چین کی انتقامی کارروائی،امریکی شہریوں پر ویزا سے متعلق پابندی عائد کرے گا چین

Source: S.O. News Service | Published on 9th July 2020, 12:28 PM | عالمی خبریں |

بیجنگ،9؍جولائی (ایس او نیوز؍ایجنسی) چین نے ہانگ کانگ سے وابستہ امور پر کھل کر اپنے خیالات کااظہار کرنے والے امریکی شہریوں پر ویزا سے متعلق پابندی عائد کرنے کا اعلان کیا ہے،چین کے اس اقدام کو امریکہ کے خلاف انتقامی کارروائی کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کل صحافیوں کو یہ جانکاری دی۔ترجمان نے کہا،’’امریکہ نام نہاد پابندی نافذ کر کے چین کے خاص انتظامی علاقہ ہانگ کانگ میں قومی سلامتی قانون کے نفاذ میں رکاوٹ پیدا کررہا ہے۔لیکن وہ کبھی کامیاب نہیں ہوگا۔اس کے جواب میں چین نے ہانگ کانگ سے وابستہ امور پر واضح طور پر اپنے بنیاد پرست خیالات رکھنے والے امریکی شہریوں پر ویزا سے متعلق پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

سیاسی مبصرین کے مطابق چین کا یہ قدم امریکہ کی جانب سے 2018 کے تبت ایکٹ کے تحت چین کی حکومت اور چینی کمیونسٹ پارٹی کے حکام پر ویزا سے متعلق پابندیاں نافذ کرنے کے جواب کے طور پر دیکھا جارہا ہے۔

امریکہ نے ایک ہفتہ قبل ہانگ کانگ کودفائی آلات اورحساس ٹکنالوجی کی برآمد پر روک لگانے کا اعلان کیا تھا۔

قابل ذکر ہے کہ چین نے ہانگ کانگ میں متنازعہ قومی سلامتی قانون نافذ کردیا ہے۔ دنیا بھر کے تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ اس قانون سے ہانگ کانگ کی خودمختاری اور شہری حقوق کو شدید خطرہ لاحق ہوگا۔ ہانگ کانگ کے علاوہ ، امریکہ اوریورپی ممالک میں اس قانون کے خلاف مسلسل مظاہرے ہو رہے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

ایران کے ساتھ مذاکرات میں خلیجی ممالک اور اسرائیل کو شامل کیا جائے گا: بلنکن

امریکا کے نو منتخب صدر جوبائیڈن کے نامزد وزیرخارجہ انتھونی بلنکن نے کہا کہ بائیڈن انتظامیہ ایران کو جوہری ہتھیار حاصل کرنے سے روکے گی۔ان کا کہنا ہے کہ ایران کے ساتھ کسی بھی نوعیت کے جوہری مذاکرات میں خلیجی ریاستوں اور اسرائیل کو شامل کیا جائے گا۔

حکومت مخالف ایرانی مذہبی عالم کا اسرائیل سے مصالحت کا مشورہ

ایران کے ایک سرکردہ مذہبی رہ نما اور حکومت پر سخت تنقید میں شہرت رکھنے والے آیت اللہ عبدالحمید معصومی تہرانی نے کہا ہے کہ اسرائیل کے ساتھ دشمنی رکھنا عقل اور منطق کے خلاف ہے۔ انہوں نے ایرانی حکومت سے زور دیا ہے کہ وہ اسرائیل کے ساتھ صلح کرے جیسا کہ بعض عرب ممالک نے کی ہے۔

جوہری معاہدے کے حوالے سے بائیڈن کی ٹیم اور ایران کے درمیان خفیہ بات چیت

منتخب امریکی صدر جو بائیڈن کی انتظامیہ کے ذمے داران نے جوہری معاہدے میں واپسی کے حوالے سے ایران کے ساتھ خاموشی سے بات چیت کا آغاز کر دیا ہے۔ تہران اور عالمی طاقتوں کے درمیان یہ سمجھوتا جولائی 2015ء میں طے پایا تھا۔ اسرائیلی نیوز نیٹ ورک "چینل 12" اور اسرائیلی اخبار "د ٹائمز آف ...