کرناٹک اسمبلی انتخابات: کانگریس کی پیشکش کو قبول کرتے ہوئے کماراسوامی نے کی گورنر سے ملاقات؛ یڈی یورپا نے بھی کیا سرکار بنانے کا دعویٰ؛ گورنر کے پالے میں گیند

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 15th May 2018, 10:17 PM | ریاستی خبریں | ملکی خبریں |

بھٹکل  15/مئی (ایس او نیوز) کرنا ٹکا  اسمبلی انتخابات کے نتائج کی تصویر تقریبا صاف   ہوچکی ہے.اور ملی جلی سرکاربننا طے ہوچکا ہے مگر دوسری طرف بی جے پی ریاست میں سب سے بڑی پارٹی بن کراُبھری  ہے البتہ  اُس کے پاس حکومت بنانے کے لئے جادوئی ہندسہ نہیں ہے۔ مگر بڑی پارٹی بن کر سامنے آنے کی وجہ سے  یڈی یورپا نے ریاست کے گورنر سے ملاقات کرتے ہوئے  بی جے پی کی جانب سے حکومت بنانے کا دعویٰ پیش کردیا ہے۔

اُدھر کانگریس کی طرف سے جے ڈی ایس کو حمایت حاصل ہوتے ہی کماراسوامی نے بھی حکومت بنانے کا دعویٰ پیش کردیا ایسی صورتحال میں  اب گیند گورنر کے پالے میں ہے، اور گورنر حکومت کا دعویٰ پیش کرنے کس پارٹی کو موقع دیتے ہیں، ہر ایک کی نظریں اُسی پر ٹکی ہوئی ہے۔

کرناٹک انتخابات کے نتائج ظاہر ہونے کے  بعد، بی جے پی  سب سے زیادہ سیٹوں کے ساتھ اُبھری ہے لیکن حکومت بنانے کے  ہندسے کو پار نہیں کرسکی ہے، اس کے بائوجود بی جے پی سرکار   بنانے کی تیاری میں  ہے. یڈی یورپا نے کہا، "ہم سب سے بڑی پارٹی  ہے اور ایسے میں  سرکار بنانے کا موقع ہمیں  ملنا چاہئے۔یڈی یورپا کے مطابق   بی جے پی 100 فیصد حکومت بنائے گی اور اسمبلی میں اکثریت ثابت کرے گی.

اُدھر گورنر سے مل کر سرکار بنانے کا دعویٰ پیش کرنے کے بعد میڈیا سے  گفتگو کرتے ہوئے سدرامیا نے کہا کہ کانگریس نے بنا شرط جے ڈی ایس کو حمایت دی ہے۔ سدرامیا نے کہا کہ گٹھ بندھن کی شرطوں پر بعد میں فیصلہ ہوگا۔ پہلی ترجیح   حکومت کی تشکیل ہے. کانگریس رہنما نے دعوی کیا کہ ان  کے پاس  جادوئی  نمبر ہے. انہوں نے کہا کہ دو آزاد اُمیدواروں  کی حمایت بھی جےڈی ایس ۔ کانگریس اتحاد کے ساتھ  ہے.

یڈی یورپا  منگل کی شام کے قریب  پانچ بجے پارٹی کے رہنماؤں کے ساتھ راج بھون پہنچے تھے اور گورنر سے ملاقات  کرتے ہوئے  حکومت بنانے کا دعوی پیش کیا تھا۔یڈی یورپا نے بعد میں  کہاکہ ، "ہم سب سے بڑی پارٹی کے طور پر حکومت بنانے کا  دعوی پیش کرکے آئے ہیں. ہم نے گورنر سے ملاقات کی ہے کیونکہ ہم  نے کرناٹک میں سب سے بڑی واحد پارٹی بن کر جیت درج کی ہے۔ اس لئے ہم اسمبلی میں اکثریت پیش کریں گے. '

یڈی یورپا کے ساتھ بی جے پی کے رہنما اننت  کمار ، شوبھا کرندلاجے اور راجیو چندرشیکھر نے بھی گورنر سے ملاقات کی۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ تمام نشستوں میں اب تک الیکشن کمیشن کی طرف سے نتائج نہیں پہنچے ہیں اور سرکاری اعداد و شمار گورنر کے سامنے بھی نہیں پہنچے ہیں. آخری فیصلے کے لئے  گورنر نے بھی  حتمی فیصلے کے لئے حتمی نتائج کا انتظار کرنے کا عندییہ دیا ہے۔

دوسری طرف کانگریس اور جے ڈی ایس نے ایک ساتھ آنے کا فیصلہ کیا ہے، کیونکہ دونوں پارٹیاں  ساتھ مل کر حکومت بنانے کا ہندسہ پار کررہے ہیں۔ جے ڈی ایس اور کانگریس نے ایچ دی کماراسوامی کو اپنا وزیراعلیٰ کا اُمیدوار بنانے  کا اعلان کیا  ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

دیہاتوں کے ندی نالوں پر بانس اور لکڑیوں سے بنے جھولتے ہوئے پُل عوام کے لیے خطرے کی گھنٹیاں؛ عوام اپنے مسائل کواپنے ہی وسائل کے مطابق حل کرنے اور خطرات بھری زندگی بسر کرنے پر مجبور

جدیدٹیکنالوجی کے ساتھ ہمارے ملک اورشہروں کی ترقی تیز تر ہوتی جارہی ہے۔ جب ہم ملک کی ترقی کی بات کرتے ہیں توصرف شہروں کی ترقی سے کام نہیں چلے گا۔ بلکہ قصبوں اور دیہاتوں کی ترقی بھی اتنی ہی ضروری ہے۔جب تک شہروں اوردیہاتوں کے مابین رابطہ بہتر نہیں ہوتا تب تک عوام کی زندگی میں ...

