تمام ہائیکورٹ پاسکو ایکٹ کے تحت زیر التوا معاملوں کی فہرست سونپیں: سپریم کورٹ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 13th March 2018, 11:03 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی12مارچ(ایس او نیوز؍ آئی این ایس انڈیا )سپریم کورٹ نے تمام ہائیکورٹ سے کہا ہے کہ پاسکو ایکٹ کے تحت زیر التوا معاملوں کی فہرست سونپیں۔ درخواست گزار نے عدالت کو بتایا کہ 2006 این سی آر بی کے اعدادوشمار کے مطابق بچوں کے ساتھ جنسی جرائم کے 89 فیصد معاملے زیر التوا ہیں۔2017 تک کے اعداد و شمار این سی آر بی مہیا نہیں کرا رہا ہے؛ لیکن اب تک ضرور یہ اعداد و شمار 90فیصدی سے تجاوز کر چکا ہوگا۔ این سی آر بی کے مطابق پاسکو ایکٹ کے تحت درج 101326 معاملات میں 11 ہزار کا ہی نمٹا ہوا ہے اور 90205 معاملے زیر التوا ہی ہیں۔ کورٹ میں اگلی سماعت 28 اپریل کو ہوگی۔ درخواست گزار نے کہا کہ پاسکو ایکٹ کے تحت مجرم کو سزائے موت کا قانون ہو۔ اس پر عدالت نے کہا کہ آپ اس معاملے میں اپنی حد میں ہی رہیں۔ دہلی میں 8 ماہ کی بچی کے ساتھ جنسی استحصال کے معاملے میں سپریم کورٹ سماعت کر رہا ہے، گزشتہ سماعت میں عدالت نے مرکزی حکومت سے پوچھا کہ پاسکو کے کیس کے تحت تفتیش مکمل کرنے میں کتنا وقت لگنا چاہئے۔ کورٹ نے مرکز اور درخواست گزار سے پوچھا کہ پاسکو ایکٹ کے تحت ملک بھر میں کتنے ٹرائل زیر التواء ہیں۔ وہیں مرکزی حکومت نے کورٹ کو بتایا تھا کہ بچی کو ایمس میں داخل کیا گیا ہے اور اس کا پورا خیال رکھا جا رہا ہے۔ حکومت نے کہا کہ 75 ہزار روپے کا معاوضہ فوری طور پر بچی کے گھر والوں کو دیا گیا ہے۔ ایمس کے دونوں ڈاکٹروں کی رپورٹ میں کہا گیا کہ بچی کی سرجری کی گئی تھی اور اب وہ بہتر ہے۔ اس سے پہلے عدالت نے حکم دیا تھا کہ ایمس کے دو ڈاکٹر بچی کی تحقیقات کریں گے اور ضرورت پڑنے پر ایمس میں داخل کریں گے۔ بدھ کو سپریم کورٹ نے تشویش ظاہر کرتے ہوئے مرکزی حکومت کو ایمس کے دو مناسب ڈاکٹروں کو کلاوتی شرن ہسپتال جاکر بچی کا معائنہ کرنے کا حکم دیا تھا۔ کورٹ نے کہا تھا کہ ڈاکٹروں کے ساتھ خصوصی ایمبولینس بھی جائے گی اور ڈاکٹروں نے ضرورت محسوس کی تو بچی کو ایمس میں فوری طور پر بھرتی کیا جائے گا۔کورٹ نے کہا کہ اس دوران دہلی لیگل سروس اتھارٹی کا رکن بھی موجود رہے گا۔ سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ امید ہے کہ بچی کے ماں باپ تعاون کریں گے۔ دہلی کی شکور بستی علاقے سے آٹھ ماہ کی بچی کے جنسی استحصال کا معاملہ سامنے آیا تھا۔ اس معاملے میں پولیس نے بچی کے کزن (28 سال) کو گرفتار کیا تھا۔ یہ معاملہ اتوار کا ہے۔ 

ایک نظر اس پر بھی

مالیگاؤں ۲۰۰۸ ء بم دھماکہ معاملہ،زخمیوں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں کی گواہی کا سلسلہ جاری، ڈاکٹر سعید فیضی نے گواہی بھتہ پبلک ویلفئر فنڈ میں عطیہ کردیا

مالیگاؤں ۲۰۰۸ ء بم دھماکہ معاملے میں خصوصی این آئی اے عدالت میں بم دھماکوں میں زخمی ہونے والوں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں کی گواہی بددستور جاری ہے جس کے دوران آج مالیگاؤں کے مشہور و سینئر ڈاکٹر سعید فیضی کی گواہی عمل میں آئی

دواؤں کا معیار اور نوجوانوں کو روزگار انتہائی اہم مسئلہ: پروفیسر عبداللطیف، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس (اسٹوڈنٹس وِنگ) کی تشکیل

آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس کی ایک میٹنگ آج ابن سینا اکیڈمی، دودھ پور، علی گڑھ میں منعقد ہوئی، جس کی صدارت پروفیسر عبداللطیف (قومی نائب صدر، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس، اکیڈمک وِنگ) نے کی۔ جبکہ نظامت کے فرائض ڈاکٹر سنبل رحمن (قومی صدر، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس، خواتین ...

سکھ فسادات: میرے خلاف نہ کوئی ایف آئی آر اور نہ ہی چارج شیٹ، کمل ناتھ نے کہا،بی جے پی جھوٹ پھیلارہی ہے

مدھیہ پردیش کے وزیراعلیٰ کمل ناتھ نے 1984 کے سکھ فسادات پر اٹھ رہے سوالوں پر جواب دیاہے۔کمل ناتھ نے کہاہے کہ 1984 کے سکھ فسادات میں ان کے خلاف کوئی بھی ایف آئی آر یا چارج شیٹ نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ اب اس مسئلے کواٹھانے کے پیچھے صرف سیاست ہے۔انہوں نے کہاکہ جس وقت میں کانگریس کا جنرل ...

بریلی: ایک ساتھ 58 ہندو، مسلم اور سکھ لڑکیوں کی شادی

اجتماعی شادیوں کے بارے میں تو آپ بہت سن لیں گے لیکن یوپی کے بریلی میں ایک منفرد شادی دیکھنے کوملی ہے۔بریلی میں منعقد ایک پروگرام میں ایک ساتھ ہندو، مسلم اور سکھ کمیونٹی کی غریب لڑکیوں کی شادی کرائی گئی۔ایک ساتھ جب گھوڑی پر بیٹھ کر 58 دولہا نکلے تو ہر کوئی اس منفرد بارات کو ...

1984-1993-2002فسادات: اقلیتوں کو نشانہ بنانے میں سیاسی رہنماؤں اور پولیس کی ملی بھگت تھی : ہائی کورٹ

دہلی ہائی کورٹ نے 1984سکھ مخالف فسادات معاملے کے فیصلے میں دوسرے فسادات کولے کر بھی بے حد سخت تبصرہ کیاہے ۔ جسٹس ایس مرلی دھر اور جسٹس ونود کوئل کی بنچ نے پیر کو سجن کمار کو فسادات پھیلانے اور سازش رچنے کا مجرم قرار دیتے ہوئے عمر قید کی سزا سنائی ۔ کورٹ نے کہا کہ سال 1984 میں نومبر کے ...