دیرالزور میں اتحادی طیاروں کی بمباری سے 23 شہری جاں بحق

Source: S.O. News Service | By Sheikh Zabih | Published on 16th May 2017, 6:49 PM | عالمی خبریں |

دمشق،16مئی(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)شام کے شہر دیر الزور میں ‘داعش‘ کے زیر تسلط علاقے البوکمال پر گذشتہ روز امریکی قیادت میں قائم عالمی اتحاد کے جنگی طیاروں کی بمباری کے نتیجے میں کم سے کم 23 عام شہری جاں بحق ہوگئے۔شام میں انسانی حقوق پر نظر رکھنے والی بین الاقوامی رصدگاہ برائے انسانی حقوق کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ اتحادی طیاروں کی بمباری سے تئیس عام شہری مارے گئے ہیں جن میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔آبزرویٹری کے مطابق اتحادی طیاروں نے شام کے مشرق میں عراق کی سرحد کے قریب البوکمال شہر میں متعدد اہداف کو نشانہ بنایا۔انسانی حقوق گروپ کے ڈائریکٹر رامی عبدالرحمان نے بتایا کہ دیر الزور گورنری کے البوکمال شہر میں امریکا کی قیادت میں بین الاقوامی اتحاد کے طیاروں نے بمباری کی جس کے نتیجے میں 23 عام شہریوں کی ہلاکت کی تصدیق ہوئی ہے جب کہ دسیوں افراد زخمی ہوئے ہیں۔ بمباری میں مرنے والے 15 شامی پناہ گزین بھی شامل ہیں جو دیر الزور اور الرقہ سے داعش کے چنگل سے جان بچا کر محفوظ مقامات کی طرف جانے کی کوشش کررہے تھے۔
مقامی ذرائع کے مطابق اتحادی طیاروں نے سوموار کو مقامی وقت کے مطابق صبح تین بجے شہری آبادی پر بمباری کی۔ اس وقت شہری سو رہے تھے۔ بمباری سے بڑی تعداد میں شہری زخمی ہوئے ہیں۔ اس لیے ہلاکتوں میں اضافے کا اندیشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔انسانی حقوق کی تنظیم کے مطابق داعش نے البوکمال کی متعد کالونیوں میں عمارتوں کو اپنے مراکز میں تبدیل کررکھا ہے۔مبصرین کا کہنا ہے کہ داعش عالمی اتحادی طیاروں کی بمباری سے بچنے کے لیے اپنے مراکز گنجان آباد مقامات پر منتقل کررہی ہے تاکہ آبادی کو ڈھال کے طور پراستعمال کیا جا سکے۔ادھر مشرقی الرقہ میں داعش کے زیرتسلط علاقے میں اتحادی طیاروں کے ایک دوسرے فضائی حملے میں 12 خواتین کی ہلاکت کی تصدیق کی گئی ہے۔انسانی حقوق آبزرویٹری کے ڈائریکٹر رامی عبدالرحمان کے مطابق اتحادی طیاروں نے اتوار کو کھیتوں میں کام کرنے والی خواتین کی ایک گاڑی کو نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں بارہ خواتین ورکر جاں بحق ہوگئیں۔خیال رہے کہ دیر الزور گورنری پر داعش نے سنہ 2014ء میں قبضہ کیا تھا۔ یہ گورنری تیل کی دولت سے مالا مال ہے۔ الرقہ میں داعش کے خلاف فوجی آپریشن کا آغاز گذشتہ برس نومبر میں ’سیرین ڈیموکریٹک فورسز‘ نے کیا تھا۔ اس گروپ کو امریکا اور مغربی ملکوں کی حمایت حاصل ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

انجلینا جولی کی عید پرعراق کے شہر موصل کے پناہ گزینوں سے ملاقات

اقوام متحدہ کی پناہ گزین کی خصوصی ایلچی انجلینا جولی نے عراق میں دہشت گردی سے سب سے متاثرہ علاقے موصل کا دورہ کیا اور عالمی برادری سے تباہ حال شہر کے بے گھر رہائشیوں کی دوبارہ اپنے گھروں میں آبادکاری کے لیے مدد کی اپیل کی ہے۔

ننگر ہار: طالبان پر خودکش حملے میں ہلاکتوں کی تعداد 36 ہو گئی

صوبہ ننگرہار میں کے محکمہ صحت کے ڈائریکٹر نجیب اللہ کماوال کے حوالے سے کہا ہے کہ ہفتہ کو ہونے والے اس حملے میں 65 افراد زخمی بھی ہوئے۔افغان حکام نے کہا ہے کہ جنگ بندی کے دوران مشرقی صوبہ ننگرہار میں افغان جنگجوؤں کے ایک اجتماع پر خودکش حملے میں ہلاکتوں کی تعداد 36 ہو گئی ہے۔

جاپان میں.1 6 شدت کا زلزلہ، تین افراد ہلاک

اوساکا اور اس کے گرد و نواح کا شمار جاپان کے اہم ترین صنعتی مراکز میں ہوتا ہے اور زلزلے کے بعد علاقے میں واقع بیشتر کارخانوں میں کام بند کردیا گیا ہے۔جاپان کے دوسرے بڑے شہر اوساکا میں آنے والے 6.1شدت کے زلزلے سے اب تک تین افراد کے ہلاک ہونے کی تصدیق ہوگئی ہے۔

نیو جرسی: آرٹ فیسٹول میں فائرنگ، حملہ آور ہلاک

امریکہ کی ریاست نیو جرسی میں ایک آرٹ فیسٹول کے دوران فائرنگ سے 22 افراد زخمی ہوگئے ہیں جب کہ ایک مبینہ حملہ آور مارا گیا ہے۔حکام کے مطابق واقعہ اتوار کو نیوجرسی کے شہر ٹرینٹن میں پیش آیا جہاں رات بھر جاری رہنے والے آرٹ فیسٹول کے دوران دو متحارب گروہ آپس میں لڑ پڑے۔

افغان طالبان کا جنگ بندی میں توسیع سے انکار

افغان طالبان نے کہا ہے کہ افغان سکیورٹی فورسز سے تین روزہ جنگ بندی کے خاتمے کے بعد اس میں مزید توسیع نہیں کی جائے گی۔فرانسیسی خبر رساں ادارے ’اے ایف پی‘ نے طالبان کے ترجمان ذبیع اللہ مجاہد کے حوالے سے کہا ہے کہ جنگ بندی 17 جون کی رات ختم ہو رہی ہے جس کے بعد طالبان کی کارروائیاں ...

ترک فوج کی عراق میں بمباری، 35 کرد جنگجو ہلاک

ترکی کی مسلح فوج نے ایک بیان میں دعویٰ کیا ہے کہ عراق کے شمالی علاقے جبل قندیل میں کرد علاحدگی پسند گروپ کردستان ورکرز پارٹی "PKK" کے ٹھکانوں پر بمباری کے نتیجے میں کم سے کم 35 کرد باغی ہلاک ہو گئے ہیں۔