کانکنی کے معاملہ میں دفتر وزیر اعلیٰ سے ہی دھاندلی: کمار سوامی

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 14th January 2018, 12:46 PM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بنگلورو،13؍ جنوری(ایس اونیوز؍عبدالحلیم منصور) سابق وزیراعلیٰ اور ریاستی جنتادل (ایس) صدر نے الزام لگایا ہے کہ دفتر وزیراعلیٰ سے ہی غیر قانونی کانکنی کے دھندہ کو بڑھاوا مل رہا ہے 2014-15کے دوران 2062کروڑ روپیوں کی ہیرا پھیری کرکے غیر قانونی کانکنی کی گئی ہے۔ آج ایک اخباری کانفرنس سے مخاطب ہوکر کمار سوامی نے کہاکہ وزیر برائے سائنس واراضیات کا قلمدان برائے نام ہے۔ وہ صرف لنگایت طبقے کی سیاست میں الجھے ہوئے ہیں جبکہ بلاری ضلع کے سنڈور تعلقہ کے قریب سبینا ہلی علاقہ میں میسور منرل کمپنی کو کانکنی کے اختیارات کا کنٹراکٹ دیا گیا ہے۔اس کمپنی نے مچنڈی انٹرپرائزز کے ساتھ غیر قانونی معاہدہ کرکے تین سرکاری کمپنیوں کو کانکنی کے ٹھکوں سے محروم کردیا ہے۔اس علاقہ میں 30لاکھ میٹرک ٹن لوہے کے پیداوار کی گنجائش ہے۔ جولائی 2015کے دوران یہاں 1.05لاکھ میٹرک ٹن لوہے کی نکاسی کی گئی ، لیکن اس میں سے 52920 ٹن لوٹے کا کوئی حساب کتاب نہیں ملا ۔ ٹنڈر معاہدہ ہونے سے پہلے ہی مچنڈی کمپنی نے کانکنی شروع کردی۔ ایک ماہ قبل سرکاری محکمۂ کانکنی نے اس دھاندلی کو بے نقاب کیا۔ اعلیٰ افسران کی طرف سے اس معاملہ کی جانچ کیلئے اگر کوئی پہل کی جاتی ہے تو ان کا تبادلہ کردیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جس وقت یڈیورپا سے تب رشوت کی رقم چیک سے لی جاتی، اب سدرامیا نے اور بھی نئے نئے طریقے ڈھونڈ نکال لئے ہیں۔ یہ دعویٰ کرتے ہوئے کہاکہ انہوں نے کبھی کسی بھی پراجکٹ کی منظوری کیلئے رشوت کا تقاضہ نہیں کیا ہے،کمار سوامی نے کہاکہ ان پر اگر کوئی الزام ہے تو عدالت میں ثابت کرکے دکھایا جائے۔ 
 

ایک نظر اس پر بھی

انتخابات کے پیش نظر پارٹی لیڈروں کے باہمی تبادلہ خیالات کاسلسلہ سی ایم ابراہیم کی جے ڈی ایس سربراہ دیوے گوڈا سے ملاقات

ریاستی اسمبلی انتخابات جیسے جیسے قریب آنے لگے ہیں ، سیاسی قائدین سے ملاقاتیں اور ان سے تبادلہ خیالات کا سلسلہ شروع ہوجاتا ہے جوکافی اہم اور دلچسپ ہوا کرتا ہے ۔

کانگریس نے لوک سبھا میں بھی طلاق ثلاثہ بل کی مخالفت کی تھی کرناٹک وقف بورڈ کے انتخابات میں تاخیر افسوسناک :ڈاکٹر کے رحمٰن خان

لوک سبھا میں طلاق ثلاثہ بل کے خلاف کانگریس نے کوئی آواز نہیں اٹھائی یہ ایک غلط خبر ہے اور بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی پیداوار ہے جس کو اسی کی ایماء پر میڈیا نے پھیلایاہے۔

