جے ڈی ایس کو حمایت دینے کے لئے کانگریس نے گورنر کو سونپاخط، سدارمیا نے دیا استعفیٰ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 15th May 2018, 11:23 PM | ریاستی خبریں | ان خبروں کو پڑھنا مت بھولئے |

بنگلورو،15؍مئی(ایس او نیوز؍ایجنیسی)کرناٹک اسمبلی انتخابات کے نتائج کے اعلان کے بعد جنتا دل (سیکولر) کو کانگریس کی حمایت کے اعلان کے بعد کانگریس کے وفد نے جے ڈی ایس کو حمایت دینے کے لئے گورنر کو خط سونپ دیاہے۔ وہیں بی جے پی نے بھی جے ڈی ایس سے رابطہ کیا ہے۔

دوسری طرف کانگریس نے جے ڈی ایس کو بلاشرط حمایت دینے کے لئے گورنر کو خط سونپ دیا ہے۔ وزیراعلیٰ سدارمیا نے زبردست شکست کے بعد گورنر کو اپنا استعفیٰ دے دیا ہے۔  کانگریس کے وفد نے ابھی کچھ دیر قبل گورنر سےملاقات کرکے اپنی حمایت کا خط سونپا ہے، لیکن اب دیکھنا یہ ہے کہ گورنر کیا جے ڈی ایس کو حکومت بنانے کے لئے مدعو کریں گے۔

واضح رہے کہ کرناٹک میں  سدارمیا کی قیادت میں کانگریس نے  الیکشن لڑا، لیکن مسلسل مکمل اکثریت کا دعویٰ کرنے کے بعد کانگریس اقتدار سے بہت دور ہوگئی ہے۔ کرناٹک میں بی جے پی سب سے بڑی پارٹی بن گئی ہے۔ بی جے پی کو 104 سیٹیں ملی ہیں جبکہ کانگریس کو 77 اور جے ڈی ایس کو 37 سیٹیں ملی ہیں جبکہ کانگریس اور جے ڈی ایس دونوں ایک ایک سیٹ پر آگے چل رہی ہیں۔ بی ایس پی کو ایک سیٹ ملی ہے جبکہ ایک آزاد امیدوار کو بھی کامیابی ملی ہے۔

کانگریس کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد، اور اشوک گہلوت بنگلور میں موجود ہیں۔ غلام نبی آزاد کے مطابق سابق وزیراعظم ایچ ڈی دیوگوڑا اور کرناٹک کے ریاستی صدر کمار سوامی سے مثبت بات ہوگئی ہے اور کانگریس کی حمایت سے جے ڈی ایس حکومت بنائے گی۔

دوسری جانب بی جے پی کے وزیراعلیٰ عہدہ کے امیدوار بی ایس یدی یورپا نے کانگریس پر سخت تنقید کرتے ہوئے کہا کہ کرناٹک کی عوام نے کانگریس کو مسترد کردیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ کانگریس کو اخلاقی طور پر حکومت سازی کا کوئی حق نہیں ہے، لیکن اگر اس کے باوجود بھی کانگریس اس معاملے میں پیش رفت کرتی ہے تو یہ انتہائی غیر اخلاقی عمل ہوگا۔

یدی یورپا نے کہاکہ وزیراعلیٰ سدارمیا کو بھی لوگوں نے ناپسند کیا، اسی وجہ سے ان کو اپنی سیٹ سے شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ لیکن اب کانگریس غیر اخلاقی عمل کرتے ہوئے حکومت میں شامل ہونے کی کوشش کررہی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

بنگلور کے ترقیاتی منصوبوں کو متعینہ وقت میں مکمل کیا جائے افسران کو وزیر اعلیٰ کی ہدایت

ریاستی وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی نے بلدی حکام کو یہ ہدایت دی ہے کہ بنگلور شہر کی ترقی کے لئے جاری کئے گئے منصوبوں اور تعمیراتی کاموں کو متعینہ وقت کے اندر مکمل کرنے کے ذریعہ عوام کو سہولت فراہم کی جائے۔

تحفظ اطفال کے معاملہ میں وزیر اعلیٰ کا کیلاش ستیارتھی سے تبادلہ خیال

ریاستی وزیر اعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی نے کہا ہے کہ بچوں کا تحفظ اور بچوں پر ہو رہے ظلم اور زیادتیوں کے معاملات نہایت ہی اہمیت کے حامل ہیں اور ریاستی حکومت بچوں کے تحفظ کے معاملہ کو زیادہ اہمیت دینے کے سلسلہ میں کار بند ہے۔

بورڈ اور کارپوریشن کے صدور ونائب صدور کی تقرراتی ٹال مٹول کاشکار کانگریس ۔جے ڈی ایس کی رسہ کشی جاری ، راہل گاندھی سے ملاقات کرکے حل نکالنے کافیصلہ

بورڈ اورکارپوریشن کے صدور و نائب صدورکے تقرراتی معاملہ میں مخلوط حکومت کی کانگریس اور جے ڈی ایس پارٹیوں کے درمیان رسہ کشی چل رہی ہے ،

ایک ہفتہ کے اندر تمام صفائی کرمچاریوں کی تنخواہ ادا ہوگی خودکشی کرنے والے سبرامنی کے کنبہ کو 10لاکھ کاچیک دینے کے بعد پرمیشور کا بیان

ریاستی نائب وزیراعلیٰ ڈاکٹر جی پرمیشور نے کہا کہ ایک ہفتہ کے اندر تمام صفائی کرمچاریوں کی تنخواہ کی رقم ادا کرنے کیلئے افسران کو ہدایت دی ہے۔

ائیر ہوسٹس انیشیا بترا کی موت : دو سال پہلے ہوئی تھی شادی ، اکثر ہوتی تھی شوہر سے لڑائی

ہلی کے حوض خاص علاقہ میں 39 سالہ ایئر ہوسٹس انیشیا بترا کی موت کے معاملہ میں اس کے بھائی کرن بترا نے اپنے بہنوئی مینک پر سنگین الزامات عائد کئے ہیں۔ اس نے کہا کہ مینک اس کی بہن کے ساتھ مار پیٹ کرتا تھا اور اس کا استحصال کرتا تھا۔ انیشیا کے فیس بک پیج کے مطابق دونوں کی شادی فروری 2016 ...

اترپردیش میں بیٹی پیدا ہونے پر ناراض شوہر نے بیوی کو دیا تین طلاق

یم کورٹ کے تین طلاق کو غیر قانونی قرار دینے کے باوجود تین طلاق کے معاملات رک نہیں رہے ہیں۔ تازہ ترین معاملہ اتر پردیش کے شاملی کا ہے جہاں ایک مسلم عورت کو اس کے شوہر نے صرف اس وجہ سے تین طلاق دے دی کیونکہ اس نے بیٹی کو جنم دیا تھا۔

میں خوش نہیں ’وش کنٹھ‘ بن کرپی رہا ہوں زہرہلاہل : کمار سوامی 

کرناٹک کے وزیر اعلی کمار سوامی کا کانگریس جے ڈی ایس اتحاد کی حکومت پر ایک بار پھر درد چھلکا ہے۔ وزیر اعلی کمارسوامی نے ایک بار پھر سے اتحاد کی حکومت کی مجبوریوں کو عوامی پلیٹ فارم سے سب کے سامنے رکھا اور اس دوران ان کے مجبوریوں کے آنسو بھی چھلکے۔ اب کرناٹک میں نئی حکومت کے قیام ...