کاروار شہر میں فلائی اوور کی وجہ سے سیاحت کو پہنچا نقصان - ساحلی علاقے میں کاروبار ہوا ٹھپ

Source: S.O. News Service | Published on 12th February 2024, 11:11 PM | ساحلی خبریں |

کاروار 12 / فروری (ایس او نیوز) کاروار کے ساحلی علاقے میں نیشنل ہائی وے توسیع کے لئے بنائے گئے فلائی اوور کی وجہ سے اس علاقے میں سیاحوں کی آمد میں بہت زیادہ کمی دیکھی گئی ہے۔ اور ساحل کے اطراف میں موجود ہوٹلوں اور دیگر دکانوں میں کاروبار بری طرح متاثر ہوا ہے۔
    
کاروار کے بینگا علاقے سے آگے بڑھتے ہی سرنگیں ملتی ہیں اور وہ سیدھے فلائی اوور پر جا کر کھلتی ہیں جو موٹر گاڑیوں کو گوا کے راستے پر ڈالتی ہیں۔ اس 1.2 کلو میٹر لمبے راستے پر کاروار شہر میں داخل ہونے کی کہیں بھی گنجائش نہیں ہے۔ فلائی اوور ختم ہونے کے بعد سڑک پر کہیں مڑنے کا موقع بھی نہیں ہے۔ اس لئے سیاحوں اور دیگر سفر کرنے والوں کی موٹر گاڑیوں کے لئے کاروار ساحل کی طرف مڑنے اور رکنے کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ اب کاروار شہر کی حالت بھی گوا کے کانکون جیسی ہوگئی ہے جہاں شہر کے باہر سے موٹر گاڑیاں گزرتی ہیں اور شہری علاقے سے ان کا کوئی رابطہ نہیں ہو پاتا۔ 
    
اس وجہ سے ٹیگور بیچ پر سیاحوں کی دلکشی اور دلچسپی کم ہوگئی ہے ۔ راک گارڈن، بحری جنگی جہاز میوزیم سب جگہ خاموشی چھائی ہوئی ہے ۔ ساحل پر آنے والوں کی کمی نے یہاں کے ہوٹلوں کا کاروبار بھی ٹھپ کر دیا ہے ۔ اس کا اثر شہر کی اقتصادی حالت پر پڑ رہا ہے۔     

ایک نظر اس پر بھی

کاروار کے سمندر میں لگا ہوا 'رڈار' بھی چوروں کے ہاتھ سے بچ نہ سکا !

زمین پر سے قیمتی مشینیں چرانے والوں نے اب سمندر میں اپنے ہاتھ کی صفائی دکھانا شروع کیا ہے جس کی تازہ ترین مثال ماحولیاتی تبدیلیوں کے سگنل فراہم کرنے کے لئے کاروار کے علاقے میں بحیرہ عرب میں لگائے گئے 'رڈار' کی چوری ہے ۔

کمٹہ کے سمندر میں چینی جہاز کا معاملہ - کوسٹ گارڈ نے کہا : ہندوستانی حدود کی خلاف ورزی نہیں ہوئی

دو دن قبل کمٹہ کے قریب ہندوستانی سمندری سرحد میں چینی جہاز کی موجودگی اور اس سے ساحلی سیکیوریٹی کو درپیش خطرے کے تعلق سے جو خبریں عام ہوئی تھیں اس پر کوسٹ گارڈ نے بتایا ہے کہ یہ ایک جھوٹی خبر تھی اور چینی جہاز ہندوستانی سرحد میں داخل نہیں ہوا تھا ۔

ہوناور کاسرکوڈ میں ماہی گیروں پر زیادتیوں کے خلاف حقوق انسانی کمیشن سے کی گئی شکایت

ہوناور کے کاسرکوڈ ٹونکا میں مجوزہ تجارتی بندرگاہ کی تعمیر کے خلاف احتجاج کرنے والے مقامی ماہی گیروں  پر پولیس کی طرف سے لاٹھی، خواتین سمیت کئی لوگوں کی گرفتاریاں ، جھوٹے مقدمات کی شکل میں جو زیادتیاں ہوئی تھیں، اس کے تعلق سے حقوق انسانی کمیشن سے شکایت کی گئی ہے ۔

بھٹکل میں 'ریت مافیا' کا دربار - تعلقہ انتظامیہ خاموش - عوام بے بس اور لاچار

بھٹکل میں تعلقہ انتظامیہ کی خاموشی کی وجہ سے تعلقہ کے گورٹے، بیلکے، جالی، مُنڈلی نستار، بئیلور جیسے علاقوں میں ساحل سے ریت جیسی سمندری دولت لوٹنے کا کام 'ریت مافیا' کی طرف سے بلا روک ٹوک جاری ہے اور مقامی عوام پریشانی اور بے بسی و لاچاری سے یہ سب دیکھنے پر مجبور ہوگئے ہیں ۔