ذات پات اورمذہب کے نام پرکسی بھی طرح کی زیادتی ناقابل برداشت، گڑگاؤں میں ایک مسلم نوجوان پر ہوئے حملے کی گوتم گھمبیر نے کی مذمت

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 28th May 2019, 1:23 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 28 مئی(ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) مشرقی دہلی سے نومنتخب رکن پارلیمنٹ گوتم گمبھیر نے گروگرام میں ایک مسلم نوجوان   پرکئی لوگوں کے ذریعہ کئے گئے حملے کو قابل مذمت قرار دیااورحکام سے اس معاملے میں سخت کارروائی کرنے کی اپیل کی۔

گمبھیر نے کہا کہ گروگرام میں ایک مسلم  سے ٹوپی اتارنے، جے شری رام کہنے کے لیے کہا گیا۔یہ قابل مذمت ہے۔گروگرام کے حکام کو ایسی کارروائی کرنی چاہئے جس میں ایک مثال ہو۔ہمارا متحدہ سیکولر ہے۔حالانکہ گمبھیرکے اس ٹویٹ پر دہلی میں ان کی پارٹی کے کچھ ارکان نے اعتراض کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ کرکٹر سے لیڈر بنے گمبھیرکے الفاظ کا استعمال اپوزیشن پارٹیاں بی جے پی کے خلاف کرسکتی ہیں۔دہلی بی جے پی کے ایک سینئر رہنما نے کہاکہ گمبھیر اب کرکٹر نہیں ہیں اور انہیں یہ سمجھنا چاہئے کہ ان کے الفاظ اور کام کو سیاست کے چشمہ سے دیکھا جائے گا۔انہوں نے کہاکہ کسی کو اس طرح کے واقعات اچھے نہیں لگتے لیکن ہریانہ میں ہوئے اس واقعہ پربولنے کا کیا فائدہ ہے جسے دیگر پارٹیاں بی جے پی کے خلاف استعمال کر سکتی ہیں۔گمبھیر نے ایک اور ٹویٹ کیاہے کہ سیکولرزم پرمیرے خیال بہتروزیر اعظم نریندر مودی کے ’سب کا ساتھ سب کا وکاس‘ منتر سے حوصلہ افزا ہیں۔میں نے خود کو صرف گروگرام کے واقعہ تک محدود نہیں رکھاہے۔ ذات / مذہب کی بنیاد پر کسی بھی قسم کی زیادتی قابل مذمت ہے۔ ہندوستان رواداری اور جامع ترقی کے تصورپرمبنی ہے۔قابل ذکر ہے کہ گروگرام میں 25 مئی کو لوگوں کے ایک گروپ نے 25 سالہ ایک نوجوان کی مبینہ طور پر پٹائی کی تھی۔

ایک نظر اس پر بھی

سی بی ایس ای طلباء کو راحت، 9؍ویں سے 12؍ ویں کے نصاب میں 30 فیصد تخفیف

کووڈ-19 کے بڑھتے معاملات کے درمیان اسکول کے نہ کھل پانے کی وجہ سے نظام تعلیم پر اثر اور کلاسز کے اوقات میں بھی آئی کمی کے پیش نظر سی بی ایس ای نے منگل کو تعلیمی سال 21-2020 کے لئے 9ویں -12ویں کا نصاب 30 فیصدی تک کم کر دیا ہے۔

کورونا انفیکشن: ہندوستان ہوا بے حال، مریضوں کی تعداد تقریباً 7.5 لاکھ، مہلوکین 20642

 ہندوستان میں کورونا کا قہر لگاتار بڑھتا ہی چلا جا رہا ہے۔ گزشتہ کچھ دنوں سے روزانہ 20 ہزار سے زائد نئے مریض سامنے آ رہے ہیں اور مہلوکین کی تعداد میں بھی 400 سے 500 کے درمیان درج کی جا رہی ہے۔ تازہ ترین خبروں کے مطابق ہندوستان میں کورونا متاثرہ افراد کی کل تعداد 7.42 لاکھ اور ہلاکتوں ...