں گرفتار اُترکنڑا کے ماہی گیروں کی فوری رہائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کرناٹکا این آر آئی فورم کا دبئی میں ہندوستانی سفارت کار سے ملاقات

  ریاست کرناٹک کے ضلع اُترکنڑا کے 18 ماہی گیروں کی ایران میں گرفتاری کے بعد اُن کی رہائی کی کوششیں تیز ہوگئی ہیں۔ اس تعلق سے تازہ اطلاع یہ ہے کہ  دبئی میں موجود ماہی گیروں کے رشتہ داروں نے  کرناٹکا این آر فورم کے  اہم ذمہ دار اور قائد قوم جناب ایس ایم سید خلیل الرحمن صاحب سے ...

ریاستی وزارت سے مہیش کا استعفیٰ منظور

پانچ ریاستوں کے اسمبلی انتخابات میں کانگریس اور بی ایس پی کے درمیان مفاہمت کی کوشش ناکام ہوجانے کے نتیجے میں ریاستی کابینہ سے استعفیٰ دینے والے بی ایس پی کے وزیر این مہیش کو استعفیٰ واپس لینے کے لئے منانے میں جے ڈی ایس قیادت کی کوشش ناکام ہوجانے کے بعد آج وزیراعلیٰ نے مہیش کا ...

ای اسٹامپ پیپر اب آن لائن دستیاب ہوگا

کسی طرح کے دستاویزات تیار کرنے کے لئے درکار ای اسٹامپ کاغذ کی دستیابی اب تک ایک بہت بڑا مسئلہ ہوا کرتی تھی، 100 روپے کے اسٹامپ پیپر کے لئے بھی بھاری رقم ادا کرکے اسے حاصل کرنا پڑتا تھا،

دیوے گوڈا سدرامیا اور ڈی کے شیوکمار ایک ساتھ انتخابی مہم چلائیں گے

سابق وزیر اعظم ایچ ڈی دیوے گوڈا نے طے کیا ہے کہ تین لوک سبھا اور دو اسمبلی حلقوں کے ضمنی انتخابات کے مرحلے میں وہ اپنے دو کٹر سیاسی حریفوں سابق وزیراعلیٰ سدرامیا اور ریاستی وزیر آبی وسائل ڈی کے شیوکمار کے ہمراہ ایک ساتھ انتخابی مہم میں حصہ لیں گے۔