دہلی میں سرکاری زمین پر موجود سبھی مساجد کا ٹوٹنا طے: بی جے پی رکن پارلیمنٹ پرویش ورما

Source: S.O. News Service | Published on 13th January 2020, 9:21 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،13/جنوری (ایس او نیوز/ایجنسی) دہلی میں اسمبلی انتخابات کی تاریخوں کا اعلان ہونے کے بعد سیاسی پارٹیوں کی انتخابی تشہیر تیز ہو گئی ہے۔ لیکن اس درمیان بی جے پی کے کئی لیڈران نے مسلمانوں کے خلاف زہر افشانی شروع کر دی ہے۔ تازہ بیان مغربی دہلی کے بی جے پی رکن پارلیمنٹ پرویش ورما نے دیا ہے جس میں انھوں نے کہا ہے کہ سرکاری زمین پر بنی ہوئی مساجد کا ٹوٹنا طے ہے۔ بی جے پی رکن پارلیمنٹ کے اس بیان کو ووٹوں کے پولرائزیشن سے جوڑ کر دیکھا جا رہا ہے۔

دراصل پرویش ورما دہلی واقع بی جے پی دفتر میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔ اس پریس کانفرنس میں انھوں نے مساجد کو منہدم کیے جانے سے متعلق بیان دیا اور پھر دہلی کی عآپ حکومت کے خلاف بھی کئی طرح کے بیان دیے۔ دہلی اسمبلی انتخاب کے مقصد سے منعقد پریس کانفرنس میں وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کو پوری طرح سے ناکام قرار دے کر اور پھر مساجد کے تعلق سے زہر انگیز بیان دے کر انھوں نے ہندو ووٹروں کو پولرائز کرنے کی کوشش کی ہے۔ حالانکہ پہلے بھی وہ سرکاری زمین پر موجود مساجد توڑنے کو لے کر بیان دے چکے ہیں۔

گزشتہ سال جون میں پرویش ورما نے دہلی کے لیفٹیننٹ گورنر کو ایک خط لکھا تھا جس میں انھوں نے الزام عائد کیا تھا کہ ملک کی راجدھانی دہلی میں کئی مساجد کی تعمیر سرکاری زمین پر غیر قانونی طریقے سے کی گئی ہے۔ بی جے پی رکن پارلیمنٹ نے مطالبہ کیا تھا کہ ایسی مساجد کو سرکاری زمین سے ہٹایا جائے۔ حالانکہ دہلی اقلیتی کمیشن نے پرویش ورما کے ان الزامات کو سرے سے خارج کر دیا تھا اور کہا تھا کہ ان کے دعوے میں ذرا بھی سچائی نہیں ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

کورونا ہندوستان کو تباہ کرنے کے درپے، ریکارڈ 27 ہزار نئے کیسز درج، مزید 519 ہلاکتیں

  ہندوستان میں کورونا وائرس کے یومیہ کیسز بہت تیزی کے ساتھ بڑھ رہے ہیں اور ایسا محسوس ہو رہا ہے جیسے کورونا نے ہندوستان کو تباہ کرنے کا عزم کر لیا ہے۔ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 27،114 نئے کیسزرپورٹ ہوئے ہیں جو ایک دن میں متاثرہ افراد کی سب سے زیادہ تعداد ہے اور اسی عرصہ میں 519 افراد ...

ایمبولینس نے کورونا مریض سے 7 کلومیٹر کے لئے وصول کئے 8 ہزار روپئے، معاملہ درج

مہاراشٹر میں کورونا وائرس کے انفیکشن کی صورت حال مسلسل بگڑتی جا رہی ہے۔ مریضوں کی تعداد بڑھنے کے ساتھ اسپتالوں میں بیڈ بھی کم پڑنے لگے ہیں۔ کورونا وبا کے اس بحران کی گھڑی میں بھی کچھ لوگ مریضوں کو لوٹنے سے باز نہیں آ رہے ہیں۔