بھٹکل کی دو غریب لڑکیوں کی عزت سوشیل میڈیا پر نیلام کرنے کی کوشش؛ برہنہ فوٹو کے ساتھ جوڑ کر سیلفی فوٹو کو کیا گیا وائرل؛ ایک گرفتار؛ ایس پی نے دیا سخت کاروائی کا انتباہ

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 12th March 2018, 2:13 AM | ساحلی خبریں | ریاستی خبریں |

بھٹکل 11/مارچ (ایس او نیوز) کالج کے ورانڈا میں کھڑی ہوکر دو غیر مسلم غریب لڑکیوں کوسیلفی  فوٹو لینا اتنا مہنگا پڑ گیا کہ ان کی عزت کچھ شرپسندعناصروں نے سوشیل میڈیا پر نیلام کردیا،  سیلفی فوٹو میں دو لڑکیوں کے  پیچھے ایک مسلم طالب العلم کھڑا ہوا نظر آرہا ہے، جس پر شرپسندوں نے  سوشیل میڈیا پر اُس فوٹو کے ساتھ کسی ننگی عورت کا بھی فوٹو جوڑ دیا اور سوشیل میڈیا پر اس انداز سے پیش کیا کہ مسلم لڑکا اُن دو لڑکیوں کے ساتھ گوا میں جاکر رنگ رلیاں منارہا ہو ۔ سوشیل میڈیا میں ٖغلط فوٹو کے ساتھ سیلفی فوٹو کو جوڑ کر اتنی تیزی کے ساتھ وائرل کیا گیا کہ اب نہ صرف طالبات، بلکہ اُن کے گھروالوں کی عزت   بھی مٹی میں ملادی گئی ہے۔ اس تعلق سے مرڈیشور پولس تھانہ میں نامعلوم شرپسندوں کے خلاف معاملہ درج کرنے کے بعد ایک شخص کو گرفتار کرلیا گیا ہے ، جبکہ  ضلع کے ایس پی ونائک پاٹل نے اس تعلق سے سخت قدم اُٹھانے اور وائرل کرنے والوں کو نہ بخشنے کا انتباہ دیا ہے۔

ذرائع سے ملی اطلاع کے مطابق  مرڈیشور کالج کی دو غریب طالبات جس میں ایک کا تعلق گونڈا سماج اور دوسری کا تعلق موگیر سماج سے ہے،  کالج کے ورانڈا میں کھڑی ہوکر اپنے موبائل سے سیلفی لیتی ہیں، اس موقع پر ان کے پیچھے ایک مسلم طالب العلم  کھڑا ہے، سیلفی میں دو لڑکیوں کے ساتھ  اُس مسلم طالب العلم کی بھی فوٹو قید ہوجاتی ہے۔ مگر کسی ذریعے سے یہ فوٹو غلط لوگوں کے ہاتھ لگ جاتی ہے  اور وہ  اس فوٹو کو لو جہاد کا نام دیتے ہوئے ایک دوسری برہنہ عورت کے ساتھ   جوڑ دیتا ہے، ساتھ میں ایک جھوٹا مسیج لکھ دیا جاتا ہے  کہ  لوجہاد کی شکار دو طالبات نے مسلم لڑکے کے ساتھ  گوا میں جاکر رنگ رلیاں منائی ہیں۔

ان کا سیلفی فوٹوکسی برہنہ خاتون کے ساتھ جوڑ کر  سوشیل میڈیا میں اس قدر عام کیا گیاہے کہ تقریبا ہر گروپ میں پوسٹ ہوتے ہوئے پورے شہر میں وائرل ہوگیا ہے جس کی وجہ سے نہ صرف  دونوں لڑکیوں کا گھر سے باہر نکلنا دوبھر ہوگیا ہے، بلکہ ان کے گھروالے  بھی غلط وائرل فوٹوز سے سخت پریشان ہیں۔ 

