مدرسہ میں دہشت گردی کی تعلیم دینے کا الزام عائد کرنے والے وسیم رضوی کو جمعیۃ العلما نے دیا بیس کروڑ ہرجانہ ادا کرنے کا نوٹس

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 11th January 2018, 4:22 PM | ملکی خبریں |

ممبئی،11؍جنوری (ایس او نیوز/پریس ریلیز) ہندوستانی مسلمانوں کی موقر تنظیم جمعیۃ علماء ہند کی مہاراسٹر اکائی کے صدر مولانا مستقیم احسن اعظمی نے آج اتر پردیش شیعہ وقف بورڈ کے چیئرمین وسیم رضوی کو قانونی نوٹس بھیج کر ان سے مدرسوں کے تعلق سے وزیر اعظم  نریندر مودی اور وزیر اعلی اتر پردیش یوگی ادتیہ ناتھ کو لکھے گئے مکتوب پر بیس کروڑ روپیہ ہرجانہ طلب کرتے ہوئے ان سے ہندوستانی مسلمانوں سے غیر مشروط معافی مانگنے کا مطالبہ کیا ہے۔ اس بات کیاطلاع آج یہاں ممبئی میں جمعیۃ علماء قانونی امداد کمیٹی کے سربراہ گلزار اعظمی نے اخبار نویسیوں کو دی۔اخبارنویسوں کو  نوٹس کی  کاپیاں فراہم کرتے ہوئے  گلزاراعظمی نے بتایا کہ   وسیم رضوی کے خطوط سے مسلمانوں خصوصاً علماء کرام کے جذبات شدید مجروح ہوئے ہیں اور مدارس دینیہ پر انہوں نے جو الزام عائد کیا ہے وہ  نا قابل قبول ہے ۔

گلزار اعظمی نے بتایا کہ شیعہ وقف بورڈ کے چیئر مین وسیم رضوی نے اپنے میں خط میں  الزام عائد کیا ہے کہ مدارس میں دہشت گردی کی تعلیم دی جاتی ہے نیزدینی مدارس بجائے ڈاکٹر ،انجینئرپیدا کرنے کے دہشت گرد پیدا کرتے  ہیں لہذا انہیں بند کردینا چاہئے یا پھر انہیں عصری تعلیم سے جوڑ دینا چاہئے جہاں مسلمانوں کے ساتھ ساتھ دیگر قوموں کے بچے بھی تعلیم حاصل کرتے ہیں، گلزار اعظمی نے بتایا کہ  ان کے لگائے گئے  اس طرح کے الزامات  پر مسلمانوں کو سخت اعتراض ہے اور جمعیۃ علماء بطور مسلم نمائندہ تنظیم اس پر سخت اعتراض کرتی ہے ۔

گلزار اعظمی نے کہاکہ ایڈوکیٹ شاہد ندیم کے ذریعہ بھیجے گئے نوٹس میں یہ کہا گیا ہیکہ وسیم رضوی نے بغیر کسی پختہ ثبوت و اعداد و شمار کے وزیر اعظم اور وزیر اعلی کو خط لکھ کر انہیں ہندوستانی مسلمانوں کے تعلق سے شدید گمراہ کرنے کی کوشش کی ہے جس کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے۔

گلزار اعظمی نے کہا کہ ہندوستان کے مختلف صوبوں میں قائم دینی مدارس میں اسلام کی بنیادی تعلیم کے ساتھ حب الوطنی اور دیگر قوموں کے درمیان خوشگوار تعلقات کی تعلیم دی جاتی ہے نیز آج تک ایسا کوئی بھی ثبوت نہیں ملا ہے جس سے یہ ثابت ہوتا ہو کہ دینی مدارس میں دہشت گردی کی تعلیم دی جاتی ہے اور مدارس میں سے دہشت گرد جنم لیتے ہیں۔

یوپی شیعہ وقف بورڈ کے چیئرمین وسیم رضوی کو بھیجے گئے قانونی نوٹس کے تعلق سے ایڈوکیٹ شاہد ندیم نے کہا کہ انہوں نے صدر جمعیۃ علماء مہاراشٹر مولانا مستقیم احسن اعظمی کی ہدایت پر نوٹس ارسال کیا ہے جس میں وسیم رضوی کو بیس کروڑ روپیہ ہرجانہ ادا کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے ان سے مسلمانوں سے مشروط معافی طلب کی گئی ہے بشرط دیگر قانونی چارہ جوئی کاانتبابھی دیا گیا ۔

