’حریری کے استعفے کے بعد لبنان کی پوزیشن پہلے جیسی نہیں رہی‘کسی ملک کو سعودیہ کے خلاف استعمال نہیں کرنے دیں گے: السبھان

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 7th November 2017, 11:39 PM | خلیجی خبریں |

ریاض، 7نومبر(ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا)سعودی عرب کے وزیر برائے خلیجی امور ثامر السبھان نے کہا ہے کہ سعد حریری کے وزارت عظمیٰ سے استعفے کے بعد لبنان کی حیثیت پہلے جیسی نہیں رہی۔ان کا کہنا ہے کہ کسی ملک کو ہمارے ملکوں کے خلاف دہشت گردی کی لانچنگ کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ لبنان کی قیادت کو فیصلہ کرنا ہوگا کہ انہیں امن کے ساتھ رہنا ہے یا دیشت گردوں کی حمایت کرنا ہے۔مائیکرو بلاگنگ ویب سائیٹ ’ٹویٹر‘ پر پوسٹ کی گئی متعدد ٹویٹس میں ثامر السبھان نے کہا کہ مستعفی لبنانی وزیراعظم سعد حریری کے ذاتی محافظوں کے پاس حریری کے قتل کی سازش کی ٹھوس معلومات ہیں۔قبل ازیں لبنان نے ایک انٹرویو میں ثامر السبھان نے کہا کہ مستعفی وزیراعظم کی جان کو خطرات لاحق تھے۔ سعودی عرب سعد حریری کی سلامتی اور حفاظت کا متمنی ہے۔خیال رہے کہ لبنانی وزیراعظم سعد حریری نے گذشتہ ہفتے کے روز سعودی عرب میں استعفیٰ دے دیا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ خطے کی طرف ایران کے بڑھنے والے ہاتھ کاٹ دیئے جائیں گے۔

ایک نظر اس پر بھی

سعودیہ میں مقیم غیر قانونی تارکین وطن میں سب سے زیادہ تعداد پاکستانیوں کی نکلی

سعودی عرب کی وزارت داخلہ کے ترجمان میجر جنرل منصور الترکی نے واضح کیا ہے کہ اقامہ و محنت قوانین اور سرحدی سلامتی کے ضوابط کی خلاف ورزی کرنے والے 140 مما لک کے 758570 غیر ملکیوں نے شاہی مہلت سے فائدہ اٹھایا۔

چین علاقائی بے یقینی کے تناظر میں سعودی عرب کے ساتھ ہے:صدر ڑی جن پنگ

چین، سعودی عرب میں بڑے پیمانے پر ترقی کے عمل اور قومی سالمیت کی کوششوں کی مکمل حمایت کرتا ہے۔ علاقائی سطح پر سعودی عرب، ایران، لبنان اور یمن میں کشیدگی کے تناظر میں یہ یقین دہانی چینی صدر ڑی جن پنگ نے سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کو گذشتہ روز ٹیلی فون پر کرائی۔