مودی حکومت کے خلاف جنتر منتر پر مزدوروں و کسانوں کا امنڈا سیلاب

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 6th September 2018, 11:30 AM | ملکی خبریں |

نئی دہلی،6ستمبر(ایس او نیوز؍ایجنسی) ملک کی راجدھانی دہلی چہارشنبہ کے روز مزدور۔کسان ریلی کی وجہ سے لال رنگ میں رنگی ہوئی نظر آئی۔ منڈی ہاؤس سے لے کر جنتر منتر، پارلیمنٹ اسٹریٹ، کناٹ پلیس، اشوکا روڈ، رائے سینا روڈ یعنی سنٹرل دہلی کے تمام اہم مراکز پرآج لاکھوں کی تعداد میں 26 ریاستوں سے آئے کسان۔مزدور، آنگن واڑی کارکن، آشا کارکن، بی ایس این ایل ملازمین، کنسٹرکشن ورکرس، بیڑی مزدور، اسکول ٹیچر، مڈ ڈے میل بنانے والے، کوئلہ مزدور، اسٹیل مزدور، پلانٹیشن مزدور سمیت کسان اور مزدور ہی نظر آ رہے تھے۔ ملک کی الگ الگ زبانوں میں ایک ہی طرح کے نعرے لگ رہے تھے۔ ’نیتی بدلو، نہیں تو جنتا سرکار بدل دے گی‘، ’کارپوریٹ لوٹ پر ٹکی مودی حکومت، گدی چھوڑو گدی چھوڑو‘۔ یہ ریلی دراصل سی پی ایم سے منسلک عوامی تنظیموں کی تھی جس میں اہم کردار سنٹر فار انڈین ٹریڈ یونین (سی آئی اے ڈبلیو یو) نے ادا کیا۔ یہ سارے سی پی ایم سے جڑی عوامی تنظیمیں ہیں۔

اکھل بھارتیہ کسان سبھا (اے آئی کے ایس) کے جنرل سکریٹری حنان مولا نے بتایا کہ ملک کا مزدور، کسان وپیداکارکاشتکاروں کا کہنا ہے کہ مودی حکومت ملک کے عوام کے خلاف کام کر رہی ہے، لہٰذا گدی چھوڑدے۔ انھوں نے کہا کہ کسانوں کے دو بڑے مطالبات ہیں۔ پہلا لاگت کی ڈیڑھ گنا تائیدی قیمت اور خرید کی ضمانت دی جائے اور قرض معافی اور کھیتی کرنے والے کو زمین دی جائے۔ زراعتی مزدوروں کا مطالبہ کہ سال میں کم از کم 200 دن کام اور منریگا کے تحت 300 روپے مزدوری دی جائے اور زراعتی مزدوروں کیلئے ایک سنٹرل قانون لایا جائے۔ اس کے علاوہ پبلک سیکٹر کو جس طرح سے پرائیویٹ سیکٹر کو فروخت کیا جا رہا ہے، ہم اس کی مخالفت کرتے ہیں۔

اس ریلی سے پہلے ملک بھر سے دو کروڑ دستخط جمع کئے گئے اور مختلف طبقوں کو غریب۔مزدور۔کسان مخالف پالیسیوں کے خلاف متحد کیا گیا۔ بہار کے بھبھوا سے آئی کرن دیوی نے بتایا کہ ’’نتیش حکومت ہو یا مودی حکومت، سب غریبوں پر ظلم کر رہی ہے۔ منریگا کا کام ٹھپ ہے، ملازمت نہیں ہے، مہنگائی سے ہم سب مر رہے ہیں۔ ایسے دیش نہیں چل سکتا۔ حکومت بدلنی پڑے گی۔

‘‘سی آئی ٹی یو کی ہیم لتا نے بتایا کہ ملک بھر میں مزدوروں کی حالت خراب ہے۔ بڑے پیمانے پر ملازمتیں کم کر دی گئی ہیں ۔ مودی حکومت کی مزدور مخالف پالیسیوں نے مزدور سڑک پر اترنے کے لیے مجبورہیں۔ آنگن واڑی فیڈریشن کی اے. آر. سندھو نے بتایا کہ ’’ملک بھر سے آنگن واڑی ورکر یہاں آئی ہیں، کیونکہ وہ سب مزدور ہیں۔ ہمیں حکومت کچھ بھی نہیں سمجھتی۔ حکومتیں سبھی منصوبوں کو ہم سے نافذ کروانے پر آمادہ رہتی ہیں، لیکن سہولتیں نہیں دیتیں۔