مسیج میں ایک  باوقار کالج کا نام بھی بدنام کرنے کی کوشش کی گئی ہے کہ متعلقہ کالج میں مسلم لڑکوں کا  غیر مسلم لڑکیوں کے ساتھ لو جہاد ہوتا ہے۔

سمجھا جارہا ہے کہ کچھ شرپسندلوگ مسلم لڑکے کے ساتھ ان کی فوٹو کو وائرل کرکے  شہر کے حالات کو بگاڑنا چاہتے ہیں اور غلط مسیجس کے ساتھ اس فوٹو کو تیزی کے ساتھ وائرل کرکے  دونوں لڑکیوں کے ساتھ ساتھ مسلم لڑکے کی عزت کے ساتھ بھی کھلواڑ کیا گیا ہے۔ فوٹو کے ساتھ اسے لو جہاد کا نام بھی دیا گیا ہے۔ گھروالے بھی اب سخت پریشان ہیں کہ  اس طرح کی غلط اور بے بنیاد فوٹو کو وائرل کرکے اُنہیں بدنام کرنے کی کوشش کی گئی ہے اور پورے سماج میں ان کی عزت نیلام کردی گئی ہے۔ حالت یہ ہوگئی ہے کہ شرم کے مارے دونوں لڑکیوں کا گھروں سے باہر نکلنا دشوار ہوگیا ہے، ساتھ ساتھ  ان کے گھروالے بھی اس واقعہ سے سخت پریشان ہیں کہ کریں تو کیاکریں ۔

اس تعلق سے مرڈیشور پولس تھانہ میں معاملہ درج کیا گیا ہے اورگھروالوں سمیت حقیقت جاننے والے عوام نے پولس پر زور دیا ہے کہ وہ انہیں بدنام کرنے اور غلط فوٹوکے ساتھ ان کے فوٹوز کو جوڑنے والوں کا سراغ لگائیں اور جو لوگ بھی متعلقہ فوٹوز کو وائرل کررہے ہیں، اُن کے خلاف  بھی سخت کاروائی کرے۔ 

اس تعلق سے تازہ جانکاری یہ ہے کہ پولس کی ایک خصوصی ٹیم نے ایک شخص کو گرفتار کرلیا ہے جس کی شناخت یوگیش کی حیثیت سے کی گئی ہے، جبکہ پولس  تیرو اور ہیمنت سمیت  کئی دیگر نوجوانوں کو تلاش کرنے میں جٹی ہوئی ہے۔

واقعے کی جانکاری ملتے ہی بھٹکل کے انچارج ڈی وائی ایس پی جی ٹی نائک نے مرڈیشو رپولس تھانہ پہنچ کر ضروری معلومات حاصل کی ہے اور گھروالوں کو یقین دلایا ہے کہ وہ اس طرح کی  نیچ حرکت کرنے والوں کو ہرگز نہیں بخشیں گے۔

اس تعلق سے ساحل آن لائن سے فون پر گفتگو کرتے ہوئے ضلع کے ایس پی ونائک پاٹل نے بتایا کہ   بےقصور لڑکیوں کی فوٹو کو ایک برہنہ فوٹو کے ساتھ جوڑ کر جس طرح سوشیل میڈیا پر وائرل کیا گیا ہے، اُس پر پولس سخت قانونی کاروائی کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ بھٹکل پولس کو اس تعلق سے تیزی کے ساتھ چھان بین کرنے کی ہدایت دی گئی ہے ، مزید بتایا کہ اس طرح کی حرکت کرنے والوں کو بخشنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ انہوں نے عوام الناس سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا  کہ وہ  ایسی فوٹوز کو وہاٹس ایپ پر موصول ہونے کی صورت میں دوسرے گروپوں یا دوسرے لوگوں کو ہرگز فاروڈ نہ کریں۔ انہوں نے یقین دلایا کہ جن جن لوگوں نے متعلقہ فوٹوز اور وڈیوز کو دوسرے  گروپوں میں فاروڈ کیا ہے، اُن کی گرفتاری یقینی ہے۔