ایڈوکیٹ شاہد ندیم نے کہا کہ وسیم رضوی کے مکتوب کے بعد سے ایک جانب جہاں عام مسلمانوں میں بے چینی پھیلی ہوئی ہے وہیں مدارس کے استاتذہ بھی فکر مند ہیں کہ ان کی تعلیمات پر بھی الزام تراشی کی گئی ہے جس کے سدباب کے لئے  وسیم رضوی کو لیگل نوٹس ارسال کرتے ہوئے ان سے معافی کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ9؍ جنوری کو تنازعہ میں رہنے کے لیئے مشہور اور بھارتیہ جنتا پارٹی کی  خوشنودی میں مشغول وسیم رضوی نے وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر اعلی اتر پردیش کو خطوط ارسال کرکے ان سے مطالبہ کیا تھا کہ دینی مدارس کو عصری تعلیم(پبلک اسکول) سے جوڑدیا جائے کیونکہ دینی مداس میں دہشت گردی کی ٹریننگ دی جاتی ہے وغیرہ وغیرہ جس کے بعد پورے ملک سے وسیم رضوی کے خلاف آوازیں اٹھنے لگی تھیں ۔

ایک نظر اس پر بھی

مالیگاؤں ۲۰۰۸ ء بم دھماکہ معاملہ،زخمیوں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں کی گواہی کا سلسلہ جاری، ڈاکٹر سعید فیضی نے گواہی بھتہ پبلک ویلفئر فنڈ میں عطیہ کردیا

مالیگاؤں ۲۰۰۸ ء بم دھماکہ معاملے میں خصوصی این آئی اے عدالت میں بم دھماکوں میں زخمی ہونے والوں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں کی گواہی بددستور جاری ہے جس کے دوران آج مالیگاؤں کے مشہور و سینئر ڈاکٹر سعید فیضی کی گواہی عمل میں آئی

دواؤں کا معیار اور نوجوانوں کو روزگار انتہائی اہم مسئلہ: پروفیسر عبداللطیف، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس (اسٹوڈنٹس وِنگ) کی تشکیل

آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس کی ایک میٹنگ آج ابن سینا اکیڈمی، دودھ پور، علی گڑھ میں منعقد ہوئی، جس کی صدارت پروفیسر عبداللطیف (قومی نائب صدر، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس، اکیڈمک وِنگ) نے کی۔ جبکہ نظامت کے فرائض ڈاکٹر سنبل رحمن (قومی صدر، آل انڈیا یونانی طبّی کانگریس، خواتین ...

سکھ فسادات: میرے خلاف نہ کوئی ایف آئی آر اور نہ ہی چارج شیٹ، کمل ناتھ نے کہا،بی جے پی جھوٹ پھیلارہی ہے

مدھیہ پردیش کے وزیراعلیٰ کمل ناتھ نے 1984 کے سکھ فسادات پر اٹھ رہے سوالوں پر جواب دیاہے۔کمل ناتھ نے کہاہے کہ 1984 کے سکھ فسادات میں ان کے خلاف کوئی بھی ایف آئی آر یا چارج شیٹ نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ اب اس مسئلے کواٹھانے کے پیچھے صرف سیاست ہے۔انہوں نے کہاکہ جس وقت میں کانگریس کا جنرل ...

بریلی: ایک ساتھ 58 ہندو، مسلم اور سکھ لڑکیوں کی شادی

اجتماعی شادیوں کے بارے میں تو آپ بہت سن لیں گے لیکن یوپی کے بریلی میں ایک منفرد شادی دیکھنے کوملی ہے۔بریلی میں منعقد ایک پروگرام میں ایک ساتھ ہندو، مسلم اور سکھ کمیونٹی کی غریب لڑکیوں کی شادی کرائی گئی۔ایک ساتھ جب گھوڑی پر بیٹھ کر 58 دولہا نکلے تو ہر کوئی اس منفرد بارات کو ...

1984-1993-2002فسادات: اقلیتوں کو نشانہ بنانے میں سیاسی رہنماؤں اور پولیس کی ملی بھگت تھی : ہائی کورٹ

دہلی ہائی کورٹ نے 1984سکھ مخالف فسادات معاملے کے فیصلے میں دوسرے فسادات کولے کر بھی بے حد سخت تبصرہ کیاہے ۔ جسٹس ایس مرلی دھر اور جسٹس ونود کوئل کی بنچ نے پیر کو سجن کمار کو فسادات پھیلانے اور سازش رچنے کا مجرم قرار دیتے ہوئے عمر قید کی سزا سنائی ۔ کورٹ نے کہا کہ سال 1984 میں نومبر کے ...