کاسرگوڈ: شکر کے تھیلوں میں ریت اسمگل کرنے کی کوشش۔ ریت سمیت ٹرک ضبط۔ ڈرائیور گرفتار

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 6th December 2017, 9:37 PM | ساحلی خبریں |

کاسرگوڈ،6؍دسمبر (ایس او نیوز) ریت کو ایک مقام سے دوسرے مقام پر منتقل کرنے کے لئے ریت مافیا بھی اسی طرح نت نئے طریقے ایجاد کرنے لگاہے جیسے کہ دبی سے سونا اسمگل کرنے والے انوکھے طریقے اختیار کرتے ہیں۔

موصولہ رپورٹ کے مطابق منگلورو سے کیرالہ کی طرف غیر قانونی طور پر ریت اسمگل کرنے کے لئے شکر کے تھیلے استعمال کرنے کا واقعہ تریکرپور نامی مقام پر سامنے آیا ہے۔ کہتے ہیں کہ چاندیرا پولیس اسٹیشن کا عملہ معمول کے مطابق گاڑیوں کی چیکنگ کررہا تھا۔ جب انہوں نے ایک منی ٹرک کو روکا اور اس کا معائنہ کیا تو اس کے اندر شکر بھرنے کے لئے استعمال ہونے والے سفید تھیلوں میں ریت لدی ہوئی دیکھ کر وہ چکرا گئے۔ اس کے بعد ضابطے کی کارروائی کرتے ہوئے پولیس نے ریت کے 154تھیلوں کے ساتھ ٹرک ضبط کیا۔ریت اسمگل کرنے کے الزام میں ڈرائیور کو بھی گرفتار کرلیا ہے۔ پتہ چلاہے کہ شکر کے تھیلوں کے شکل میں بھری ہوئی یہ ریت کیرالہ کے کنور شہر میں پہنچائی جانے والی تھی۔

ایک نظر اس پر بھی

بی جے پی کی طرف سے کرناٹک بند کا اعلان کئے جانے پر کانگریس نے ڈی جی پی سے کی یڈی یورپا کے خلاف شکایت

ریاستی بی جے پی صدر بی ایس یڈی یورپا کی طرف سے کل پیر کو کرناٹک بند کا اعلان کئے جانے پر  کرناٹک پردیش کانگریس کمیٹی  کی لیگل سیل نے  ریاستی ڈائرکٹوریٹ جنرل آف پولس (ڈی جی پی) سے شکایت کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ عدالت کی طرف سے ریاست بند کا کوئی پرویزن نہیں ہونے کے صاف احکامات ...

کرناٹکا بند کو کامیاب بنانے بھٹکل بی جے پی نے کی عوام سے اپیل؛ کیا کل پیر کو ہوگا کرناٹک بند ؟

ایک طرف بی جے پی رہنما اور سابق وزیراعلیٰ یڈی یورپا نے کل پیر کو بند نہ ہونے کی بات کہی تھی اور کہا تھا کہ اگر کسانوں کی تنظیموں کی طرف سے بند منایا  جاتا ہے تو بی جے پی اُن تنظیموں کی مکمل حمایت کرے گی، مگر دوسری طرف بی جے پی کی جانب سے مختلف علاقوں میں پریس کانفرنس کا انعقاد ...

گرام پنچایت سطح پر پہلی جماعت سے بارہویں جماعت تک ’کرناٹک پبلک اسکول‘ کی تجویز؛ اُترکنڑا میں چھ اسکولوں کو منظوری

کرناٹکا گیان آیوگ کی طرف سے کی گئی سفارشات کے پیش نظر ریاست میں ایک ہی کیمپس میں پہلی جماعت سے بارہویں جماعت تک تعلیم فراہم کرنے والے ’کرناٹک پبلک اسکول‘ کا قیام گرام پنچایت سطح پر کیا جارہا ہے۔