حجاب معاملہ پر سپریم کورٹ میں زورداربحث، عدالت عظمیٰ کرناٹک حجاب پابندی معاملہ کی جانچ کیلئے تیار،بومئی حکومت کو نوٹس جاری

Source: S.O. News Service | Published on 6th September 2022, 10:50 AM | ریاستی خبریں | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 6؍ستمبر (ایس او نیوز؍ایجنسی)  کرناٹک حجاب پر پابندی کے معاملے کی سپریم کورٹ میں جسٹس ہیمنت گپتا اور جسٹس سدھانشو دھولیا کی بنچ میں ہوئی سماعت کے دوران عدالت نے کہا کہ ہم کرناٹک حجاب پابندی معاملہ کی جانچ کے لیے تیار ہیں۔ عدالت نے اس پر کرناٹک حکومت کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کیا ہے۔

اس سے قبل حجاب پر پابندی پر سماعت ملتوی کرنے کے مطالبے پر سپریم کورٹ کے جج برہم ہوگئے۔ جسٹس ہیمنت گپتا نے مسلم درخواست گزاروں کے وکلا سے کہا کہ یہ فورم شاپنگ کام نہیں کرے گا۔ پہلے آپ جلد سماعت کا مطالبہ کرتے رہے، اب سماعت ملتوی کرنے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ انہوں نے دو ہفتے بعد سماعت کا مطالبہ بھی ٹھکرا دیا۔اس کے بعد جسٹس ہیمنت گپتا اور جسٹس سدھانشو دھولیا کی بنچ میں سماعت ہوئی۔ کل 24درخواستیں زیر سماعت ہیں۔ 6 مسلم طالبات نے بھی حجاب پر پابندی کو چیلنج کرتے ہوئے کرناٹک ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی ہے۔اس سے قبل 15مارچ کو کرناٹک ہائی کورٹ نے فیصلہ دیا تھا کہ حجاب پہننا اسلام میں مذہبی عمل کا لازمی حصہ نہیں ہے اور اس نے مسلم طالبات کی کلاسوں میں حجاب پہننے کی اجازت دینے کی درخواستوں کو خارج کر دیا تھا۔ عدالت نے ریاست کے تعلیمی اداروں میں حجاب پر پابندی کو بھی برقرار رکھا۔ 3 ججوں کی فل بنچ نے کہا کہ یونیفارم کی حکمرانی ایک معقول پابندی ہے اور اسے آئینی طور پر قبول کیا جاتا ہے، جس پر طالبات کوئی اعتراض نہیں کر سکتیں۔

سپریم کورٹ میں حجاب کیس کی سماعت کے دوران درخواست گزار کی طرف سے پیش ہونے والے ایڈوکیٹ سنجے ہیگڑے اور راجیو دھون نے کہا:یہ معاملہ آئینی بنچ کے سامنے جانا چاہئے۔ تعلیمی اداروں میں ڈریس کوڈ کے ساتھ ساتھ مذہبی علامتوں کو بھی استعمال کرنا چاہئے۔ لاکھوں لڑکیاں حجاب پہنتی ہیں، کئی اداروں میں سکھ طلباء پگڑی پہنتے ہیں،وہاں پر ڈریس کوڈ کی خلاف ورزی نہیں ہوتی۔دھون نے کہا، سوال یہ ہے کہ کیا ڈریس کوڈ لگایا جا سکتا ہے؟ سپریم کورٹ میں جج تلک پہنتے ہیں، کورٹ 2میں جج کی پگڑی پہنے ہوئے تصویرہے۔ اس پر جسٹس گپتا نے کہا، پگڑی الگ ہوتی ہے، یہ شاہی ریاستوں میں پہنی جاتی تھی، یہ مذہبی نہیں ہے۔ میرے دادا اسے قانون پر عمل کرتے ہوئے پہنتے تھے۔ اسے مذہب سے مت جوڑیں۔اس پر دھون نے کہا،مسئلہ ان لوگوں کی بڑی تعداد سے متعلق ہے جو ڈریس کوڈ کی پیروی کرتے ہیں لیکن حجاب بھی پہننا چاہتے ہیں، کیا یہ مناسب ہے کہ مذہبی حقوق پر بھی قدغن لگائی جائے؟ دوسرا یہ کہ آپ اسکارف پہن سکتے ہیں کیونکہ آج یہ پہنا جاتا ہے۔ جب آپ دوپٹہ پہنتے ہیں تو کیا آپ اسے اسکول میں پہن سکتے ہیں یا کلاس میں پہن سکتے ہیں؟ان تمام مضمرات پر غور کرنا ہوگا، یہ ایک سوال ہے کہ یہ عدالت جو بھی فیصلہ کرے گی، پوری دنیا سنے گی۔ حجاب دنیا بھر کے بڑے ممالک اور تہذیبوں کو متاثر کرتا ہے، اس وقت ہائی کورٹ کے 2متضاد نظریات ہیں۔

