طالبان نے درجنوں افغان فوجی اہلکار یرغمال بنا ڈالے 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 19th March 2019, 4:52 PM | عالمی خبریں |

کابل 19مارچ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا ) افغانستان میں حکام نے تصدیق کی ہے کہ طالبان جنگجوؤں نے سرکاری فوج کے 58 اہلکاروں کو یرغمال بنا لیا ہے۔حکام کے مطابق ان اہلکاروں کو ترکمانستان کی سرحد سے متصل افغان صوبے بادغیس میں طالبان اور سرکاری فوج کے درمیان حالیہ جھڑپوں کے دوران یرغمال بنایا گیا ہے۔

افغان وزارتِ دفاع نے پیر کو تصدیق کی ہے کہ سرکاری فوج کے وہ 58 دیگر اہلکار واپس افغانستان پہنچ گئے ہیں جو شمالی مغربی سرحدی ضلعے بالا مرغاب میں طالبان کے حملے سے بچنے کے لیے سرحد پار کرکے ترکمانستان چلے گئے تھے۔

وزارتِ دفاع کے مطابق علاقے میں مزید کمک بھیج دی گئی ہے اور لاپتا اہلکاروں کی تلاش اور یرغمالیوں کی رہائی کے لیے چھاپہ مار کارروائیاں جاری ہیں۔افغان وزارتِ خارجہ نے اپنے ایک علیحدہ بیان میں سرحد پار جانے والے افغان فوجی اہلکاروں کا خیال رکھنے اور انہیں طبی امداد فراہم کرنے پر ترکمانستان کی حکومت کا شکریہ ادا کیا ہے۔طالبان نے بالا مرغاب پر قبضے کے لیے دو ہفتے قبل حملہ کیا تھا جس کے بعد سے جنگجووں اور سرکاری فوج کے درمیان علاقے میں جھڑپیں جاری تھیں۔جھڑپوں میں اطلاعات کے مطابق اب تک سرکاری فوج کے درجنوں اہلکار ہلاک ہوچکے ہیں جب کہ طالبان نے لگ بھگ 200 کو یرغمال بنا لیا ہے۔لیکن افغان حکام نے اب تک صرف 58 اہلکاروں کو یرغمال بنائے جانے کی تصدیق کی ہے۔علاقے سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق ضلعے کے کئی اہم علاقے اور چوکیاں طالبان کے قبضے میں جا چکی ہیں۔ لیکن حکومت کا کہنا ہے کہ ضلعے کے مرکزی شہر پر تاحال افغان فورسز کا کنٹرول ہے۔

طالبان نے اتوار کو سوشل میڈیا پر سکیورٹی فورسز کے 72 مبینہ اہلکاروں کی تصاویر جاری کی تھیں جنہوں نے طالبان کے دعوے کے مطابق بالا مرغاب میں لڑائی کے دوران ہتھیار ڈال دیے تھے۔طالبان کا دعویٰ ہے کہ صوبہ بادغیس کے چھ میں سے بیشتر اضلاع یا تو مکمل طور پر ان کے کنٹرول میں ہیں یا وہ وہاں پوری طرح سرگرم ہیں۔ لیکن طالبان کے ان دعووں کی آزاد ذرائع سے تصدیق ممکن نہیں۔طالبان کے تازہ حملے ایسے وقت ہو رہے ہیں جب طالبان اور امریکہ کے نمائندوں نے حال ہی میں قطر میں کئی ہفتوں تک جاری رہنے والے مذاکرات کے بعد افغان جنگ کے خاتمے پر اتفاقِ رائے ہونے کا اعلان کیا تھا۔

ایک نظر اس پر بھی

تیونس میں النھضہ پرمشتمل مخلوط حکومت کا قیام

عرب ملک تیونس میں نامزد وزیراعظم الیاس الفخفاح مسلسل ایک ماہ تک مختلف سیاسی جماعتوں کے ساتھ مشاورت اور مذاکرات کے بعد حکومت کی تشکیل میں کامیاب ہوگئے ہیں۔ تیونس کی نئی حکومت میں مذہبی سیاسی جماعت 'تحریک النہضہ' کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

شہریت قوانین میں تبدیلی کے بعد شہریت ختم ہونے کے خطرے پر روک ضروری: اقوام متحدہ سربراہ

ہندوستان کے شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) اور مجوزہ قومی شہری رجسٹر (این آرسی) پر خدشات کے درمیان اقوام متحدہ سربراہ ایتونیو گتاریس نے کہا کہ جب کسی شہریت قانون میں تبدیلی ہوتی ہے تو کسی کی شہریت نہ جائے، اس کے لئے سب کچھ کرنا ضروری ہے-

فوری جنگ بندی ہی شام کو مکمل تباہی سے بچا سکتی ہے: اقوام متحدہ

جنگ اور خانہ جنگی کے نتیجے میں بدترین تباہی کے دہانے سے گزرتے شام کو اب صرف فوری جنگ بندی ہی دنیا کے نقشے سے مٹنے سے بچا سکتی ہے جہاں ابتک کوئی نو لاکھ لوگ بے گھر ہو چکے ہیں۔ ان خانما برباد لوگوں میں اکثریت خواتین و بچوں کی ہے، جن کی حالت غیر بتائی جاتی ہے۔