شاہین باغ نے مودی-شاہ کو گھٹنے ٹیکنے پر مجبور کر دیا۔۔۔۔ از: ظفر آغا

Source: S.O. News Service | Published on 6th February 2020, 12:38 AM | اسپیشل رپورٹس |

شاہین باغ کو جتنی مبارکباد دی جائے اتنی کم ہوگی۔ کیونکہ شاہین باغ تحریک اپنی جدوجہد میں آدھی کامیاب ہو گئی۔ کل یعنی 4 فروری کو لوک سبھا میں ایک سوال کے جواب مین مرکزی وزیر داخلہ (جونیر) نتیانند رائے نے این آر سی اور این پی آر کے تعلق سے دو انتہائی اہم جواب دئیے جن کو زیادہ تر نیشنل میڈیا نے سرسری طور پر ہی رپورٹ کیا۔ این آر سی کے تعلق سے جواب دیتے ہوئے وزیر موصوف نے لوک سبھا میں فرمایا ’’حکومت نے نیشنل رجسٹر آف انڈین سٹیزن (این آر سی) بنانے کا قومی سطح پر ابھی کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے۔‘‘ اسی کے ساتھ ساتھ وزیر نے ایک دوسرے سوال کے جواب میں فرمایا ’’نیشنل پاپولیشن رجسٹر (این پی آر) کی تیاری میں کسی قسم کا کوئی دستاویز دکھانے کی ضرورت نہیں ہوگی۔‘‘

لوک سبھا میں وزارت داخلہ کی جانب سے وزیر موصوف کے دونوں بیان اس بات کے شاہد ہیں کہ مودی حکومت کم از کم فی الحال این آر سی اور این پی آر کے معاملے پر جھک گئی اور وزیر داخلہ امت شاہ جیسے گھمنڈی سیاست دان کو اس معاملے میں گھٹنے ٹیکنے پڑ گئے۔ یہ کوئی معمولی بات نہیں ہے۔ آخر کار نریندر مودی اور امت شاہ جیسے کٹر ہندوتواوادی لیڈران کو این آر سی اور این پی آر پر جھکنا پڑ گیا۔ اور اس کامیابی کا سہرا پوری طرح شاہین باغ کو جاتا ہے۔ کیونکہ شاہین باغ سے شروع ہونے والی سی اے اے اور این پی آر و این آر سی مخالف تحریک نے نہ صرف سارے ملک بلکہ ساری دنیا میں مودی حکومت کے خلاف ایسی زبردست فضا بنا دی کہ حکومت گھبرا گئی اور اس کو آخر عوامی دباؤ میں 4 فروری کو لوک سبھا میں وہ بیان دینا پڑ گیا جس کا ذکر اوپر کیا گیا ہے۔

حالانکہ اس بیان سے یہ واضح ہے کہ ابھی حکومت اپنے موقف سے ہٹی نہیں ہے۔ حکومت ابھی این آر سی اور این پی آر پر صرف دو قدم پیچھے ہی ہٹی ہے۔ مودی حکومت نے ابھی تک یہ یقین نہیں دلایا ہے کہ این آر سی اب ہوگا ہی نہیں۔ این پی آر کے تعلق سے ابھی صرف یہ واضح کیا ہے کہ کسی کو دستاویز دیکھانے کی ضرورت نہیں ہوگی۔ پھر اس سے بھی اہم تیسری بات یہ ہے کہ شہریت ترمیمی قانون 2019 میں کسی قسم کی پھیر بدل کرنے کے سلسلے میں مودی حکومت کی جانب سے کسی قسم کا کوئی اشارہ نہیں ہے۔ شاہین باغ تحریک کی سب سے پہلی مانگ ہی یہی تھی کہ سی اے اے یعنی نیا شہریت قانون واپس لیا جائے۔ کیونکہ یہ قانون مذہب کو شہریت سے جوڑ کر ملک کے آئین کی خلاف ورزی کرتا ہے اور اس طرح آئین کے بنیادی ڈھانچے یعنی سیکولرزم کو کمزور کرتا ہے۔ اور یہ ایک بہت اہم مسئلہ ہے جس کے لیے شاہین باغ اور اسی طرز پر چلنے والی ملک بھر اور بیرون ملک تحریکیں سرگرم ہیں۔

لیکن پھر بھی 4 فروری کو حکومت کی جانب سے این آر سی و این پی آر کے سلسلے میں وزارت داخلہ کی جانب سے جو بیان آیا ہے، وہ اس بات کا ثبوت ہے کہ شاہین باغ نے مودی حکومت کے چھکے چھڑا دئیے۔ حکومت بلاشبہ گھبرا گئی ہے اور اس گھبراہٹ میں کم از کم فی الحال اس بلا کو کسی طرح ٹالنا چاہ رہی ہے۔ اور یہ شاہین باغ کی بہت بڑی کامیابی ہے۔ یہ محض شاہین باغ میں پچھلے پچاس دنوں سے زیادہ اکٹھا ہونے والی عورتوں کے عزم و استقلال کا نتیجہ ہے کہ مودی جیسی سخت دل حکومت بھی گھبرا گئی۔