راجیو دھون نے کہا کہ اسکارف کو بھی ڈریس کوڈ کا حصہ ہونا چاہئے۔ کوئی اسے اتارنے کو نہیں کہتا۔ عدالت کو اس پر بھی غور کرنا چاہئے۔ حجاب پوری دنیا میں قدیم ہندوستانی تہذیب کا حصہ رہا ہے۔ کیرلا ہائی کورٹ نے بھی اپنے ایک فیصلے میں حجاب کو تسلیم کیا ہے۔ اس پر جسٹس ہیمنت گپتا نے راجیو دھون سے کہا کہ سوال یہ بھی ہوسکتا ہے کہ حجاب پہننا مذہب کا لازمی حصہ ہے یا نہیں۔ اگر حکومت اس پر قواعد بھی طے کرتی ہے تو ملک کے آئین کا کردار کہتا ہے کہ یہ ایک سیکولرملک ہے۔عدالت نے کہا کہ اس معاملے میں مذہبی رواج کہاں ہے؟ کرناٹک حکومت کی جانب سے کہا گیا ہے کہ ہم نے کسی کے بنیادی حق کی خلاف ورزی نہیں کی ہے۔ ہم نے اداروں کو یونیفارم ٹھیک کرنے کیلئے کہاتھا۔ ہم طالبات سے ڈریس کوڈ پر عمل کرنے کو کہہ رہے ہیں۔

کرناٹک حکومت نے سپریم کورٹ میں کہا کہ ڈریس کوڈ سے کسی کے بنیادی حق کی خلاف ورزی نہیں ہوتی ہے۔عدالت نے کہا کہ رول 11کسی بھی تسلیم شدہ تعلیمی ادارے کو اپنے اندرونی قوانین بنانے کا اختیار دیتا ہے۔ ڈریس کوڈ بھی اس کا حصہ ہے۔ کرناٹک حکومت کے وکیل نے کہا کہ پرائیویٹ تعلیمی ادارے کی گورننگ باڈی اصول و ضوابط، ڈریس کوڈ وغیرہ طے کرتی ہے۔ اسی طرح اقلیتی ادارے بھی اصول و ضوابط طے کرتے ہیں۔ عدالت نے کہا کہ کچھ اداروں نے حجاب پہننے کی منظوری نہیں دی۔ کچھ دیا ہے؟ کرناٹک کے وکیل نے کہا کہ بہت سے اداروں نے واضح منظوری نہیں دی ہے۔ کچھ خاموش ہیں۔ اس نے یہ نہیں بتایا کہ اس نے کیا فیصلہ کیا۔ سپریم کورٹ چہارشنبہ کو دوپہر 2 بجے تک سماعت جاری رکھے گی۔

ایک نظر اس پر بھی

بجٹ 2023: ’کوئی امید نہیں، بجٹ ایک بار پھر ادھورے وعدوں سے بھرا ہوگا‘، سدارمیا کا اظہارِ خیال

یکم فروری کو مرکز کی مودی حکومت رواں مدت کار کا آخری مکمل بجٹ پیش کرنے والی ہے۔ مرکزی وزیر مالیات نرملا سیتارمن کے ذریعہ بجٹ پیش کیے جانے سے قبل بجٹ 2023 کو لے کر کانگریس کے کچھ لیڈران نے اپنے خیالات ظاہر کیے ہیں۔