‘‘مرکز کی مودی حکومت کو مزدور مخالف، کسان مخالف اور ترقی مخالف قرار دینے میں یہ ریلی بہت حد تک کامیاب نظر آئی۔ خاص طور سے اس میں بیڑی مزدوروں سے لے کر بی ایس این ایل ملازمین اور کوئلہ مزدوروں کا کسانوں و مزدوروں کے ساتھ اترنا ایک الگ قسم کا اشارہ دیتا ہے جو آنے والے وقت میں ملک کی سیاست کی سمت طے کرتا نظر آ رہا ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

پاکستان سے کرکٹ میچ نہ کھیلنا ہتھیار ڈالنے سے زیادہ برا ہوگا: ششی تھرور

کرکٹ ورلڈ کپ میں ہندستانی کرکٹ ٹیم کے پاکستان کے ساتھ میچ نہیں کھیلنے کے چہار سو مطالبہ کے درمیان کانگریس لیڈر ششی تھرور نے متنازعہ بیان دیتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان کے خلاف میچ نہیں کھیلنا ہتھیار ڈالنے سے بھی بدتر ہوگا اور یہ بغیر لڑے ہی ہارنے جیسا ہوگا۔

کشمیر میں حالات کشیدہ، 100 اضافی کمپنیاں روانہ، لوگوں میں خوف و ہراس

   وادی کشمیر میں انتظامیہ نے علیحدگی پسند اور مذہبی جماعتوں بالخصوص جماعت اسلامی کے لیڈران کے خلاف وسیع پیمانے پر کریک ڈاﺅن شروع کردیا ہے۔ اس کے علاوہ مرکزی حکومت نے ہنگامی بنیادوں پر مرکزی نیم فوجی دستوں کی 100 اضافی کمپنیاں کشمیر روانہ کرنے کے احکامات جاری کردئیے ہیں۔ ...

دیگر جماعتوں کی طرح ٹی آر ایس نے بھی خواتین کو مساوی مقام نہیں دیا،کابینہ میں خواتین کی نمائندگی کیلئے کے سی آر پر اثر انداز نہیں ہوسکتی۔ رکن پارلیمنٹ کے کویتا کا بیان

چیف منسٹر کے چندر شیکھر راو کی جانب سے کابینہ میں ایک خاتون رکن کو شامل نہ کرنے پر تنقیدوں کے دوران ان کی دختر و ٹی آر ایس رکن پارلیمنٹ کے کویتا نے آج کہا کہ وہ بھی خاتون رکن کو کابینہ میں شامل کرنے کیلئے اپنے والد پر اثر انداز نہیں ہوسکتیں۔

شہیدوں کے گھر ’درد کے دریا کا سیلاب‘ تھا اور مودی دریا میں شوٹنگ کر رہے تھے: راہل گاندھی

کانگریس صدر راہل گاندھی نے پلوامہ دہشت گردانہ حملے والے دن وزیر اعظم نریندر مودی کے ایک چینل کے لئے فلم کی شوٹنگ کرنے سے متعلق خبروں کو لے کر جمعہ کو ان پر حملہ بولا اور الزام لگایا کہ جب شہیدوں کے گھر دردکے دریا کا سیلاب تھا تو پرائم ٹائم منسٹر 'ہنستے ہوئے دریا میں شوٹنگ کر رہے ...

عظیم اتحادملک کے لیے اچھانہیں،اپوزیشن کے پاس کوئی نظریہ اورکوئی لیڈرنہیں ہے، امت شاہ کوپھرمہاگٹھ بندھن سے شکایت،کانگریس اورلیفٹ کونشانہ بنایا

جھک کرلوجپا،شیوسینا،جدیواورڈی ایم کے کے ساتھ اتحادکرنے والی بی جے پی صدر امت شاہ نے جمعہ کو اپوزیشن پارٹیوں کے مجوزہ مہاگٹھ بندھن پر حملہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ ملک کے لیے اچھا نہیں ہے۔