ہم تو یونہی لمبے لمبے وعدے کر رہے تھے، لوگوں نے سچ سمجھ لیا؛ نتن گڈکری نے ٹی وی شو پر بی جے پی کی وعدہ فراموشی کا پردہ فاش کر دیا

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 10th October 2018, 12:28 PM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 10؍اکتوبر (ایس او نیوز؍ایجنسی) مرکز کی مودی حکومت کا پہلا سال ختم ہوتے ہی لوگوں کی زبان پر آنے لگا تھا کہ اقتدار میں آنے کے لیے بی جے پی اور پی ایم مودی نے جتنے بھی وعدے کیے تھے وہ سب جھوٹے اور محض جملے تھے۔ دراصل ’جملہ‘ لفظ تو خود بی جے پی صدر امت شاہ نے ہی استعمال کیا تھا جب ان سے پوچھا گیا تھا کہ وعدہ کے مطابق لوگوں کے اکاؤنٹ میں 15-15 لاکھ روپے کب آئیں گے۔ اور اب مرکزی وزیر نتن گڈکری نے ان سے آگے بڑھتے ہوئے پوری قلعی ہی کھول کر رکھ دی ہے۔

دراصل نتن گڈکری نے ایک مراٹھی چینل سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ ’’انھیں تو کبھی امید ہی نہیں تھی کہ وہ اقتدار میں آجائیں گے۔ پھر لوگوں نے کہا کہ لمبے لمبے وعدے کرنا شروع کر دو۔ کون سا ہم اقتدار میں آنے والے تھے جنھیں پورا کرنا تھا۔‘‘ انھوں نے مزید کہا کہ ’’لوگوں نے ہمارے وعدوں کو سچ سمجھ کر ووٹ دیا اور ہمیں برسراقتدار سونپ دیا۔‘‘ یہ بات کہہ کر نتن گڈکری زور سے ہنس پڑتے ہیں۔ پھر جب ان سے یہ پوچھا گیا کہ اب جب لوگ پرانے وعدوں کو یاد دلاتے ہیں تو وہ کیا کرتے ہیں؟ اس پر نتن گڈکری کا جواب تھا کہ ’’ہم ہنس دیتے ہیں اور آگے بڑھ جاتے ہیں۔‘‘

مراٹھی چینل سے ہوئی اس بات چیت کے ویڈیو کا ایک چھوٹا سا حصہ کانگریس نے ٹوئٹ کیا ہے۔ اس ویڈیو کے ساتھ کانگریس نے لکھا ہے کہ ’’نتن گڈکری جی ہمارے ان نظریات سے اتفاق رکھتے ہیں کہ مودی حکومت جملوں اور جھوٹے وعدوں کی بنیاد پر قائم ہوئی ہے۔‘‘

ایک نظر اس پر بھی

راجستھان میں اس بار 158 کروڑ پتی ممبر اسمبلی

راجستھان کی 15 ویں اسمبلی کے لئے نو منتخب 199 اراکین اسمبلی میں سے 158 کروڑ پتی ہیں۔ سال 2013 کے گزشتہ اسمبلی انتخابات میں یہ تعداد 145 تھی۔ ایسوسی ایشن آف ڈیموکریٹک ریفارمس (اے ڈی آر) کی رپورٹ کے مطابق کانگریس کے 99 میں سے 82 ممبران اسمبلی، بی جے پی کے 73 میں سے 58 ممبران اسمبلی، بی ایس پی ...

رافیل ڈیل پر فیصلے میں مبنی بر حقائق ’ اصلاح ‘کی مانگ کو لے عدلیہ پہنچی مرکزی حکومت

رافیل ڈیل پر سپریم کورٹ کے فیصلہ اور اس پر مچے سیاسی گھمسان کے درمیان مرکزی حکومت ایک بار پھر عدالت عظمی پہنچی ہے۔حکومت نے عرضی داخل کرکے رافیل ڈیل پر دیئے گئے فیصلے میں مبنی بر حقائق اصلاح کا مطالبہ کیا ہے۔ مرکز نے سپریم کورٹ سے فیصلے کے اس پیراگراف میں ترمیم کا مطالبہ کیا ہے، ...

پلوامہ تصادم: آخر ایک فوجی نے جنگجوئیت کیوں اختیار کی ؟ ظہور ٹھوکرفوجی کیمپ سے فرار ہو کرجنگجوئیت اختیار کی تھی

جنوبی کشمیر کے پلوامہ ضلع میں ہفتہ کو ایک تصادم میں سکیورٹی فورسز نے تین دہشت گردوں کو مار گرایا۔ اس تصادم میں مارے گئے دہشت گردوں میں ظہور احمد ٹھوکر بھی ہے، جو گزشتہ سال جولائی میں فوج کے کیمپ سے فرار ہو کر دہشت گرد تنظیم میں شامل ہو گیا تھا۔بتایا جا رہا ہے کہ مقامی باشندے ...

چھتیس گڑھ میں کون بنے گا وزیر اعلی؟ راہل گاندھی نے کیا اشارہ

پی اور راجستھان میں سی ایم کا اعلان کرنے کے بعد چھتیس گڑھ کے وزیر اعلی کے عہدے پر کانگریس میں پیچ پھنسا ہوا ہے۔ کانگریس صدر راہل گاندھی نے پی اور راجستھان کی طرح آج بھی ٹویٹر پر چھتیس گڑھ کے تمام سی ایم دعویداروں کے ساتھ تصویر تو پوسٹ کر دی ہے لیکن وزیر اعلی کون ہوگا اس پر پارٹی ...