ہم تو یونہی لمبے لمبے وعدے کر رہے تھے، لوگوں نے سچ سمجھ لیا؛ نتن گڈکری نے ٹی وی شو پر بی جے پی کی وعدہ فراموشی کا پردہ فاش کر دیا

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th October 2018, 12:28 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 10؍اکتوبر (ایس او نیوز؍ایجنسی) مرکز کی مودی حکومت کا پہلا سال ختم ہوتے ہی لوگوں کی زبان پر آنے لگا تھا کہ اقتدار میں آنے کے لیے بی جے پی اور پی ایم مودی نے جتنے بھی وعدے کیے تھے وہ سب جھوٹے اور محض جملے تھے۔ دراصل ’جملہ‘ لفظ تو خود بی جے پی صدر امت شاہ نے ہی استعمال کیا تھا جب ان سے پوچھا گیا تھا کہ وعدہ کے مطابق لوگوں کے اکاؤنٹ میں 15-15 لاکھ روپے کب آئیں گے۔ اور اب مرکزی وزیر نتن گڈکری نے ان سے آگے بڑھتے ہوئے پوری قلعی ہی کھول کر رکھ دی ہے۔

دراصل نتن گڈکری نے ایک مراٹھی چینل سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ’’انھیں تو کبھی امید ہی نہیں تھی کہ وہ اقتدار میں آجائیں گے۔ پھر لوگوں نے کہا کہ لمبے لمبے وعدے کرنا شروع کر دو۔ کون سا ہم اقتدار میں آنے والے تھے جنھیں پورا کرنا تھا۔‘‘ انھوں نے مزید کہا کہ ’’لوگوں نے ہمارے وعدوں کو سچ سمجھ کر ووٹ دیا اور ہمیں برسراقتدار سونپ دیا۔‘‘ یہ بات کہہ کر نتن گڈکری زور سے ہنس پڑتے ہیں۔ پھر جب ان سے یہ پوچھا گیا کہ اب جب لوگ پرانے وعدوں کو یاد دلاتے ہیں تو وہ کیا کرتے ہیں؟ اس پر نتن گڈکری کا جواب تھا کہ ’’ہم ہنس دیتے ہیں اور آگے بڑھ جاتے ہیں۔‘‘

مراٹھی چینل سے ہوئی اس بات چیت کے ویڈیو کا ایک چھوٹا سا حصہ کانگریس نے ٹوئٹ کیا ہے۔ اس ویڈیو کے ساتھ کانگریس نے لکھا ہے کہ ’’نتن گڈکری جی ہمارے ان نظریات سے اتفاق رکھتے ہیں کہ مودی حکومت جملوں اور جھوٹے وعدوں کی بنیاد پر قائم ہوئی ہے۔‘‘

ایک نظر اس پر بھی

گذشتہ دس سالوں سے جیل میں مقید مسلم نوجوان کو قانونی کی تعلیم جاری رکھنے کی اجازت، جمعیۃ علماء نے قانونی امداد کے ساتھ ساتھ تعلیمی وظیفہ بھی دیا، پہلے مرحلہ کا نتیجہ اطمنان بخش: گلزار اعظمی

ممبئی کی خصوصی مکوکا(این آئی اے) عدالت نے جھوٹے دہشت گردانہ معاملے کا سامنا کررہے ایک مسلم نوجوان کو قانون کی تعلیم جاری رکھنے اور اسے امتحان میں شرکت کرنے کی مشروط اجازت دی۔13-7 ممبئی سلسلہ وار بم دھماکہ معاملے کا سامنا کررہے ملزم ندیم اختر کو ایل ایل بی پہلے سال کے دوسرے مرحلہ ...

مرکز نے سپریم کورٹ سے کہا، رافیل معاہدہ میں پی ایم اوکادخل نہیں، تمام عرضیاں ہوں مسترد

لوک سبھا انتخابات میں اپوزیشن نے رافیل لڑاکا طیارے معاہدے میں بے ضابطگیوں کا الزام لگاتے ہوئے اسے سب سے بڑا مسئلہ بنایا۔کانگریس صدر راہل گاندھی نے اس معاہدے کے لئے براہ راست طور پر وزیر اعظم نریندر مودی کو ذمہ دار بتایا۔

جب تک کجریوال ہیں، دہلی کو مکمل ریاست کا درجہ دینے کی نہیں سوچ سکتے:ہرش وردھن

دہلی کی چاندنی چوک سیٹ سے تقریباََ228000 ووٹوں سے جیت کر دوبارہ ایم پی بنے مرکزی وزیر ڈاکٹر ہرش وردھن نے بات کی۔دہلی کو مکمل ریاست کا درجہ دینے کے معاملے پر انہوں نے کہا کہ جب تک اروند کجریوال وزیر اعلی ہیں، اس وقت تک اس کے بارے میں سوچا بھی نہیں جا سکتا۔