اگلا الیکشن نہیں لڑنے کے اپنے بیان پر قائم ہوں: سدارمیا

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 15th May 2019, 11:50 AM | ریاستی خبریں |

بنگلور،15/ مئی (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا)  کانگریس کے سینئر لیڈر سدارمیا نے انہیں کرناٹک کا وزیر اعلی دوبارہ بنانے کے پارٹی میں اٹھ رہے مطالبات کو منگل کو حامیوں کی خواہش کا اظہار قرار دیا،تاہم انہوں نے یہ بھی کہا کہ وہ اب بھی اپنے اس وعدے پر قائم ہیں کہ وہ اگلا اسمبلی انتخابات نہیں لڑیں گے۔کانگریس پارٹی اراکین کے لیڈر نے کہا کہ انہیں اپنے حامیوں کی جانب سے کی جا رہی مانگ میں کچھ بھی غلط نہیں لگتا۔سابق وزیر اعلی نے کہاکہ میں نے انتہائی صاف کر دیا ہے کہ وزیر اعلی کا عہدہ اب خالی نہیں ہے (لہذا میرے وزیر اعلی بننے کا سوال ہی نہیں ہے)،ہمارے لوگ کہہ رہے ہیں کہ اگلے انتخابات کے بعد مجھے پھر سے وزیر اعلی بننا چاہئے۔ صحافیوں سے بات چیت میں کانگریس لیڈر نے کہاکہ کیا ایسی کوئی چیز ہے کہ اگر لوگ اپنا آشیرواد دیں تو مجھے (وزیر اعلی) نہیں بننا چاہئے؟ یہ کہاں ہے کہ اگر لوگ ہماری پارٹی کو آشیرواد دیں تو مجھے نہیں بننا چاہئے؟۔انہوں نے کہاکہ کیا انہوں نے (حامیوں نے) کہا ہے کہ مجھے ابھی بننا چاہئے؟ وہ کہہ رہے ہیں کہ سال 2023 کے انتخابات میں اگر لوگ کانگریس کو آشیرواد دیتے ہیں تو سدارمیا وزیر اعلی بن سکتے ہیں،اس میں غلط کیا ہے؟۔ بہر حال سدارمیا نے کہا کہ وہ اپنے اس وعدے پر قائم ہیں کہ وہ اگلا اسمبلی انتخابات نہیں لڑیں گے۔انہوں نے کہاکہ میں نے کہا ہے کہ میں اگلا الیکشن نہیں لڑوں گا، لیکن کیا کچھ ایسا ہے کہ ان (حامیوں کو) بھی وہی کہنا چاہئے جو میں نے کہا ہے،وہ اپنی رائے ظاہر کر رہے ہیں۔ سدارمیا نے کہاکہ میں نے اپنی رائے ظاہر کر دی ہے کہ میں اگلا الیکشن نہیں لڑوں گا، میں آج بھی اس پر قائم ہوں۔ مئی 2018 میں ہوئے اسمبلی انتخابات سے قبل سدارمیا نے کہا تھا کہ اس بات کا مکمل امکان ہے کہ یہ ان کا آخری انتخابات ہو گا۔اس سے پہلے، 2013 کے اسمبلی انتخابات کے دوران بھی سدارمیا نے کہا تھا کہ یہ ان کا آخری الیکشن ہے۔اس الیکشن میں جیتنے کے بعد وہ وزیر اعلی بنے تھے۔پچھلے کئی دنوں سے کانگریس کے کئی رکن اسمبلی چاہتے ہیں کہ سدارمیا ایک بار پھر وزیر اعلی بنیں۔اس سے کرناٹک کی مخلوط حکومت میں شامل جنتا دل سیکولر (جے ڈی ایس) کے رہنماؤں اور وزیر اعلی ایچ ڈی کمارسوامی کی ابرو تن گئی ہیں۔

ایک نظر اس پر بھی

ریاستی حکومت نے آئی ایم اے فراڈ کیس کی جانچ سی بی آئی کے حوالے کیا

ریاست کی سابقہ کانگریس جے ڈی ایس حکومت کے دور میں کی گئی مبینہ ٹیلی فون ٹیپنگ کی سی بی آئی جانچ کے ا حکامات صادر کرنے کے دودن بعد ہی آج ریاستی حکومت نے کروڑوں روپیوں کے آئی ایم اے فراڈ کیس کی جانچ سی بی آئی کے سپرد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

کیا شمالی کینرا سے شیورام ہیبار کے لئے وزارت کا قلمدان محفوظ رکھا گیا ہے؟

کرناٹکاکے وزیراعلیٰ  ایڈی یورپا نے دو دن پہلے اپنی کابینہ کی جو تشکیل کی ہے اس میں ریاست کے 13اضلاع کو اہمیت دیتے ہوئے وہاں کے نمائندوں کو وزارتی قلمدان سے نوازا گیا ہے۔اور بقیہ 17اضلاع کو ابھی کابینہ میں نمائندگی نہیں دی گئی ہے۔

بنگلورو: نشے میں دھت شخص نے فٹ پاتھ پر 7 لوگوں کو کچل دیا

شراب کے نشے میں دھت ایک شخص نے بہت تیز رفتار کار فٹ پاتھ پر چڑھا دی اور فٹ پاتھ پر چل رہے 7 افراد اس کار کی زد میں آ گئے۔ زخمیوں کو فوراً اسپتال پہنچایا گیا اور خبر لکھے جانے تک ان لوگوں کی حلات نازک بنی ہوئی ہے۔ یہ واقعہ بینگلورو کے ایچ ایس آر لے آؤٹ علاقے کا ہے۔