کیرالہ، کرناٹک اور مہاراشٹر میں بارش اور سیلاب کاقہر، اب تک 93 ہلاک، ریسکیو آپریشن جاری

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 11th August 2019, 12:21 AM | ریاستی خبریں | ملکی خبریں |

وایناڈ / بنگلور / کولہاپور، 10 اگست(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) کیرالہ، کرناٹک اور مہاراشٹر میں بارش اور سیلاب کا قہر جاری ہے۔گزشتہ 72 گھنٹوں میں تینوں ریاستوں میں 93 جانیں جا چکی ہیں۔سیلاب اور بارش سے کیرل میں اس مانسون کے دوران 42 لوگوں کی موت ہو چکی ہے۔کیرالہ کے وایناڈ اور ملی پورم میں لینڈسلائڈنگ کی وجہ سے 40 افراد اب بھی پھنسے ہوئے ہیں جس سے موت کے اعداد و شمار اور بڑھنے کا خدشہ ہے، یہاں خراب موسم کی وجہ سے ریسکیو آپریشن میں رکاوٹ پیدا ہو رہا ہے۔ریسکیو آپریشن میں فوج اور این ڈی آر ایف کی مدد لی جا رہی ہے۔تمل ناڈو میں بھی بارش کی وجہ سے 5 کی موت ہو چکی ہے۔ہندوستانی فوج، بحریہ اور ایئر فورس کے جوان امدادی کام میں مصروف ہیں۔سیلاب سے متاثرہ چار ریاستوں کے 16 اضلاع میں 123 ریسکیو ٹیمیں پھنسے ہوئے لوگوں کی مدد پہنچا رہی ہیں۔کیرل میں اس مانسونی بارش کی خطرناک شکل گزشتہ سال والی اگست سانحہ کی دردناک یادیں تازہ کر رہی ہے۔جمعہ کو کیرل میں 27 جبکہ 7 افراد ہلاک ہفتہ کو ہو گئے۔یہاں گزشتہ 72 گھنٹے میں مجموعی طور پر 42 افراد کی جان چلی گئی۔یہاں وایناڈ اور ملپپرم میں بڑے لینڈسلائڈنگ کی وجہ سے اب 40 افراد پھنسے ہوئے ہیں جس سے موت کے اعداد و شمار بڑھنے کا خدشہ ہے۔ریسکیو ٹیمیں یہاں پہنچ چکی ہیں لیکن خراب موسم کی وجہ ریسکیو آپریشن میں خلل پیدا ہو رہا ہے۔کرناٹک کے بگلکوٹ، رایچور، بے لگام اور کلبرگی اضلاع میں 33 ریلیف ٹیمیں اور اجنیرو میں 31 ٹاسک فورس سیلاب سے متاثرہ لوگوں کو راحت پہنچانے کے کام میں مصروف ہیں۔وہیں کیرل میں 24 ریلیف ٹیموں کے ساتھ 8 انجینئر ٹاسک فورس کو الیپی، ایرناکلم، پتھانمتھٹا، ادکی، ملپپرم، وایناڈ اور کوجھکوڈ میں راحت اور بچاؤ کے کام میں لگایا گیا ہے۔ریسکیو ٹیموں نے وایناڈ سے 8 لاشیں برآمد کئے ہیں جبکہ ملپپرم کے پہاڑی علاقوں میں آئے لینڈسلائڈنگ کی وجہ سے 10 لوگوں کی موت ہو گئی اور 30 لاپتہ ہیں۔وزیر اعلی پنرای وجین نے بتایا کہ اب بھی لینڈسلائڈنگ میں بہت سے لوگ لاپتہ ہیں، لہذا صحیح اعداد و شمار بعد میں ہی پتہ چلے گا۔کیرل میں اب بھی 20 سے 40 سینٹی میٹر کی رفتار سے بارش ہو رہی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

شہریت ترمیمی بل کے خلاف بنگلورو میں کرناٹکامسلم متحدہ محاذ کے زیر اہتمام ملّی و سماجی تنظیموں کا زبردست احتجاجی مظاہرہ

سماج کو مذہبی بنیادوں پر تقسیم کرنے والے مرکزی حکومت کے شہریت ترمیمی بل (سی اے بی) کے خلاف بنگلورو میں کرناٹکا متحدہ محاذ کے زیر اہتمام دوپہر 12بجے ٹاؤن ہال کے پاس ایک زبردست احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔

کاروار:شیورام ہیبار بن گئے سیاسی گرو دیشپانڈے کوجھٹکا دینے والے تیسرے شاگرد!

ضلع شمالی کینرا کی سیاست میں گزشتہ کئی دہائیوں سے اپنا سکہ چلانے والے سیاسی گرو آر وی دیشپانڈے کو انہی کے جن شاگردوں نے جھٹکا دے کر وزارتی قلمدان حاصل کرنے میں کامیابی حاصل کی ہے، ان میں تیسرے شاگرد کے طورپر شیو ہیبار ابھر کر سامنے آئے ہیں، کیونکہ ضمنی انتخاب میں جیت کے ...

  مسلم متحدہ محاذ، جماعت اسلامی ہند اور کئی تنظیموں کے ایک نمائندہ وفدکا سابق وزیر اعظم ایچ ڈی دیوے گوڈا سے ملاقات اور شہریت ترمیمی بل   کی مخالفت اور دستور کے تحفظ میں تعاون کرنے کی اپیل

مسلم متحدہ محاذ، جما عت اسلامی ہند، سدبھاؤ نا منچ بورڈ آف اسلامک ایجوکیشن کرناٹک، ایف ڈی سی اے، ایس آئی او، اے پی سی آر  اور مومنٹ فار جسٹس جیسے ہم خیال تنظیموں کی قیادت میں مسلم نمائندوں کا ایک وفد 7 / دسمبر 2019  ء  بروز سنیچر، سابق وزیر اعظم شری ایچ ڈی دیوے گوڈا سے ملاقات کرتے ...