صنعاء میں جھڑپیں،علی صالح کے بھتیجے کے تین محافظ ہلاک

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 1st December 2017, 8:31 PM | عالمی خبریں |

صنعاء یکم دسمبر (ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) یمن میں مں حرف سابق صدرعلی عبداللہ صالح کی جماعت ’پیپلز کانگریس‘ کا کہنا ہے کہ ایران نواز حوثی باغیوں اور علی صالح کے وفاداروں کے درمیان لڑائی جاری ہے۔ بدھ کے روز ہونے والی جھڑپوں کا سلسلہ کل جمعرات کے روز بھی جاری رہا۔ جھڑپوں میں علی صالح کے بھتیجے کے تین محافظوں سمیت متعدد افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ صنعاء میں ہونے والی لڑائی میں سابق صدر علی صالح کے بھتیجے کرنل طارق صالح کے تین ذاتی محافظ ہلاک ہوگئے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ حوثی باغیوں نے پیپلز کانگریس کے رہ نما اور باغیوں کی قائم کردہ حکومت کے وزیر خارجہ ھشام شرف کے گھر کا بھی محاصرہ کیا۔ حوثیوں کے حملوں میں علی صالح کے تین وفادار زخمی بھی ہوئے ہیں۔ ذرائع کے مطابق صنعاء میں علی صالح اور حوثیوں کے درمیان ہونے والی جھڑپوں میں دونوں متحارب گروپوں کا جانی نقصان ہوا ہے۔ حوثی باغیوں کا کہنا ہے کہ جھڑپوں میں دو حوثی لیڈر حمزہ یحییٰ المختار اور علی کریم ہلاک اور 10 زخمی ہو گئے۔دارالحکومت صنعاء اور اس کے مضافاتی علاقوں میں ہونے والی جھڑپوں میں دسیوں باغی ہلاک ہوئے ہیں۔

خیال رہے کہ آئینی حکومت کا تختہ الٹنے میں متحد سابق مں حرف صدر علی صالح اور ایران نواز حوثیوں کے درمیان بدھ کے روز جھڑپیں شروع ہوئی تھیں۔ دونوں فریقیوں نے ایک دوسرے پر لڑائی شروع کرنے اور حکومت مخالف اتحاد کو سبوتاڑ کرنے کا الزام عاید کر رہے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

تبدیلی کی صورت میں سعودی عرب سے بہتر تعلقات ممکن:حسن روحانی

ایران کے صدر حسن روحانی کا کہنا ہے کہ سعودی عرب کے ساتھ تعلقات استوار کیے جا سکتے ہیں۔ ایرانی صدر نے آج نشر کی جانے والی اپنی تقریر میں کہا کہ اگر یمن پر بمباری کا سلسلہ ترک کرنے کے ساتھ ساتھ اسرائیل کے ساتھ اپنے مبینہ تعلقات کو ختم کر دے،