اس کے یہ معنی قطعاً نہیں ہے کہ حکومت نے این آر سی اور این پی آر کوپوری طور پر ختم کر دیا ہے۔ حکومت ابھی صرف پیچھے ہٹی ہے، یعنی اس سلسلہ میں بی جے پی کی وہی حکمت عملی ہے جو آر ایس ایس اور بی جے پی نے رام مندر میں اختیار کی تھی۔ جیسے سنہ 1992 میں بابری مسجد گرا کر رام مندر تعمیر کے لیے زمین ہموار کر لی گئی تھی۔ لیکن رام مندر تعمیر کا کام عدالتوں میں چل رہے مقدموں اور دوسری سیاسی وجوہات کے سبب ٹال دیا گیا تھا۔ ویسے ہی نیاشہریت قانون بنا کر حکومت نے ہندو راشٹر کی بنیاد تو رکھ دی ہے، لیکن این آر سی اور این پی آر کے ذریعہ حکومت کو ہندو راشٹر کا جو ڈھانچہ بنا ہے اس کام کو عوامی دباؤ میں ابھی حکومت ملتوی کرنے کو تیار ہے۔

اس کے یہ معنی ہیں کہ حکومت دباؤ میں ہے۔ شاہین باغ تحریک نے حکومت کو کم از کم فی الحال این آر سی اور این پی آر پر گھٹنے ٹیکنے کو مجبور کر دیا ہے۔ حکومت کی اس مجبوری کے لیے صرف اور صرف شاہین باغ تحریک اور اس کی روح رواں عورتیں قابل تعریف ہیں جنھوں نے نریندر مودی اور امت شاہ جیسے سخت دل سیاستدانوں کو دو قدم ہی سہی لیکن پیچھے ہٹنے پر مجبور کر دیا۔ اس کے لیے شاہین باغ اور وہاں بیٹھی شاہین صفت عورتوں کو جتنی بھی مبارکباد دی جائے کم ہے۔ ’قومی آواز‘ کی جانب سے ہم ایک بار اس کامیابی پر شاہین باغ تحریک کو پھر مبارکباد پیش کرتے ہیں اور ساتھ ہی ان کی تحریک کے بنیادی مقاصد یعنی سی اے اے واپسی کے دعا گو بھی ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل میں موٹر گاڑیوں کی بڑھتی تعداد۔ آمدورفت کی دشواریوں پر قابو پانے کے لئے ٹریفک پولیس اسٹیشن کا قیام اشد ضروری

بھٹکل شہر تعلیمی، معاشی اور سماجی طور پرتیز رفتاری کے ساتھ ترقی کی طرف گامزن ہے۔ لیکن اس ترقی کے ساتھ یہاں پر موٹر گاڑیوں کی تعداد میں بھی بے حد اضافہ ہوا ہے جس سے ٹریفک کے مسائل پیدا ہوگئے ہیں۔ دوسری طرف ٹریفک قوانین کی خلاف ورزیاں بھی بڑھتی جارہی ہیں اوراس سے سڑک حادثے بھی ...

اسمبلی الیکشن: الٹی ہو گئیں سب تدبیریں۔۔۔ آز: ظفر آغا

الٹی ہو گئیں سب تدبیریں... جی ہاں، دہلی اسمبلی الیکشن جیتنے کی بی جے پی کی تمام تدبیریں الٹی پڑ گئیں اور آخر نریندر مودی اور امت شاہ کو کیجریوال کے ہاتھوں منھ کی کھانی پڑی۔ دہلی میں بی جے پی کی صرف ہار ہی نہیں بلکہ کراری ہار ہوئی۔

اسکول کا ناٹک ۔پولس حیلہ بازی کا ناٹک                        ۔۔۔۔۔۔بیدر کے شاہین اسکول کے خلاف ہوئی پولس کاروائی پر نٹراج ہولی یار کی خصوصی رپورٹ

بیدر کے شاہین اسکول میں کھیلے گئے ایک ڈرامے میں اداکاری کرنے والے   اسکولی بچوں سے بار بار پوچھ تاچھ کرنے والے  پولس  کا رویہ ، نہایت  خطرناک اور  خوف میں مبتلا کرنے والا ہے۔ ایک وڈیو کلپ پر انحصار کرتےہوئےمتعلقہ  ڈرامے میں شہری ترمیمی قانون کی تنقید کئے جانے اور وزیرا عظم کی ...

دہلی الیکشن.....شاہین باغ.... شہریت... اور شریعت .... آز: ڈاکٹر سید فاضل حسین پرویز

الحمدللہ! نفرت، دشمنی پھیلانے والوں کو عزت اور ذلت دینے والے نے رسوا کیا۔ ہمارے قدموں کے نیچے سے زمین کھینچنے کی کوشش کرنے والوں کے لئے اُس سرزمین پر جہاں ان کا راج ہے انہیں اجنبی جیسا بناکر رکھ دیا۔ بے شک انسان چاہے لاکھ سازشیں اور کسی کو مٹانے کی کوششیں کرلے جب تک خالق کائنات ...