کاروار میڈیکل کالج عوام کی خدمت کے لئے تیار

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 5th December 2017, 7:38 PM | ساحلی خبریں |

کاروار5؍دسمبر (ایس او نیوز)وزیراعلیٰ کرناٹک سدارامیا کے ہاتھوں 6دسمبر کو ہونے والے افتتاح کے ساتھ کاروار میڈیکل کالج عوامی خدمات اورترقی کی راہ پر چل پڑے گا۔

224کروڑ روپے لاگت کے منصوبے سے تیار ہونے والی میڈیکل کالج کی شاندار7منزلہ عمارت عوام کی دلکشی کا باعث ہوگئی ہے۔کالج میں پڑھانے کے لئے100سے زیادہ ٹیچنگ اسٹاف کا تقرر کیا گیا ہے۔اسپتال کے اندر میڈیسن،سرجری، گائناکولوجی، پیڈیاٹرکس، ای این ٹی،ریڈیالوجی ، سائکیاٹری اور بلڈ بینک ولیباریٹری جیسے تمام اہم شعبہ جات میں ماہرین اورضروری ساز وسامان فراہم کردیاگیا ہے۔

میڈیکل کالج میں ایم بی بی ایس کورس کے لئے 150طلباء کے داخلے ہوئے ہیں۔پیرا میڈیکل میں 140اور جنرل نرسنگ کورس میں 30طلباء کا داخلہ ہوا ہے۔امراض کی تشخیص کے لئے ڈیجیٹل ایکسرے،لیپرواسکوپ،سی آرم، ETOوغیرہ کی جدید سہولتیں مہیا کی گئی ہیں۔ اس کے علاوہ 400بیڈز والے نئے اسپتال کی تعمیر،کنیسر کے علاج کا مرکز،ٹراما کیئر سنٹر،سی ٹی اسکیان،جلے ہوئے مریضوں کے لئے خصوصی وارڈ،ذہنی معذورین کے لئے بازآبادکاری مرکزاور سوپر اسپیشالٹی خدمات کی فراہمی مستقبل کے منصوبوں میں شامل ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی کیخلاف کانگریس کا جاری کردہ ٹیپ جعلی، کرناٹک کانگریس رکن اسمبلی کابیان، کانگریس پریشان 

بی جے پی کے خلاف کانگریس کے ایک جاری کردہ ٹیپ سے کانگریس کی ٹکٹ پر جیت درج کرنے والے یلاپور کے رکن اسمبلی شیورام ہیبار نے پارٹی کی جانب سے جاری کردہ ٹیپ کو جعلی قرار دیاہے۔ اور اس بات کو غلط قرار دیا ہے کہ بی جے پی کی طرف سے انہیں رقم کی پیشکش کی گئی تھی اور وزارتی عہدہ دینے کا بھی ...

فتح کے جشن میں پاکستان نواز نعرے بازی کا جھوٹا ویڈیو۔ مینگلور پولس اسٹیشن میں کانگریس کی طرف سے شکایت درج

بی جے پی کے وزیراعلیٰ ایڈی یورپا کے استعفیٰ دینے اور کانگریس جے ڈی ایس محاذ کے لئے حکومت سازی کی راہ ہموار ہونے کی خوشی میں منگلور و کے کانگریس دفتر میں جشن فتح منایاگیاتھا۔ لیکن اس تعلق سے ایک ویڈیو کلپ سوشیل میڈیا پر عام ہواتھا جس میں جشن کے دوران پاکستان نواز نعرے بازی ...

بھٹکل میں گائیوں سے بھری دو لاریوں پر حملے کے الزام میں گیارہ افراد گرفتار؛ کیاجانوروں کو بی جے پی لیڈر کے ڈیری فارم لےجایا جارہا تھا ؟

  تعلقہ کے مرڈیشور نیشنل ہائی وے پر کل رات ہوئی ہندو شدت پسند تنظیموں کے کارکنوں کی غنڈہ گردی کے واقعے کے بعد پولس متحرک ہوکر اب تک گیارہ لوگوں کو گرفتار کرنے میں کامیاب ہوگئی ہے، جبکہ دیگر حملہ آوروں کی تلاش جاری ہے۔