خطرناک شکل اختیار کر سکتا ہے طوفان ’بلبل‘، بنگال کی طرف بڑھنے کا امکان

Source: S.O. News Service | By INS India | Published on 7th November 2019, 8:10 PM | ملکی خبریں |

بھونیشور،07/نومبر(آئی این ایس انڈیا)  خلیج بنگال کے اوپر بنا چکرواتی طوفان اگلے 24 گھنٹے میں خطرناک شکل اختیار کر سکتا ہے۔ محکمہ موسمیات کے ایک سینئر افسر نے بتایا کہ یہ اڑیسہ سے ہوتے ہوئے مغربی بنگال اور بنگلہ دیش کے ساحل کی طرف بڑھنے والا ہے۔بھونیشور محکمہ موسمیات کے ڈائریکٹر ایچ آر بشواس کے مطابق سات کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے بڑھ رہا چکراوت طوفان '’بلبل‘ فی الحال مغربی بنگال میں سمندر جزائر سے 830 کلومیٹر جنوب مشرق میں اور اڑیسہ کے پارادیپ سے 730 کلومیٹر جنوب مشرق میں وسطی خلیج بنگال کے اوپر ہے۔

احتیاط کے طور پر اڑیسہ حکومت نے تمام ضلع انتظامیہ سے طوفان کی ہر ہلچل پر قریبی نظر رکھنے کو کہا ہے کیونکہ اس کے چلتے کئی علاقوں میں شدید بارش ہو سکتی ہے۔ ریاستی حکومت کے ایک سینئر افسر نے بتایا کہ ریاست کے 30 میں سے تقریبا 15 اضلاع کو ممکنہ آبی جماؤاور سیلاب جیسی صورتحال سے نمٹنے کے لئے تیار رہنے کو کہا گیا ہے۔ محکمہ موسمیات کے ڈائریکٹر جنرل مرتوجے اپاترا نے کہا کہ طوفان پر نگرانی کی جا رہی ہے تاکہ یہ پتہ لگایا جا سکے کہ اس کے صحیح سمت کیا ہے اور یہ کہاں دستک دے گا۔ انہوں نے کہاکہ چکروات کے سنگین چکرواتی طوفان میں تبدیل ہونے کا خدشہ ہے۔ ممکن ہے کہ یہ مغربی بنگال اور بنگلہ دیش کے ساحل کی جانب شمال شمال مغرب میں بڑھے۔ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ اڑیسہ اس قہرسے بچ بھی سکتا ہے۔ یہ اندازہ ریاست کے لوگوں کے لئے بڑی راحت لے کر آیا ہے جو مئی میں بربادی لے کر آئے طوفان فونی کے بعد سے حالات معمول پر لانے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں۔ دو ہفتے پہلے اڑیسہ میں بارش سے متعلق واقعات میں چھ افراد کی موت ہو گئی تھی۔ مخصوص ریسکیو کمشنر (ایس آر سی) پی کے جینا نے کہا کہ گنجم، گجپتی، نیاگڑھ، پوری، کھردا، جگت سنگھ پور، کٹک اور کیندر پاڈاسمیت کل 15 اضلاع کو کسی قسم کیہنگامی حالات سے نمٹنے کے لئے انتظامیہ کوپوری طرح تیاررکھنے کو کہا گیا ہے۔ حکام کو اس بات کا یقین کرنے کو کہا گیا ہے کہ کوئی بھی ماہی گیروں آٹھ نومبر سے لے کر اگلی نوٹس آنے تک سمندر میں نہ جائے۔ کسانوں کو بھی فصلوں کو بچانے کے لئے اقدامات کرنے کو کہا گیا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

مودی-شاہ کی قیادت کی وجہ سے ایودھیا پر ایسا فیصلہ آیا، یوگا گرو بابا رام دیو نے نوے فیصد مسلمانوں کے آباء واجداد کو ہندو بتایا

 9 نومبر کو ایودھیا معاملے میں فیصلہ آنے کے بعدجہاں پہلے ہرطرف’’ امن اورکسی کی جیت نہیں ‘‘کے دعوے اوربیانات دیے جارہے تھے،اب حسب ِ توقع اشتعال انگیزبیانات آنے شروع ہوگئے ہیں۔جس سے سوال آتاہے کہ کیااپنے لیڈروں کوزبان قابورکھنے کی نصیحت بھی جملہ تونہیں تھی؟

لکھنؤ میں مسلم پرسنل لاء بورڈ کے عاملہ کی میٹنگ، بابری مسجد معاملہ کے فریق اقبال انصاری ایکشن کمیٹی کی میٹنگ میں شریک نہیں ہوئے

 آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے عاملہ کی میٹنگ اتوار 17؍ نومبر کو دارالعلوم ندوۃ العلماء میں منعقد ہوگی، اس میٹنگ میں ملک بھر سے بورڈ کے ایکٹیو اراکین شامل ہونے کےلیے وہاں پہنچ چکے ہیں صبح ساڑھے گیارہ بجے سے میٹنگ شروع ہوگی۔

کشمیر: خراب موسمی حالات، جوتوں کی قیمتیں آسمان پر

 وادی کشمیر میں وقت سے پہلے ہی موسم کی بے رخی نے جہاں اہلیان وادی کو درپیش مصائب ومسائل کو دو بھر کردیا وہیں لوگوں کا کہنا ہے کہ جوتے فروشوں نے اس کا بھر پور فائدہ اٹھانے میں کوئی کسر باقی نہیں چھوڑی۔

کشمیر میں غیر یقینی صورتحال کا 104 واں دن، ہنوز غیر اعلانیہ ہڑتالوں کا سلسلہ جاری

وادی کشمیر میں ہفتہ کے روز لگاتار 104 ویں دن بھی غیر یقینی صورتحال کے بیچ معمولات زندگی پٹری پر آتے ہوئے نظر آئے تاہم بازار صبح اور شام کے وقت ہی کھلے رہتے ہیں اور سڑکوں پر اکا دکا سومو اور منی گاڑیاں چلتی رہیں لیکن نجی ٹرانسپورٹ کی بھر پور نقل وحمل سے کئی مقامات پر ٹریفک جام ...