 

ایک نظر اس پر بھی

گیروسوپا ڈیم سے 61ہزارکیوسیکس پانی چھوڑنے پر شراوتی ندی کے بائیں کنارے پر سیلاب کے بعد حالات میں سدھار 

مسلسل برسات کی وجہ سے شراوتی ندی پر واقع گیروسوپاٹیل ریس ڈیم سے کل جمعہ کے دن صبح کے وقت 61ہزار کیوسیکس پانی چھوڑا گیا جس کی وجہ سے شراوتی ندی میں پانی کی سطح میں تین فٹ کا اضافہ ہواتھا اور اس کے دائیں کنارے پر 35کیلومیٹر تک کے علاقے میں سیلاب آگیا تھا۔

بھٹکل سوپر اسٹار اسوسی ایشن کے زیر اہتمام  ہندوستان کی جنگ آزادی میں مسلمانوں کا رول پراہم جلسہ کا انعقاد

سوپر اسٹار اسوسی ایشن بندرروڈ کے زیر اہتمام یوم ِ آزادی کی مناسبت سے’’ ہندوستان کی آزادی میں مسلمانوں کا رول اور نوجوانوں کی ذمہ داریاں ‘‘ کے عنوان پر الافراح شادی بال میں 17اگست 2018بروز جمعہ کی رات  بعد نمازِ عشاء ایک خوب صورت  اجلاس منعقد ہوا۔  

بھٹکل: پرورگا ہائرپرائمری اسکول کے اساتذہ کا تبادلہ : دیہی عوام  کا تبادلے کے خلاف احتجاج

یلووڑی کوؤور گرام پنچایت حدود کی پرورگا ہائر پرائمری اسکول کے اساتذہ کو زائد اسامی ہونے کے نتیجے میں تبادلہ  کیاگیا ہے۔ مقامی عوام نے اساتذہ کے تبادلے سے بچوں کی تعلیم متاثر ہونے کا الزام عائد کرتے ہوئے والدین اور سرپرستوں کےساتھ سنیچر کو  اسکول کے سامنے احتجاج کیا۔

بھٹکل میونسپالٹی افسران کی دکانوں پر چھاپہ ماری :  پلاسٹک اشیاء ضبط

بھٹکل تعلقہ بلدیہ حدود کے مین روڈ کے دونوں کناروں پر واقع مختلف دکانوں  پر چھاپہ ماری کرتے ہوئے بلدیہ افسران نے دکانوں میں غیر قانونی طورپر استعما ل کئے جارہے قریب 50کے جی وزنی پلاسٹک تھیلیوں کو ضبط کر لیا۔

بارش کے متاثرین کی بھرپور مدد کرنے شیوکمار کا مطالبہ

ریاستی وزیر برائے آبی وسائل ومیڈیکل ایجوکیشن ڈی کے شیوکمار نے کہا ہے کہ ریاست کے کورگ ، ملناڈ اور پڑوسی ریاست کیرلا میں مسلسل بارش کے سبب سیلاب کی جو صورتحال پیدا ہوئی ہے اس سے متاثرہ خاندانوں کی مدد کے لئے ریاستی عوام کو فراخدلی سے قدم بڑھانا چاہئے۔

بارش کے متاثرین کے لئے بی بی ایم پی کی فراخدلانہ امداد،بنگلورو کے سبھی کارپوریٹر راحت کاری کے لئے عنقریب پدیاترا کریں گے

کیرلا اور کورگ میں بارش کی تباہیوں سے متاثر لوگوں کی مدد کے لئے پہل کرتے ہوئے برہت بنگلور مہانگر پالیکے نے کیرلا کے لئے ایک کروڑ روپے اور کورگ کے لئے ایک کروڑ روپیوں کی امداد