کرناٹک ہائی کورٹ کی وارننگ، کہا: چیف سکریٹری دو ہفتوں میں لاگو کرائیں حکم

کرناٹک ہائی کورٹ نے منگل کو انتباہ دیا کہ اگر ریاستی حکومت دو ہفتوں کے اندر سبھی گاؤں اور قصبوں میں قبرستان کے لئے زمین فراہم کرانے کے اس کے حکم پر عمل درآمد کرنے میں ناکام رہتی ہے تو وہ چیف سکریٹری کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی شروع کرنے پر مجبور ہوجائے گا ۔

منگلورو: محمد فاضل قتل میں ہندوتوا عناصر ملوث ہونے کا دعویٰ - اپوزیشن پارٹیوں نےکیا کیس کی دوبارہ جانچ کامطالبہ 

بی جے پی یووا مورچہ لیڈر پروین نیٹارو قتل کے بدلے میں عناصر کی طرف سے سورتکل میں محمد فاضل کو قتل کرنے کا کھلے عام دعویٰ کرنے والے وی ایچ پی اور بجرنگ دل لیڈر شرن پمپ ویل کے خلاف کانگریس ، جے ڈی ایس اور ایس ڈی پی آئی جیسی اپوزیشن پارٹیوں نے اس قتل کیس کی ازسر نو جانچ کا مطالبہ کیا ...

ٹمکورو میں اشتعال انگیز بیان دینے والے شرن پمپ ویل سمیت دیگر ہندوتوا لیڈروں کے خلاف قانونی کارروائی کا مطالبہ لے کر اے پی سی آر نے ایس پی کو دیا میمورنڈم

حال ہی میں ریاست کرناٹک کے  ٹمکور میں  منعقدہ شوریہ یاترا کے دوران وی ایچ پی لیڈر شرن پمپ ویل نے جو متنازع اور اشتعال انگیز بیان دیا  تھا ، اس پر کٹھن کارروائی کرتے ہوئے اسے گرفتارکرنے کا مطالبہ لے کر  ایسوسی ایشن فار پروٹیکشن آف سوِل رائٹس (اے پی سی آر) کے  ایک وفد نے ٹمکورو ...

ہنڈن برگ رپورٹ معاملہ: ’کروڑوں ہندوستانیوں کی جمع پونجی ڈوبا دی گئی‘، کانگریس کا پی ایم مودی پر شدید حملہ

اڈانی گروپ سے متعلق ہنڈن برگ کی رپورٹ پر سیاسی ہلچل تیز ہوتی ہوئی نظر آ رہی ہے۔ آج کانگریس کے سینئر لیڈر پون کھیڑا نے اس سلسلے میں پریس کانفرنس کر مرکز کی مودی حکومت پر شدید حملے کیے۔

نئے ٹیکس نظام پر چدمبرم نے پھر اٹھائے سوال، کہا- اخبارات میں شائع ہونے والے تجزیہ سے کھل رہے ہیں راز

سابق مرکزی وزیر اور کانگریس کے سینئر لیڈر پی چدمبرم نے ایک بار پھر مرکزی حکومت کے ذریعہ بجٹ میں پیش کیے گئے نئے ٹیکس نظام پر سوال اٹھائے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نئے ٹیکس سسٹم کے راز معروف اخبارات میں شائع ہونے والے تجزیوں اور رپورٹس سے کھل رہے ہیں جو سب کے سامنے آ رہا ہے۔

اپوزیشن گوتم اڈانی پر بحث چاہتی تھی، بحث سے قبل ہی پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں کی کارروائی ملتوی

گوتم اڈانی خود تو پریشان ہیں ہی ساتھ میں ان کی وجہ سے حکومت بھی تناؤ میں ہے۔ آج ایوان میں بجٹ سفارشات پر بحث ہونی تھی لیکن حزب اختلاف نے اڈانی پر بحث کو لے کر ہنگامہ کر دیا، جس کی وجہ سے دونوں ایوانوں کی کارروائی ملتوی کر دی گئی۔

دسمبر 2022 میں تقریباً 37 لاکھ ہندوستانی واٹس ایپ اکاؤنٹس پر لگائی گئی پابندی، کمپنی کی تازہ رپورٹ میں انکشاف

واٹس ایپ کے ذریعہ ہندوستانی اکاؤنٹس پر گزشتہ کچھ ماہ میں بڑی تعداد میں پابندی لگائی گئی ہے اور کمپنی کی تازہ رپورٹ میں دی گئی تعداد نے ایک بار پھر لوگوں کو حیران کر دیا ہے۔