عدلیہ نے منی لانڈرنگ معاملہ میں ویر بھدر سنگھ کے بیٹے کو طلب کیا 

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 25th July 2018, 12:24 AM | ملکی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

نئی دہلی:24/جولائی(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)دہلی کی ایک عدالت نے ہماچل پردیش کے سابق وزیر اعلی ویر بھدر سنگھ کے بیٹے وکرم آدتیہ اور دیگر کو منی لانڈرنگ کے ایک معاملے میں 27 اگست کو اس کے سامنے پیش ہونے کے لئے آج سمن بھیجا ہے ۔خصوصی جج اروند کمار نے منی لانڈرنگ معاملہ میں وکرم آدتیہ کے خلاف 21 جولائی کوای ڈی کی طرف سے دائر چارج شیٹ پر غور کیا۔ اس کیس میں ویر بھدر سنگھ بھی شامل ہیں۔ نتیش رانا اور این کے مٹا کی طرف سے دائر چارج شیٹ میں تارا نی انفراسٹکچر کے منیجنگ ڈائریکٹر واک ملا چندرشیکھر اور رام پرکاش بھاٹیہ نام کا ایک شخص بھی نامزد ہے۔ چندر شیکھر اور بھاٹیہ سی بی آئی کے معاملے میں بھی ملزم ہیں جس میں ویر بھدر سنگھ، ان کی بیوی پرتیبھا سنگھ اور دیگر کو بھی ملزم بنایا گیا ہے۔ای ڈی چارج شیٹ میں ویر بھدر سنگھ (83) اور ان کی بیوی پرتبھا سنگھ (62) کے علاوہ یونیورسل ایپل ایسوسی ایٹ کے مالک چنی لال چوہان ،ایل آئی سی ایجنٹ آنند چوہان اور دو دیگرملزمان پریم راج اور رلون کمار روچ کو بھی ملزم بنایا گیا ہے۔ ای ڈی کی طرف سے منی لانڈرنگ کی روک تھام قانون کی دفعات کے تحت نو جولائی 2016 کو گرفتار آنند چوہان کو اس معاملے میں دو جنوری کو ضمانت ملی تھی۔اس واقعہ سے متعلق سی بی آئی کے ایک اور کیس میں ویر بھدر سنگھ، اس کی بیوی اور چوہان کو دوسرے کے ساتھ چارج شیٹ میں نامزد کیا گیا ہے۔ سی بی آئی نے دعوی کیا تھا کہ ویر بھدر نے قریب دس کروڑ روپے کی جائیداد حاصل کی جو مرکزی وزیر کے طور پر ان کی مدت کے دوران ان کی کل آمدنی سے زیادہ تھی۔ 

ایک نظر اس پر بھی

جے این یو طالب علم عمر خالد پر فائرنگ کے معاملے میں دو گرفتار

یوم آزادی سے دو دن پہلے راجدھانی کے انتہائی محفوظ علاقے پارلیمنٹ سے چند قدم کے فاصلے پر واقع کانسٹی ٹیوشن کلب آف انڈیا کے باہر سر عام جے این یو کے طالب علم عمر خالد پر جان لیوا حملے کے معاملے میں دہلی پولس کی اسپیشل سیل نے دو لوگوں کو حراست میں لیا ہے ۔

سیلاب متاثرین کی طرف بسکٹ پھینکنے پر وزیر تعمیرات عامہ ایچ ڈی ریونا تنازعے میں گھرگئے؛ کئی حلقوں میں شدید ناراضگی

ریاستی وزیر برائے تعمیرات عامہ ایچ ڈی ریونا کی طرف سے کورگ اور رامناتھ پورہ کے سیلاب زدگان کی راحت کاری مہم کے دوران متاثرین کی طرف بسکٹ پھینکے جانے کا معاملہ تنازعے کا سبب بنا ہوا ہے۔