رائچور: میڈیکل کالج میں طلبہ کے دو گروہوں میں جھڑپ

Source: S.O. News Service | Published on 21st September 2022, 2:06 PM | ریاستی خبریں |

رائچور، 21؍ستمبر (ایس او نیوز؍ایجنسی) کرناٹک کے رائچور شہر کے مضافات میں واقع  ایک پیرا میڈیکل کالج میں  سوشل میڈیا پوسٹ کے غلط استعمال کو لے کر تشدد پھوٹ پڑنے کی اطلاع موصول ہوئی ہے۔ واردات منگل کو پیش آئی۔

 ذرائع کے مطابق  رائچور کے مضافات میں واقع نوودیا میڈیکل کالج کے طلبہ  کے درمیان تشدد کی واردات پیش آئی جس میں  ایک دوسرے پر حملہ کرنے کے لئے  طلبہ نےآہنی سلاخوں کا استعمال کیا  جس میں ے دو طالب علم زخمی ہوئے ہیں۔ ایک طالب علم کے سر پر شدید چوٹ آئی اور اسے 12 ٹانکے لگے۔ ایک اور طالب علم کے ماتھے پر چوٹیں آئیں ہیں  جن  کی شناخت شنکر اور شمبھولنگا کے طورپر ہوئی ہے۔ زخمیوں کا نوودیا ہسپتال میں علاج کیا جارہا ہے۔ حملہ آور کی شناخت روہت کے طورپر کی گئی ہے جو بی ایس سی نرسنگ کورس کا طالب علم ہے۔

ذرائع کے مطابق  شنکر اور شمبھولنگا نے روہت کے موبائل اسٹیٹس کا اسکرین شاٹ لیا تھا۔ روہت نے اپنی سالگرہ منانے اپنی ماں کی تصویر اپنے اسٹیٹس میں لگائی تھی۔ شنکر اور شمبھولنگا نے مبینہ طورپر اس تصویر کو ایڈیٹ کیا اور اس میں محبت کی علامتیں شامل کرکے  اسے کیمپس میں وائرل کر دیا۔

اس پر روہت اور اس کے دوست مشتعل ہو گئے اور دونوں پر حملہ کر دیا جو گینگ وار میں تبدیل ہو گیا۔ ذرائع نے بتایا کہ تشدد پروفیسروں کے سامنے ہوا اور اس واقعہ میں کئی لوگ زخمی ہوئے ہیں۔ نیتاج نگر پولیس پورے معاملے کی جانچ کر رہی ہے۔

ایک نظر اس پر بھی

صدر جمہوریہ دروپدی مرمو نے میسور و کے دس روزہ دسہرہ تقریبات کا افتتاح کیا

دوماہ کی تیاریوں کے بعد آج بروز پیر صدر جمہوریہ دروپدی مرمو نے میسور کے چامنڈی پہاڑ پر دس روزہ دسہرہ تقریبات کا چامنڈیشوری دیوی کی مورتی پر پھول نچھاور کرکے افتتاح کیا۔ پہلے صدر جمہوریہ نے چامنڈیشوری دیوی کے درشن کئے اور اس مندر کی تاریخ کے تعلق سے تفصیل سے جانکاری حاصل کی۔

ذہنی دباؤ بیسویں صدی کا ایک مہلک مرض؛ آئیٹا گلبرگہ کے ورک شاپ سے ڈاکٹر عرفان مہا گا وی کا خطاب

نئے دور کی شدید ترین بیماریوں میں ذہنی دباؤ اور اس سے پیدا ہونے والے اثرات کو مہلک امراض میں شمار کیا جاتا ہے ۔ روز مرہ کی مشینی زندگی میں ذہنی دباؤ  میں بہت زیادہ اضافہ ہوا ہے ۔ لیکن اس کو کیسے کم کیا جائے اس پر غور کر نے اور اس سلسلے میں کوشش کرنے کی ضرورت ہے ۔

پی ایف آئی پر ای ڈی اور این آئی اے کے کریک ڈاون کے بعد ایس ڈی پی آئی نے کہا؛ ایجنسیوں نے کبھی بھی آر ایس ایس اور اس سے منسلک تنظیموں پر چھاپہ نہیں مارا

 سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (SDPI) کرناٹک یونٹ نے بنگلور میں اپنے ریاستی مرکزی دفتر میں ایک پریس کانفرنس کا انعقاد کرتے ہوئے الزام لگایا کہ ای ڈی اور این آئی اے نے کبھی بھی آر ایس ایس اور اس سے منسلک تنظیموں پر چھاپہ نہیں مارا بلکہ صرف پاپولرفرنٹ آف انڈیا کو ہی نشانہ بنایا ...