اُڈپی میں بندروں کی اچانک ہلاکت کا سلسلہ جاری۔بندروں کا بخار پھیلنے کے خدشے سے ساحلی کرناٹکا کے عوام میں دہشت

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 12th January 2019, 1:41 PM | ساحلی خبریں |

بھٹکل 12؍جنوری (ایس او نیوز)پڑوسی ضلع شموگہ کے ساگر تعلقہ میں  منکی فیور سے آٹھ افراد کی ہلاکت کے بعداب  اڈپی ضلع کے کنداپور اور کارکلا تعلقہ جات میں مختلف مقامات پر بندروں کے اچانک ہلاک ہونے کے واقعات پیش آنے سے پورے ساحلی علاقہ کے  عوام میں دہشت پھیل گئی ہے کہ کہیں بندروں کے بخار(منکی فیور) کی وبااس علاقے میں نہ پھیل جائے۔

بتایاجاتا ہے کہ ضلع اُڈپی کے    کارکلاکے ہیرگانا،کے علاوہ کنداپور تعلقہ کے کنڈلور اور ہوسانگڈی کرناٹکا پاور سپلائی عمارت کے احاطے میں جمعرات کے دن بھی بیمار بندر اچانک آکر گرنے کی اطلاعات ملی ہیں ۔ بتایا گیا ہے کہ  بندروں  کے منھ سے بڑی مقدار میں جھاگ نکل رہاتھا۔ پھروہ تڑپ تڑپ کرمر ہوگئے۔ڈسٹرکٹ ہیلتھ اینڈ فیملی ویلفیئر آفیسر ڈاکٹر روہنی نے بتایا کہ:’’ بندروں کی ہلاکت کا اصل سبب ابھی معلوم نہیں ہوسکا ہے۔ ہلاک ہونے والے بندروں کا پوسٹ مارٹم کرکے ان کے اعضاء کے نمونے شیموگہ میں موجود وائرس تشخیص کرنے والی لیباریٹری میں بھیج دئے گئے ہیں۔اس کے علاوہ مردہ بندروں کے جسم پر پائے گئے کھٹمل نما کیڑے (پِسُّو) بھی جانچ کے لئے لیباریٹری میں بھیج دئے گئے ہیں ۔ لیباریٹری کی رپورٹ دوچار دن میں مل جائے گی ۔ اس کے بعد ہی کچھ کہا جاسکے گا۔‘‘

خیال رہے کہ اس بیماری کو ’کیاسانور فاریسٹ ڈیسیز‘(کے ایف ڈی) بھی کہاجاتا ہے کیونکہ 1957میں شیموگہ کے کیاسانور جنگلاتی علاقے سے پہلی مرتبہ یہ بیماری دیکھنے میں آئی تھی جس میں سنکڑوں بندر ہلاک ہوگئے تھے جس کے بعد   یہ وبا انسانوں میں عام ہوگئی تھی۔  اب پچھلے کچھ ونوں سے شیموگہ ضلع کے ساگر میں بندر کے بخارکے معاملے سامنے آئے ہیں۔ ایک رپورٹ کے مطابق ساگر میں اب تک اس بخار سے آٹھ افراد کی موت ہوچکی ہے اور بہت سارے افراد اس کے وائرس سے متاثر پائے گئے ہیں۔اس کے بعد اب شیموگہ سے متصلہ ضلع اڈپی  میں اس طرح بیمار بندروں کی موت واقع ہونے سے عوام کا خوفزدہ ہونا فطری بات ہے۔ جس کے بعد ضلع اُتر کنڑا کے  ہوناور، سداپور اور بھٹکل میں بھی  اس بیماری کو لے کر تشویش پائی جارہی ہے۔

اُڈپی کی ڈسٹرکٹ ملیریا ریگیولیٹری آفیسر ڈاکٹر پرشانت بھٹ نے بتایا کہ :’’ہم نے انسانوں میں اس بیماری کے اثرات پھیلنے کے تعلق سے معلومات اکٹھا کرنی شروع کردی ہے۔ابھی تک ایسا کوئی بھی معاملہ سامنے نہیں آیا ہے۔ہم نے احتیاطی طور پر ریڈ الرٹ جاری کردیا ہے اور عوام کو چوکنا کیا جارہا ہے۔‘‘   معلوم ہوا ہے کہ محکمہ صحت کے علاوہ دیگرمختلف محکمہ جات کے اشتراک سے جنگلاتی علاقے سے قریب رہنے والوں کو محتاط رہنے کے لئے کہا گیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

اسپتال قائم کرنا میری ذمہ داری نہیں ہے: کاروار میں ایم پی اننت کمار ہیگڈے کا تکبرانہ بیان

ضلع شمالی کینرا میں ایک ٹراما سینٹر اور سوپر اسپیشالٹی ہاسپٹل تعمیر کرنے کے لئے سوشیل میڈیا جو مہم چلائی جارہی ہے اور متعلقہ محکمہ جات کے افسران کو میمورنڈم دئے جارہے ہیں اس سلسلے میں ضلع کے رکن پارلیمان اننت کمار ہیگڈے نے اب تک کسی قسم کاردعمل ظاہر نہیں کیاتھا۔ الٹے سوشیل ...

اڈپی کے موٹر بائک شوروم میں بھیانک آتشزدگی۔ فائربریگیڈ کی بروقت کارروائی سے ٹل گیا سنگین حادثہ

یہاں اندرالی ریلوے پل سے قریب واقع ہیرو ہونڈا موٹربائک کے جئے دیوا شو روم میں اتوار کی شب میں بھیانک آتشزدگی کا واقعہ پیش آیا۔ چونکہ اس شوروم سے متصل پٹرول بنک موجود ہے اس لئے حادثہ سنگین رخ اختیار کرنے کے امکانات پیدا ہوگئے تھے، لیکن فائر بریگیڈ عملے کی بروقت کارروائی کی وجہ ...

منگلورو میں ڈینگی بخار کے 40مشتبہ مریض اسپتال میں داخل۔ریاستی سطح پر% 70ملیریا کے معاملات منگلورو میں درج ہوئے

گزشتہ تین ہفتوں کے دوران منگلورو کے گجّر کیرے نامی علاقے میں ڈینگی بخار کے 40مشتبہ مریض اسپتال میں داخل کیے گئے ہیں تفتیش کے بعد ان میں سے ایک معاملے میں ڈینگی بخار کی تصدیق ہوگئی ہے۔

منگلورو ایئر پورٹ پر 20.67لاکھ روپے مالیت کا سونا ضبط

منگلورو انٹرنیشنل ایئر پورٹ پر سونا اسمگلنگ کرنے کی کوشش کو ناکام بناتے ہوئے کسٹم کے افسران نے ایک مسافر کے قبضے سے 24کیریٹ کا608  گرام سونا ضبط کرلیا جو مسافر نے پیسٹ کی شکل میں اپنے مقعد میں چھپاکر رکھا تھا۔

کاروار میں شراب کے نشے میں دُھت کار چلانے کے دوران چار سواریوں کو ٹکر دینے کے بعد عوام نے نیوی اہلکار کی لی خوب خبر

نیوی اہلکار کو کاروار میں  اُس وقت عوام  کے ہاتھوں بری طرح    پٹنا پڑا جب  شراب کے نشے میں ڈرائیونگ کرنے کے دوران اس کی کار  یکے بعد دیگرے چار کاروں سے ٹکرا گئی۔ واردات  کاروار کے بِنگا میں کدمبا نیوی کے گیٹ کے قریب سنیچر شب کو  پیش آیا۔