بنگلورو میں بھاری برسات کی وجہ سے ا لیکٹرک کھمبے اور درخت اکھڑ گئے۔ موٹر گاڑیوں کو پہنچا نقصان 

Source: S.O. News Service | Published on 30th May 2020, 8:50 PM | ریاستی خبریں |

بنگلورو 30/مئی (ایس او نیوز) پچھلے دو تین دن سے بنگلورو میں شام کے وقت زورداربارش ہورہی ہے جس کے نتیجے میں بجلی منقطع ہونے کے علاوہ درخت جڑ سے اکھڑ گرنے اور اس سے موٹر گاڑیوں کو نقصان پہنچنے کی بھی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔

ذرائع سے ملی اطلاع کے مطابق جمعرات اور جمعہ کے دن بنگلورو مغربی علاقے میں تیز ہواؤں اور بجلیوں کی کڑک اور بادلوں کی گرج کے ساتھ زوردار برسات ہوئی۔تقریباً 30سے زائد مقامات پر درخت جڑوں سے اکھڑ گئے۔ پریس کلب کے احاطے میں بھی درخت اکھڑ کر گئے۔فائر بریگیڈ اورمیونسپل کارپوریشن کے عملے نے درختوں کو ہٹانے کا کام انجام دیا۔ملیشور، شیشادری پورم، راجاجی نگر، مہا لکشمی لے آؤٹ، کورمنگلا، بسویشور نگر، اندرا نگر، ایم جی روڈ، شیواجی نگر اور آس پاس کے علاقوں میں بھاری برسات ہونے کی خبر ہے۔کئی علاقوں میں برسات کا پانی جمع ہونے سے لوگوں کے لئے آمد و رفت میں مشکلات پیش آئیں۔ 

موسلادھار برسات کے دوران درخت کی شاخیں ٹو ٹ کر الیکٹرک کھمبے پر گرگئیں جس کی وجہ سے بجلی منقطع ہوگئی۔جبکہ ملیشور، راجاجی نگر، ودیا رنیا پور جیسے علاقوں میں درخت موٹر گاڑیوں پر گئے جس سے کاروں اور آٹو رکشا کو بہت نقصان پہنچا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بنگلورو میں ایک ہفتہ طویل لاک ڈاؤن، سڑکیں سنسان، راستوں سے سواریاں غائب

بنگلورو میں جہاں ایک ہفتہ طویل لاک ڈاؤن نافذ کردیا گیا ہے، سڑکیں  سنسان رہیں اور راستوں پر لوگوں کی نقل و حرکت بھی بہت کم رہی۔ کورونا وائرس کیسس میں اضافہ کے پیش نظر حکومت کرناٹک نے مذکورہ لاک ڈاؤن نافذ کیا ہے۔

مینگلور : دکشن کنڑا میں ایک ہفتہ تک جاری رہنے والے لاک ڈاون کا آج سے ہوا نفاذ، راستے سنسان، دکانیں بند، عام زندگی مفلوج

کورونا کے بڑھتے معاملات اور روز بروز اضافہ کو دیکھتے ہوئے  ایک ہفتہ طویل لاک ڈاون کا آج  سے مینگلور سمیت دکشن کنڑا ضلع میں نفاذ عمل میں آیا جس کے دوران شہر کی سڑکیں سنسان اور بہت زیادہ چہل پہل والے علاقوں میں بھی سناٹا نظر آیا۔ 

بنگلورکے ساتھ ساتھ ساحلی کرناٹکا میں کورونا کا قہر جاری؛ اُترکنڑا میں 76 معاملات؛ بھٹکل میں پھر ایک شخص کی موت

ریاست کرناٹک بالخصوص بنگلور میں کورونا کا قہر جاری ہے مگر ساحلی کرناٹکا میں بھی کورونا کے معاملات رُکنے کا نام نہیں لے رہے ہیں، ایک طرف آج ضلع اُترکنڑا میں کورونا کے 76 معاملات سامنے آئے تو وہیں پڑوسی ضلع اُڈپی میں 52 اور دکشن کنڑا میں 76 پوزیٹیو کیسس کی تصدیق ہوئی ہے۔

بھٹکل میں کورونا مریضوں کی تعداد میں اضافے سے خوف زدہ ہونے کی ضرورت نہیں۔معمولی علامات پر جانچ کروانے ڈپٹی کمشنر کی ہدایت 

ضلع اُترکنڑا کے  ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر ہریش کمار نے عوام سے اپیل کی  کہ بھٹکل میں کورونا مریضوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کو دیکھ کر گھبرانے یا خوف کھانے کی ضرورت نہیں ہے، بلکہ کورونا پر قابو پانے کے لئے اس کی علامات ظاہرہوتے ہی  اس کا علاج کرنے کی ضرورت ہے۔ بھٹکل میں کورونا کے بڑھتے ...