مہادائی ٹریبونل کے فیصلے کا چیلنج کرنے ریاستی حکومت تیار

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th August 2018, 12:32 AM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بنگلورو،16؍اگست(ایس او نیوز) ریاستی وزیر برائے آبی وسائل ڈی کے شیوکمار نے کہاکہ شمالی کرناٹک کے بعض اضلاع کو پینے کے پانی کی فراہمی کا واحد ذریعہ مہادائی کے پانی کی تقسیم کے سلسلے میں حال ہی میں ٹریبونل نے جو فیصلہ صادر کیا ہے ریاستی حکومت اس کا سپریم کورٹ میں چیلنج کرے گی۔

محکمۂ آبپاشی کے اعلیٰ افسروں سے میٹنگ کے دوران رائے ظاہر کی ہے کہ ٹریبونل نے کرناٹک کی طرف سے کی گئی اپیل کے مطابق ریاست کو پانی کی تقسیم یقینی نہیں بنائی ہے۔اسی لئے کرناٹک کو مطلوبہ پانی کی فراہمی یقینی بنانے کے لئے جلد ہی ریاستی حکومت سپریم کورٹ سے رجوع ہوگی اور ٹریبونل کے فیصلے کا چیلنج کرے گی۔ انہوں نے کہاکہ اس ٹریبونل میں ریاست کی طرف سے مہادائی مسئلے پر نمائندگی کرنے والے وکلاء فالی ایس نارمن اور ان کی ٹیم کے مشوروں پر طے کیا گیا ہے کہ کاویری مسئلے پر ٹریبونل کے فیصلے کا چیلنج کیا گیا انہیں خطوط پر مہادائی ٹریبونل کے فیصلے کا بھی چیلنج کیا جائے گا۔

کاویری معاملے میں کرناٹک کے علاوہ تملناڈو ، کیرلا اور پانڈیچری نے بھی ٹریبونل کے فیصلے کا چیلنج کیا تھا۔ اس پر سپریم کورٹ کی طرف سے فیصلہ ہونا باقی ہے۔ انہوں نے کہاکہ سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کی قیادت میں سہ رکنی بنچ اس معاملے کا جائزہ لینے میں مصروف ہے۔ انہوں نے کہاکہ مہادائی سے ریاست کو اور زیادہ پانی یقینی بنانے کے لئے قانونی جدوجہد آگے بڑھائی جائے گی۔ریاست کے وکیلوں نے کرناٹک کو یقین دلایا ہے کہ ٹریبونل کے فیصلے کا چیلنج کرتے ہوئے اگر عرضی داخل کی گئی تو کرناٹک کو کوئی نقصان نہیں ہوگا۔ یہ بھی فیصلہ کیا گیا ہے کہ مہادائی مسئلے پر ٹریبونل کے قطعی فیصلے پر ریاستی حکومت کا موقف وضع کرنے کے لئے جلد ہی ایک کل جماعتی میٹنگ وزیر اعلیٰ کی طرف سے طلب کی جائے، میٹنگ میں نہ صرف سیاسی جماعتوں کے لیڈر بلکہ رعیت تنظیموں کے لیڈروں کو بھی مدعو کیا جائے ۔ میٹنگ میں یہ رائے ظاہر کی گئی کہ کرناٹک نے ٹریبونل کے سامنے پینے کے پانی کی فراہمی کے لئے 14.98ٹی ایم سی کا تقاضہ کیاتھا ،اس پانی سے ہبلی ، دھارواڑ اور آس پاس کے اضلاع کو پانی کی فراہمی کی جائے گی۔ اس کے لئے مجموعی ضرورت 7.56 ٹی ایم سی فیٹ کی ہے، جبکہ صرف 5.5 ٹی ایم سی پانی فراہم کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ٹریبونل نے مانگ کے بغیر گوا کو113 سے زائد ٹی ایم سی فیٹ پانی فراہم کیا ہے جو سمندر میں بہہ کر ضائع ہوجاتا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

 کرناٹک میں عوا م کے مینڈیٹ کا مذاق اڑانے والی بی جے پی، کانگریس اور جے ڈی ایس کو عوام سبق سکھائیں: الیاس محمد  تمبے

سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (SDPI)کے ریاستی صدر الیاس محمد تمبے نے اپنے جاری کردہ اخباری اعلامیہ میں کرناٹک میں ہورہے شرمناک سیاست کی سخت مذمت کرتے ہوئے کہاہے کہ جے ڈی ایس۔ کانگریس کی مخلوط حکومت اپنی حکومت بچانے کی کوشش کررہی ہے

مخلوط حکومت کوبچانے کی کوششوں کو زبردست جھٹکا؛ لاکھ منانے کے بعد بھی ایم ٹی بی ناگراج ممبئی روانہ،رام لنگاریڈی استعفے کے فیصلے پر قائم،باغی اراکین بھی بضد

کرناٹک کے سیاسی ناٹک میں ہر دن ایک نیا سین سامنے آرہا ہے گذشتہ روزجہاں اسمبلی سے استعفیٰ دینے والے وزیر ایم ٹی بی ناگراج کو منانے کی کوشش دن بھر جاری تھی اور رات میں انہوں نے سابق وزیر اعلیٰ سدارامیا کی وفاداری کی قسمیں کھائی تھیں آج صبح انہوں نے ان ساری قسموں کو فراموش کر کے ...

کرناٹک معاملہ: جے پی نڈا نے کہا، بی جے پی پر خرید فروخت کا الزام بے بنیاد

کرناٹک میں حکمران اتحاد کے ممبران اسمبلی کی خریدو فروخت کر کے ریاست کی حکومت کو غیر مستحکم کرنے کے کانگریس جد(ایس) کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے بھارتیہ جنتا پارٹی کے ایگزیکٹو چیئرمین جگت پرکاش نڈا نے اتوار کو کہا کہ یہ کانگریس کا اندرونی مسئلہ ہے جو راہل گاندھی کے استعفے سے ...

کنّور ایئر پورٹ پر 7لاکھ روپے مالیت کی چرس کے ساتھ مسافر گرفتار

کنّور ایئر پورٹ پر سنٹرل انڈسٹریل سیکیوریٹی فورس(سی آئی ایس ایف) کے افسران نے نشے کے لئے استعمال ہونے چرس کے ساتھ دوحہ قطر کے سفر پر روانہ ہونے کی کوشش کرنے والے ایک مسافر کو گرفتار کرلیا ہے اور اس کے قبضے 7لاکھ روپے مالیت کی چرس بر آمد کرلی ہے۔

ورلڈ کپ کرکٹ ٹورنامنٹ کا فائنل بے حد دلچسپ؛ ٹائی ہونے کے بعد سوپر اوور میں بھی اسکور برابر؛ باونڈریس زائد ہونے پر انگلینڈ پہلی مرتبہ بنا ورلڈ چیمپئن

لندن کے لارڈس میدان میں منعقد ورلڈ کپ 2019 کرکٹ ٹورنامنٹ کا فائنل میچ ڈرامائی انداز میں ٹائی ہونے کے بعد  انگلینڈ  نے سوپر اوور کے بعد نیوزی لینڈ کو سنسنی خیز مقابلے   میں شکست دے دی اور پہلی بار عالمی کپ جیتنے میں کامیاب ہوگئی۔ فائنل مقابلہ اتنا دلچسپ اور کانٹے کا رہا کہ  ...