نیشنل ہیرالڈ کیس: سونیا، راہل اور آسکر کے انکم ٹیکس کے معاملے میں عبوری حکم میں توسیع

Source: S.O. News Service | By Jafar Sadique Nooruddin | Published on 9th January 2019, 2:06 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی:8/جنوری (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)کانگریس صدر راہل گاندھی، یو پی اے کی صدر سونیا گاندھی اور سینئر لیڈر آسکر فرنانڈیز کے انکم ٹیکس کا نئے سرے سے جانچ پڑتال کرنے کے معاملے میں سپریم کورٹ نے اپنے اس عبوری حکم کو بڑھا دیا جس میں کہا گیا ہے کہ محکمہ انکم ٹیکس تینوں کے خلاف حکم تو پاس کر سکتا ہے لیکن کیس کے تصفیے تک اسے لاگو نہیں کر سکتا۔ سپریم کورٹ 29 جنوری کو اس معاملے کی سماعت کرے گا۔سپریم کورٹ میں انکم ٹیکس محکمہ نے کہا کہ ان کے ٹیکس کا تعین دوبارہ کیا گیا ہے اور ان کے خلاف حکم جاری کیا گیا ہے؛ لیکن سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق وہ حکم لاگو نہیں کیا گیا ہے۔گزشتہ سماعت میں سپریم کورٹ نے محکمہ انکم ٹیکس کو پارٹی صدر راہل گاندھی، یو پی اے کی صدر سونیا گاندھی اور سینئر لیڈر آسکر فرنانڈیز کے انکم ٹیکس کا نئے سرے سے جانچ پڑتال جاری رکھنے کا حکم دیا تھا۔ اگرچہ کورٹ نے کہا کہ اس تشخیص کو عدالت کے آخری حکم کے بعد ہی عمل میں لایا جا سکتا ہے۔ واضح ہو کہ یو پی اے کی صدر سونیا گاندھی، کانگریس صدر راہل گاندھی اور آسکر فرنانڈیز نے دہلی ہائی کورٹ کے اس حکم کو چیلنج کیا ہے جس میں اس نے نیشنل ہیرالڈ معاملے سے متعلق 2011۔12 کے ان کے انکم ٹیکس کی تشخیص دوبارہ کھولنے کی ہدایات دی گئی تھی۔گزشتہ سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے راہل اور سونیا گاندھی کے نام جاری محکمہ انکم ٹیکس کے نوٹس پر روک لگانے سے انکار کر دیا تھا، لیکن ان کی درخواست کو سننے کی منظوری دی تھی۔ 

ایک نظر اس پر بھی

الیکشن کمیشن کا حلف نامہ - گجرات میں راجیہ سبھا انتخابات قانون کے مطابق، کمزور پڑ رہی کانگریس 

گجرات میں راجیہ سبھا انتخابات کو لے کر کانگریس کی درخواست پر الیکشن کمیشن نے حلف نامہ داخل کیا ہے الیکشن کمیشن نے دو سیٹوں پر الگ الگ انتخابات کرانے کے اپنے فیصلے کو برقرار رکھا۔

بی ایس این ایل کی حالت خراب؛ ملازمین کو جون کی تنخواہ دینے کے لیے نہیں ہیں رقم

رکاری ٹیلی کام کمپنی بی ایس این ایل نے حکومت کو ایک خط  بھیجا ہے، جس میں کمپنی نے آپریشنز جاری رکھنے میں تقریبا نااہلی ظاہر کی ہے۔کمپنی نے کہا ہے کہ رقم میں  کمی کے سبب کمپنی کے ملازمین کو  جون ماہ کی تنخواہ  تقریبا 850 کروڑ روپے  دے پانا مشکل ہے۔کمپنی پر ابھی قریب 13 ہزار کروڑ ...