یونیورسٹی وشویشوریا کالج آف انجینئرنگ پچھلے 20؍ سالوں سے50؍ فیصدعملہ کی قلت کا شکار

بنگلور یونیورسٹی کے وائس چانسلر نے اس بات کا اعتراف کیا ہے کہ یونیورسٹی وشویشوریا کالج آف انجینئرنگ (یو وی سی ای) بنگلور جو بنگلور یونیورسٹی کا واحد انجینئرنگ کالج ہے ، وہ پچھلے بیس سالوں سے پچاس فیصد عملہ کی قلت کا شکار رہا ہے،

بنگلورو میں بارش کی تباہ کاریوں کی روک تھام کے لئے اقدامات اراکین اسمبلی اور افسروں سے تبادلہ خیال۔پرمیشور بنگلورو اسمبلی حلقوں کا معائنہ کریں گے

بنگلورو میں بھاری بارش کے دوران پیدا ہونے والے مسائل سے نمٹنے اور بروقت راحتی کاموں کو یقینی بنانے کے سلسلہ میں نائب وزیراعلیٰ ڈاکٹر جی پرمیشور نے بنگلور وکے تمام اراکین اسمبلی ،ارکان پارلیمان ، کارپوریٹرس، بی ڈی اے اور بی ایم آر ڈی اے کے افسروں کے ساتھ تبادلہ خیال کیا۔

قبل از پارلیمانی انتخابات کے سلسلہ میں الیکشن کمیشن مخمصہ کا شکار مرکزی حکومت سے مرعوب کمیشن ضمنی انتخابات کے اعلان سے بھی لاچار

ایک طرف مرکزی انتخابی کمیشن قبل از وقت پارلیمانی انتخابات کرانے یا نہ کرانے کے مخمصہ میں پھنسا ہواہ ے تو دوسری طرف پارلیمانی حلقوں میں کئی نشستیں اراکین کے استعفیٰ دینے یا دیگر جوہات سے خالی پڑی ہیں ۔

صحافت سماج کا آئینہ ہے تو صحافی حقیقت نگار ہے؛ گوکرن میں منعقدہ ’یوم صحافت‘ میں معروف ادیب جینت کائیکنی کا تبصرہ

شمالی کینرا ضلع ورکنگ جرنلسٹ ایسوسی ایشن کی جانب سے گوکرن میں واقع برہمن پریشد سبھا بھون میں منعقدہ ’یوم صحافت‘ اور صحافیوں کو ایوارڈ تفویض کرنے کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے معروف کنڑا ادیب جینت کائیکنی نے کہا کہ ادب اورلٹریچر اگر ایک بہت ہی بڑا درخت ہے تو صحافت اس کی ایک گھنی ...

12؍ سالوں سے جیل میں مقید ملزم کی پیرول پر رہائی کی عرضداشت سماعت کے لیئے منظور ضعیف والدین کے علاج کے لیئے درخواست سپریم کورٹ میں داخل کی گئی، گلزار اعظمی

  گذشتہ 12؍ سالوں سے جیل کی سعوبتیں جھیلنے والے ایک مسلم قیدی کی اس کے ضعیف والدین کے علاج کے لئے جیل سے پیرول پر رہائی کے لیئے سپریم کورٹ آف انڈیا میں داخل عرضداشت پر آج عدالت نے کارروائی کرتے ہوئے مہاراشٹر حکومت کی نمائندگی کرنے والے وکیل کو حکم دیا

دہلی میں منعقد آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کی عاملہ کے اجلاس میں منظور شدہ تجاویز

آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کی مجلس عاملہ کی اہم میٹنگ مورخہ ۱۵؍جولائی ۲۰۱۸ء کو نیو ہورائزن اسکول، حضرت نظام الدین نئی دہلی میں، حضرت مولانا جلال الدین عمری (نائب صدر بورڈ و امیر جماعت اسلامی ہند) کی صدارت میں منعقد ہوئی،

پلوامہ میں نیشنل کانفرنس لیڈر کے گھر پر حملہ، ایک پولیس اہلکار ہلاک، ہتھیار بھی چھین لیے گئے

جنوبی کشمیر کے ضلع پلوامہ کے مرن میں پیر کے روز جنگجوؤں نے نیشنل کانفرنس کے ایک لیڈر کی حفاظت پر مامور ریاستی پولیس کے اہلکاروں پر فائرنگ کرکے ایک کو ہلاک جبکہ دوسرے ایک کو شدید طور پر زخمی کردیا۔

لوک سبھا انتخابات کے نتائج فٹ بال فائنل میچ کی طرح ہوسکتے ہیں: اکھلیش یادو

سماج وادی پارٹی (ایس پی) صدر اکھلیش یادو نے اترپردیش میں وزیر اعظم نریندر مودی کے طوفانی دورے پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ لوک سبھا انتخابات بھی اتوار کو ہونے والے ورلڈ کپ فٹ بال کے فائنل کی طرح ہو سکتے ہیں، جس میں ایک ٹیم نے زیادہ تر وقت گیند کو کنٹرول میں رکھا لیکن آخر میں اسے شکست ...

دارالحکومت میں لاء اینڈآرڈرتباہ ،کیجریوال نے دہلی میں قانون و انتظام پرمودی سرکارکوگھیرا

دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے پیر کے روز بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی)کی قیادت والی مرکزی حکومت کی سخت نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا دن بہ دن دارالحکومت میں قانون و انتظام کی حالت بدتر ہو تی جا رہی ہے۔