کرتارپور کوریڈور کو شروع کرنے کو لے کر دونوں ممالک کے درمیان ہوئی رضامندی، اگلی میٹنگ دو اپریل کو

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 15th March 2019, 12:18 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی، 14 مارچ(ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) پلوامہ دہشت گردانہ حملے کے ٹھیک ایک ماہ بعد ہندوستان اور پاکستان کے حکام کے درمیان میٹنگ ہوئی۔یہ اجلاس ہندوستانی سرحد کے تحت اٹاری کے انٹیگریٹڈ چیک پوسٹ (آئی سی پی) پر منعقد ہوئی۔اس اجلاس میں ہندوستان کی جانب سے وزارت داخلہ، وزارت خارجہ، ہندوستانی قومی ہائی اتھارٹی و دیگر متعلقہ محکموں کے افسران ہندوستان کی نمائندگی میں شامل ہوئے تو وہیں پاکستان کی جانب سے جنوبی ایشیا ڈائریکٹر جنرل محمد فیصل کی قیادت میں 18 رکنی جماعتوں نے حصہ لیا۔ اس اجلاس میں کرتارپور کوریڈور پر دونوں ممالک کے حکام کے درمیان تخلیقی مذاکرات ہوئی، دونوں ممالک نے کرتارپور کوریڈور جلد تبدیل کرنے کی سمت میں کام کرنے پر اتفاق کیا۔اجلاس کے بعد کرتارپور میں منعقد ہندوستان پاکستان میٹنگ میں شامل ہوئے وزارت داخلہ کے سیکرٹری ایس سی ایل داس نے کہا کہ ہم نے روزانہ کم از کم 5 ہزار حجاج کرام کی سفر کا بندوبست کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔جس میں نہ صرف ہندوستانی شامل ہوں گے بلکہ ہندوستانی نژاد وہ لوگ بھی شامل ہیں جو دیگر ممالک میں رہتے ہیں۔اگلی میٹنگ 2 اپریل کو ہوگی۔غور طلب ہے کہ ہندوستان کی طرف سے پاکستان میں گھس کر جیش محمد کے تربیتی کیمپوں پر فضائی حملہ کرنے اور اس کے بعد ہندوستان کی جوابی کارروائی کے بعد دونوں ملکوں کے درمیان بڑھی ہوئی کشیدگی کے پیش نظر یہ میٹنگ منعقد کی گئی۔

ایک نظر اس پر بھی

گذشتہ دس سالوں سے جیل میں مقید مسلم نوجوان کو قانونی کی تعلیم جاری رکھنے کی اجازت، جمعیۃ علماء نے قانونی امداد کے ساتھ ساتھ تعلیمی وظیفہ بھی دیا، پہلے مرحلہ کا نتیجہ اطمنان بخش: گلزار اعظمی

ممبئی کی خصوصی مکوکا(این آئی اے) عدالت نے جھوٹے دہشت گردانہ معاملے کا سامنا کررہے ایک مسلم نوجوان کو قانون کی تعلیم جاری رکھنے اور اسے امتحان میں شرکت کرنے کی مشروط اجازت دی۔13-7 ممبئی سلسلہ وار بم دھماکہ معاملے کا سامنا کررہے ملزم ندیم اختر کو ایل ایل بی پہلے سال کے دوسرے مرحلہ ...

مرکز نے سپریم کورٹ سے کہا، رافیل معاہدہ میں پی ایم اوکادخل نہیں، تمام عرضیاں ہوں مسترد

لوک سبھا انتخابات میں اپوزیشن نے رافیل لڑاکا طیارے معاہدے میں بے ضابطگیوں کا الزام لگاتے ہوئے اسے سب سے بڑا مسئلہ بنایا۔کانگریس صدر راہل گاندھی نے اس معاہدے کے لئے براہ راست طور پر وزیر اعظم نریندر مودی کو ذمہ دار بتایا۔

جب تک کجریوال ہیں، دہلی کو مکمل ریاست کا درجہ دینے کی نہیں سوچ سکتے:ہرش وردھن

دہلی کی چاندنی چوک سیٹ سے تقریباََ228000 ووٹوں سے جیت کر دوبارہ ایم پی بنے مرکزی وزیر ڈاکٹر ہرش وردھن نے بات کی۔دہلی کو مکمل ریاست کا درجہ دینے کے معاملے پر انہوں نے کہا کہ جب تک اروند کجریوال وزیر اعلی ہیں، اس وقت تک اس کے بارے میں سوچا بھی نہیں جا سکتا۔