اگلا وزیراعلیٰ بنانے ہائی کمان کے اعلان سے سدارامیاکا حوصلہ بلند راہل گاندھی کے بیان سے وزیراعلیٰ کی کرسی پر نظر رکھے لیڈروں کو مایوسی۔ بغاوت کے آثار

ریاست کرناٹک میں ہونے و الے اگلے اسمبلی انتخابات میں کانگریس پارٹی اگر اکثریت حاصل کرکے دوبارہ اقتدار حاصل کرلے گی تو سدارامیا ہی اگلے وزیراعلیٰ ہوں گے ۔

مودی ، یوگی اور ونود سب نے کرناٹک کی توہین کی ،گالی گلوچ بی جے پی کا مزاج ؛گوا کے وزیر آبپاشی ونود پالیکر نے کیا کنڑیگا س کو ذلیل

منہ پھٹ بی جے پی لیڈرز ہر دن کوئی نہ کوئی متنازعہ اور اشتعال انگیز بیان دیتے ہوئے عوامی غیض وغضب کا شکار ہورہے ہیں، بیلگاوی ضلع کے خانہ پور تعلقہ میں چل رہے کلسا نالا تعمیراتی کاموں کا معائنہ کرنے کے بعد گوا کے وزیر برائے آبپاشی ونود پالیکر نے کرناٹک کے باشندوں کو حرامی کہہ ...

اُترکنڑا کے سُودّی ٹی وی نیوز چینل کے رپورٹرکی بائک درخت سے ٹکراگئی؛ رپورٹر کی موقع پر موت

سرسی سے ہانگل جانے کے دوران ایک کنڑا نیوز چینل کے رپورٹر کی بائک تیز رفتاری کے ساتھ  ایک درخت سے ٹکرانے کے نتیجے میں موقع پر ہی اُس کی موت واقع ہوگئی۔ یہ حادثہ اتوار کو ضلع ہاویری کے ہانگل کے قریب گُنڈورو نامی دیہات میں علی الصباح پیش آیا۔

دستور کو تبدیل کرنے والی بات کہنے والے آننت کمار ہیگڈے کے حلقہ میں ہی پہنچ کر گرجے فلم ایکٹر پرکاش رائے؛ کہا ہماری خاموشی ہمیں مار ڈالے گی

’بھائی چارگی کے ساتھ جینا‘ اور ’ہمارا دستور ہمارا فخر ‘کے موضوع پر سرسی کے راگھویندرا مٹھ میں منعقدہ ریاستی اجلاس کا افتتاح کرتے ہوئے معروف دانشور اداکار پرکاش رائے نے کہا کہ اس وقت دیش کو ایک بہت بڑی بیماری لگ گئی ہے۔

سرسی میں پرکاش رائے کے خطاب کردہ اسٹیج کوبی جے پی نے گائے کے پیشاب سے کیاپاک !

’ہمارا دستور ہمارا فخر‘کے موضوع پر اداکار دانشور پرکاش رائے نے سرسی میں جس اسٹیج سے خطاب کیا تھااس مقام کو اور راگھویندرامٹھ کلیان منٹپ کے احاطے کو بی جے پی کارکنان نے گائے کے پیشاب سے پاک کرنے کی کارروائی انجام دی۔

بھٹکل سرکاری اسپتال میں ایک بھی ڈاکٹر ڈیوٹی پر موجود نہ ہونے پر عوام اور مریض سخت برہم؛ احتجاج کی دھمکی کے بعددوسرے اسپتال کا ڈاکٹر پہنچا اسپتال

آج صبح سے بھٹکل سرکاری اسپتال میں ایک بھی ڈاکٹر موجود نہ ہونے کو لے کر مقامی عوام جو مریضوں کو لے کر اسپتال پہنچے تھے، سخت برہم ہوگئے اور اسپتال پر موجود نرس سمیت دیگر اسٹاف پر اپنا غصہ اُتارنے کی کوشش کی۔ اس موقع پر ڈیوٹی پر موجود نرس کو عوام نے آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے  دس منٹ ...