کیا کرناٹک کی کمارسوامی حکومت گرانے میں پیگاسس جاسوسی کا دخل تھا ؟ کیا کہتی ہے دی وائر کی رپورٹ

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 21st July 2021, 2:01 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو۔ 20 جولائی (ایس او نیوز ) ان دنوں دنیا بھر کی بڑی شخصیتوں کی جاسوسی کئے جانے کا ہنگامہ جاری ہے مگر اس دوران  معروف  نیوز پورٹل دی وائر نے اس بات کا حیرت انگیز انکشاف کیا ہے کہ  2019 کے دوران کرناٹک کی کانگریس جنتا دل (ایس ) مخلوط حکومت کو گرانے کے لئے  بی  جے پی کی مرکزی قیادت نے جاسوسی سافٹ ویر پیگاسس کا سہارا لیا تھا۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے 2019 کو آپریشن کنول  کو انجام تک پہنچانے اور  کانگریس و جنتادل  (سکیولر ) کے 17 اراکین اسمبلی کی پارٹی تبد یل کروانے سے پہلے تین بڑے سیاسی قائدین کی جاسوس کی گئی ۔ جن قائد ین کی جاسوس کی گئی ان میں سابق نائب وزیراعلیٰ  ڈاکٹر جی پرمیشور، سابق وزیر اعلیٰ  اور موجودہ اپوزیشن لیڈر  سدارامیا اور سابق وزیراعلی ایچ ڈی کمارسوامی کے سکریٹریوں کے موبائیل نمبر سامنے آئے ہیں ۔ فرانس کے غیر منافع بخش میڈ یا ادارے فار بڈن اسٹوریز کی طرف سے جو ڈاٹا  سامنے آیا ہے ان میں کرناٹک کے ایک سیاستدان پرمیشور کا نمبر اور دو سیاستدانوں سدارمیا  اور کماراسوامی کے سکریٹریوں  کے موبائل نمبرس سامنے آئے ہیں۔ جاسوسی ایسے وقت کی گئی جب کانگریس کے  رہنما راہول گاندھی  نے اپنا پرانا نمبر بدل کر نیا نمبر لیا تھا۔ ویسے تو ڈیجیٹل فارنسک تصدیق نہیں ہو سکی ہے، لیکن اتنا تو طئےہے کہ جاسوسی اس وقت  ہوئی ہوگی جب کرناٹک میں  اقتدار کےلئے رسہ کشی زوروں پر تھی۔ کانگریس اور جے ڈی ایس نے پہلے ہی جاسوسی کے الزامات لگائے تھے اب پیگاسس کے سہارے سے  کرناٹک کے سیاستدانوں کے موبائل نمبر وں کی  نگرانی کے بین الاقوامی  سطح سے انکشاف نے ان شبہات کو تقویت دی ہے ۔

پتہ چلا ہے کہ اس وقت کے وزیر اعلی کمارسوامی کے سکریٹری ستیش کے نمبر کی جاسوس کی گئی ۔اسی طرح سدارامیا کے سکریٹری وینکٹیش کے نمبر پر بھی جاسوس کی گئی ۔ وینکٹیش نے کہا ہے کہ جس وقت جاسوسی کے بارے میں خبر یں سامنے آئی ہیں اس وقت وہ وہی موبائیل نمبر استعمال کر رہے تھے جوانکشاف میں شامل ہے ۔اسی طرح سابق وزیراعظم دیوے گوڈا کی سکیورٹی میں شامل منجو ناتھ مدے گوڈا کے نمبر کی بھی پیکاسس  کے ذریعے جاسوی کاانکشاف ہوا ہے۔ فار بڈن اسٹوریس  کے  ڈاٹا کے ذریعہ پرمیشور کا جو موبائل نمبر سامنے آیا ہے اس کے بارے میں سوال کئے جانے پر ڈاکٹر پرمیشور نے تصدیق کی کہ 2019 کے دوران وہ مذکورہ موبائل نمبر استعمال کر رہے تھے لیکن گزشتہ چند مہینوں سے انہوں نے اس نمبر کو استعمال کرنا بند کر دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ان کو  ممکنہ جاسوسی سافٹ ویر کے استعمال کا کوئی علم نہیں اور اس دور میں وہ کسی سیاسی مینجمنٹ کا حصہ نہیں تھے اور نہ ہی وہ پردیش کانگریس کے صدر کے عہدے پر تھے ۔

ایک نظر اس پر بھی

بسوراج بومئی کرناٹک کے 30ویں وزیراعلی ؛گورنر تاور چند گہلوٹ نے دلایاعہدہ کی راز داری کا حلف

یڈی یورپا  کے سبکدوش  ہونے کے بعد بدھ 28 جولائی کو  بسواراج بومئی نے ریاست کرناٹک کے 30 ویں وزیراعلی کی حیثیت سے حلف اٹھایا - راج بھون کے گلاس ہاؤز میں منعقدہ مختصر تقریب میں ریاستی گورنر تاور چند گہلوٹ نے بومئی کوعہدہ کی راز داری کا حلف دلایا ۔

بنگلورو: خواتین کے تحفظ کیلئے ریلوے پو لیس کو13موٹر سائیکلیں فراہم

خواتین کے تحفظ کیلئے ریلوے ڈویژن پو لیس نے اپنے اہلکاروں کو13موٹر سائیکلیں فراہم کی ہیں۔ سنگولی رائنا سٹی ریلوے اسٹیشن احاطہ میں ریلوے ڈویژن کے اڈیشنل ڈرائرکٹر جنرل آف پو لیس(اے ڈی جی پی) بھاسکر راؤ نے موٹر سائیکلوں کو عملہ میں تقسیم کیا۔

ریاستی کابینہ میں توسیع جلد کی جائے: کمارسوامی

سابق وزیر اعلیٰ اور ریاستی جنتا دل کے رہنما ایچ ڈی کماسوامی نے وزیر اعلیٰ بسوراج بومئی سے کہا ہے کہ ریاست میں سیلاب کی سنگین صورتحال سے نپٹنے کے لئے وہ اپنی کابینہ میں جلد از جلد توسیع کریں۔

کرناٹک: یڈی یورپا کے استعفیٰ سے غمزدہ حامی نے کر لی خودکشی

کرناٹک کے وزیر اعلی بی ایس یڈی یورپا کے استعفیٰ سے غمزدہ ہوکر ان کے ایک حامی نے خود کشی کرلی ہے، جس پر وزیراعلی نے نوجوانوں کو اس طرح کے قدم نہ اٹھانے کی اپیل کی ہے۔ پولیس ذرائع نے بتایا کہ خودکشی کرنے والے کی شناخت روی (35) کے طور پر ہوئی ہے اور وہ چامراج نگر ضلع کے بومل پور گاؤں کا ...