اگسٹا ڈیل : شیوسینا نے کہا، لوک سبھا انتخابات سے پہلے سونیا، راہل کو گھیرنے کی کوشش

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 3rd January 2019, 8:58 AM | ملکی خبریں |

ممبئی،3 جنوری (ایس او نیوز؍آئی این ایس انڈیا) شیوسینا نے بدھ کو الزام لگایا کہ اگسٹا ویسٹ لینڈ معاملے میں مبینہ بچولیے کرشچن مشیل کے دعوے کی بنیاد پر آئندہ لوک سبھا انتخابات سے پہلے کانگریس لیڈر سونیا گاندھی اور راہل گاندھی کو گھیرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

مرکز اور مہاراشٹر میں بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی اتحادی پارٹی شیوسینا نے الزام لگایا کہ سیاسی مخالفین کے خلاف سرکاری مشینری کا غلط استعمال کیا جا رہا ہے۔اگسٹا ویسٹ لینڈ وی وی آئی پی ہیلی کاپٹر کیس کی سماعت کر رہی دہلی کی ایک عدالت نے گزشتہ ہفتے ای ڈی کی حراست میں مشیل کو اپنے وکیل سے ملنے پر روک لگا دی تھی۔عدالت نے یہ قدم اس وقت اٹھایا جب ایجنسی نے کہا کہ مشیل قانونی سہولت کا غلط استعمال کرتے ہوئے وکلاء کو چٹ دے رہا ہے اورمسز گاندھی سے متعلق سوالات سے نمٹنے کے بارے میں رائے مانگ رہا ہے۔معاملے کی جانچ ای ڈی کر رہا ہے۔اس نے مشیل کی حراست مدت بڑھانے کا مطالبہ کرتے ہوئے دئیے گئے اپنے درخواست میں یہ بھی دعوی کیا تھا کہ مشیل نے پوچھ گچھ کے دوران ایک اطالوی عورت کے بیٹے کے بارے میں بتایا اور یہ بھی کہا کہ کس طرح وہ ملک کا اگلا وزیر اعظم بننے جا رہا ہے۔

شیوسینا نے اپنے الزام میں کہاکہ جب مشیل کی دبئی سے حوالگی ہوئی تھی، اس وقت پانچ ریاستوں میں انتخابی مہم چل رہی تھی اور بی جے پی خود ہی پریشان تھی۔وزیر اعظم نریندر مودی نے کچھ انتخابی ریلیوں میں اس بچولیے کا ذکر کیا تھا اور دعوی کیا تھا کہ کچھ دھماکے دار انکشافات ہوں گے اور وہ کسی کو بھی نہیں چھوڑے گی۔ اب ہمیں سمجھ آ رہا ہے کہ ان کا اشارہ کس طرف تھا۔
 

ایک نظر اس پر بھی

اپوزیشن کی جانب سے وزیراعظم کا اُمیدوارکون ؟ راہول گاندھی، مایاوتی یا ممتا بنرجی ؟

آنے والے لوک سبھا انتخابات میں اپوزیشن کی جانب سے وزیراعظم کے عہدے کا اُمیدوار کون ہوگا اس سوال کا جواب ہرکوئی تلاش کررہا ہے، ایسے میں سابق وزیر خارجہ اور کانگریس کے سابق سنئیر لیڈر نٹور سنگھ نے بڑا بیان دیتے ہوئے کہا ہے کہ  اس وقت بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) سربراہ مایاوتی ...

مدھیہ پردیش میں 5روپے، 13روپے کی ہوئی قرض معافی، کسانوں نے کہا،اتنی کی تو ہم بیڑی پی جاتے ہیں

مدھیہ پردیش میں جے کسان زراعت منصوبہ کے تحت کسانوں کے قرض معافی کے فارم بھرنے لگے ہیں لیکن کسانوں کو اس فہرست سے لیکن جوفہرست سرکاری دفاترمیں چپکائی جارہی ہے اس سے کسان کافی پریشان ہیں،