مسئلہ کشمیر پر پاکستان کا نرم رخ ، فوجی سربراہ نے کہابات چیت کے ذریعہ حل ہو مسئلہ

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 17th April 2018, 12:37 AM | ملکی خبریں |

جموں،16؍اپریل ( ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا ) ہندوستان اور پاکستان کے درمیان طویل عرصہ سے تنازع کی جڑ کشمیر مسئلہ کو لے کر پاکستان کے سر اب نرم پڑتے ہوئے نظر آرہے ہیں ۔ اکثر ہی اشتعال انگیز بیان دینیو الے پاکستان کے فوجی سربراہ جنرل قمر باجوہ نے اب کہا ہے کہ مسئلہ کشمیر سمیت ہندوستان اور پاکستان کے درمیان سبھی تنازع کا پرامن حل ایک مثبت بات چیت کے ذریعہ ہی ممکن ہے ۔پاکستانی مسلح افواج کی میڈیا یونٹ آئی ایس پی آر کے ایک بیان کے مطابق باجوہ نے ہفتہ کو کاکل میں پاکستانی فوجی اکیڈمی کی پاسنگ آوٹ پریڈ کے موقع پر اپنی تقریر کے دوران یہ تبصرہ کیا ۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا یہ صاف طور پر ماننا ہے کہ کشمیر مسئلہ سمیت ہندوستان اور پاکستان کے تنازع کے پرامن حل کا راستہ صرف بات چیت سے ہی گزرتا ہے۔جنرل باجوہ نے کہا کہ ایسی بات چیت کسی فریق پر احسان نہیں ہے بلکہ یہ پورے خطہ میں امن کیلئے ضروری ہے۔ پاکستان اس طرح کی بات چیت کیلئے تیار ہے ، لیکن یہ عزت ، وقار اور مساوات کی بنیاد پر ہی ہوگا۔ بیان کے مطابق کیڈٹس کو خطاب کرتے ہوئے باجوہ نے کہا کہ پاکستان ایک امن پسند ملک ہے اور سبھی ممالک خاص کر اپںے پڑوسیوں کے ساتھ اچھی نیت اور پرامن موجودگی چاہتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ لیکن امن کی اس چاہ کو کسی بھی طرح سے ہماری کمزوری کی نشانی نہیں سمجھا جانا چاہئے ۔ ہمارے مسلج جوان کسی بھی خطرے کا معقول جواب دینے کیلئے پوری طرح سے تیار ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

بھیما کورے گاؤں تشدد:کنوئیں میں ملی 19سال کے چشم دید کی لاش

ایک جنوری کو پونے کے بھیما کوریگاؤں میں دو فرقوں کے درمیان فساد بھڑک گیا تھا۔اس تشدد میں ایک نوجوان کی موت ہوگئی تھی۔وہیں اس تشدد کی گواہ ایک 19سال کی چشم دید کی لاش فسادات متاثرین کے لئے لگائے گئے ریلیف کیمپ کے پاس ہی ایک کنوئیں میں ملی ہے۔