ٹیپو سلطان جینتی: بی جے پی کی دھمکی کے بعد کرناٹک کے کئی شہروں میں دفعہ 144 نافذ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th November 2018, 12:44 PM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بنگلورو،10؍نومبر (ایس او نیوز؍ایجنسی ) کرناٹک میں ٹیپو سلطان کی جینتی منانے کو لے کر ہنگامہ جاری ہے۔ کرناٹک حکومت 2016 سے  ٹیپو سلطان کی جینتی منا رہی ہے۔ جبکہ بی جے پی نے اس پروگرام کو روکنے کی دھمکی دی ہے، جس کے بعد ہبلی، دھارواڑ اور شموگا سمیت کرناٹک کے کئی شہروں میں دفعہ 144 نافذ کر دیا گیا ہے۔ اس بار جینتی پر کئی پروگرام منعقد کرنے کا منصوبہ ہے۔ ہر سال کی طرح اس سال بھی ٹیپو جینتی پر سیاسی ماحول گرم ہو گیا ہے۔

دفعہ 144 نافذ ہونے سے ایک دن پہلے بی جے پی نے جے ڈی ایس اور کانگریس حکومت سے جشن نہ منانے کی اپیل کی تھی۔ ساتھ ہی بنگلورو، میسور اور کوڈاگو سمیت متعدد مقامات پر احتجاجی مظاہرہ بھی کیا گیا تھا۔ 10 اور 11 نومبر کو صبح چھ بجے اور سات بجے سے ان دونوں شہروں میں کرفیو لگا دیا جائے گا۔ اس دوران ایک ہی جگہ پر چار سے زیادہ لوگ اکھٹا نہیں ہو سکتے۔

اس معاملہ پر اتحادی حکومت کے وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمارسوامی نے کہا کہ پچھلی کانگریس حکومت کی پالیسی کو جاری رکھنے کے لئے 10 نومبر کو ٹیپو سلطان کی جینتی منائی جائے گی۔ ان کے اس بیان کے بعد بی جے پی نے پروگرام کی مخالفت کرنے کا اعلان کیا ہے۔ تاہم، ابھی یہ طے نہیں ہے کہ کمارسوامی اہم تقریب میں شرکت کریں گے یا نہیں یا سوامی کون سے پروگرام کا افتتاح کریں گے۔

حالانکہ ڈاکٹروں کے مشورہ کی بنیاد پر وزیر اعلی دفتر سے کہا گیا ہے کہ وہ کسی بھی سرکاری تقریب میں شرکت نہیں کر سکیں گے۔ گوڑا کنبہ کے ذرائع نے نیوز 18 کو بتایا کہ ان کا کنبہ ٹیپو سلطان کی جینتی منانے کو اپنی بدقسمتی سے تعبیر کرتا ہے۔ کیونکہ کئی لوگ ٹیپو سلطان کو "آمر حکمراں" مانتے ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

محمد محس کی معطلی کا معاملہ طول پکڑ گیا، الیکشن کمیشن کے سکریٹری کے خلاف شہر میں مجرمانہ شکایت درج

وزیراعظم مودی کے ہیلی کاپٹر کی تلاشی کو لے کر اپنی فرض شناسی کا ثبوت پیش کرنے والے کرناٹک کیڈر کے آئی اے ایس افسر محمد محسن کی غیر ضروری معطلی نے خود الیکشن کمیشن کوگھیرے میں لے لیاہے ۔ محمد محسن پر ہوئی زیادتی کے خلاف آواز اٹھاتے ہوئے بنگلور جنادھیکار سنگھرش پریشد نے الیکشن ...

بھٹکل میں بی کے ہری پرساد کا بی جے پی اور مودی پر راست حملہ، کہا؛ پسماندہ طبقات کومزید کمزور کرنے کی سازش رچی جارہی ہے

بی جے پی بھلے ہی اپنے آپ کو اقلیت مخالف پارٹی کے طور پر پیش کرتی ہو، مگر  دیکھا جائے تو یہ پارٹی حقیقتاً پسماندہ طبقات، دلت اور ادیواسیوں کو  مزید  کمزور کرنے کی سازش میں لگی ہوئی ہے اور صرف ایک طبقہ کو برسراقتدار پر لانے میں کوشاں ہے۔ یہ بات  آل انڈیا کانگریس کمیٹی (اے آئی ...

پارلیمینٹ گلبرگہ کے مسلمانوں سے کھڑگے کے حق میں قیمتی ووٹ دینے ڈاکٹر اصغر چلبل کی اپیل 

ڈاکٹراصغرچلبل سابق صدر گلبرگہ اربن ڈیولوپمینٹ اتھارٹی نے ایک صحافتی بیان میں کہا ہے کہ ملک کے موجودہ پارلیمانی انتخابات نہایت اہمیت کے حامل ہیں ۔2019کے پارلیمانی انتخابات مسلمانوں کے لئے آر پار کی لڑائی کی طرح سمجھے جارہے ہیں ۔پچھلے پانچ سالوں میں بی جے پی سرکار میں دلتوں ، ...

سدارامیا کے دوبارہ وزیراعلیٰ بننے میں غلط کیا ہے؟ کس کے نصیب میں کیا لکھا ہے کوئی نہیں جانتا : کمار سوامی

سدارامیا کے دوبارہ وزیر اعلیٰ بننے میں غلط کیا ہے ؟ اس قسم کا چونکانے والا بیان ریاستی وزیر اعلیٰ کمار سوامی نے دیا ہے ۔ ضلع کے مدے بہال تعلقہ میں اخباری نمائندوں سے انہوں نے کہا کہ کس کے نصیب میں کیا لکھا ہے ، کسی کو معلوم نہیں ہے ۔

لوک سبھا انتخابات: اُترکنڑا ڈپٹی کمشنر نے کمٹہ اوربھٹکل میں پارلیمانی انتخابات کی تیاریوں کا لیا جائزہ

ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر ہریش کمار نے ضلع شمالی کینرا کے حلقے میں واقع کمٹہ اور بھٹکل شہروں میں پارلیمانی الیکشن کے لئے انتظامیہ کی طرف سے کی گئی حتمی تیاریوں کا معائنہ کیا۔

دو مراحل میں ایس پی۔بی ایس پی اور کانگریس ’ صفر‘: یوگی

اتر پردیش کے وزیر یوگی آدتیہ ناتھ نے جمعہ کو کہا کہ لوک سبھا انتخابات کے لئے ووٹنگ کے اختتام پذیر ہو چکے دو مراحل میں ایس پی، بی ایس پی اور کانگریس ’ صفر‘ رہی ہیں۔ یوگی نے سنبھل میں ایک جلسہ عام میں کہا کہ ووٹنگ کے دو مرحلے ہو چکے ہیں۔ بی جے پی کو سب سے زیادہ ووٹ ملے ہیں۔ انہوں نے ...

لوک سبھا انتخابات: کیا اُترکنڑا میں انکم ٹیکس کے مزید چھاپے پڑنے والے ہیں؟

پارلیمانی الیکشن کے پس منظر میں محکمہ انکم ٹیکس اور انتخابی نگراں اسکواڈ کی طرف سے مختلف ٹھکانوں پر جو چھاپے مارے جارہے ہیں، اس تعلق سے خبر ملی ہے کہ ضلع شمالی کینرا میں مزیدکئی سیاسی لیڈروں اورتاجروں کے ٹھکانوں پر چھاپے پڑنے والے ہیں۔