یوپی میں ریپ-قتل کے واقعات پر پرینکا گاندھی نے گھیرا، آخر یوگی حکومت خواتین کے تحفظ کی ذمہ داری لینا کب شروع کرے گی؟

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 20th June 2019, 11:28 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،20/جون (ایس او نیوز/ آئی این ایس انڈیا) اتر پردیش میں قتل اور عصمت دری کے مختلف واقعات کا حوالہ دیتے ہوئے کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی واڈرا نے جمعرات کو الزام لگایا کہ ریاست میں معصوموں پر درندگی ہو رہی ہے اور لوگوں کو زندہ جلا دیا جا رہا ہے لیکن ’اقتدار کی راگ درباری آنکھیں‘کچھ نہیں دیکھ رہی ہیں۔انہوں نے یہ سوال بھی کیا کہ آخر یوگی آدتیہ ناتھ حکومت خواتین کے تحفظ کی ذمہ داری لینا کب شروع کرے گی؟ مشرقی اتر پردیش کی کانگریس انچارج پرینکا لے ٹویٹ کر کہاکہ اتر پردیش میں معصوموں پر درندگی کی جا رہی ہے۔عورتوں کو خوف کے ماحول میں ڈھکیلا جا رہا ہے۔مگر اقتدار کی راگ درباری آنکھیں کچھ نہیں دیکھ رہی ہیں۔انہوں نے پوچھاکہ اتر پردیش کی حکومت خواتین اور بچیوں کی حفاظت کی ذمہ داری کب لینا شروع کرے گی؟ بتا دیں کہ کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی واڈرا نے اتر پردیش میں سال 2022 میں ہونے والے اسمبلی انتخابات سے پہلے پارٹی کارکنوں سے ہر ہفتے تین چار بار ملنے کا فیصلہ کیا ہے۔کانگریس کے ایک سینئر ذرائع نے کہا کہ لوک سبھا انتخابات کے نتائج آنے کے بعد سے پرینکا گاندھی نے پارٹی رہنماؤں اور کارکنوں سے اپنے رہائش گاہ پر ملنا شروع کیا تھا۔کانگریس جنرل سکریٹری مشرقی اتر پردیش کی انچارج بھی ہیں۔وہ گزشتہ دو ہفتوں میں اپنے اور پارٹی صدر بھائی راہل گاندھی کی رہائش گاہ پر 150 سے زیادہ کارکنوں سے مل چکی ہیں۔حالانکہ گزشتہ ہفتے جب وہ ووٹروں کا شکریہ ادا کرنے کے لیے ماں سونیا گاندھی کے ساتھ ان کے پارلیمانی حلقہ رائے بریلی گئی تھیں تو اس موقع پر انہوں نے کہا تھا کہ وہ ریاست میں ہرہفتے دوبارلوگوں سے ملیں گی۔

ایک نظر اس پر بھی

یوپی اسمبلی: پرینکا گاندھی کو سون بھدر جانے سے روکنے اور حراست پر زَبردست ہنگامہ

ریاستی حکومت کے ذریعہ کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی واڈرا کو سون بھد رجانے سے روکنے، انہیں 27 سے زیادہ گھنٹوں تک حراست میں رکھنے و ریاست میں ایس پی حامیوں کے ہوئے رہے قتل پر یو پی اسمبلی میں کانگریس و ایس پی اراکین نے جم کر ہنگامہ کیا۔

مودی حکومت نے لوک سبھا میں ’آر ٹی آئی‘ ختم کرنے والا بل پیش کیا: کانگریس

  کانگریس نے الزام لگایا ہے کہ ’کم از کم گورنمنٹ اور زیادہ سے زیادہ گورننس‘ کی بات کرنے والی مرکزی حکومت لوگوں کے اطلاعات کے حق کے تحت حاصل حقوق کو چھین رہی ہے اور اس قانون کو ختم کرنے کی کوشش کررہی ہے۔