کیا وزیرمنکال وئیدیا اندھوں کے شہر میں آئینے بیچ رہے ہیں ؟ بھٹکل کے مسلمان قابل ستائش ۔۔۔۔۔ (کراولی منجاو کی خصوصی رپورٹ)

Source: S.O. News Service | Published on 1st February 2024, 11:33 PM | ساحلی خبریں | اسپیشل رپورٹس |

کاروار :یکم فروری   (ایس اؤ نیوز )ضلع نگراں کاروزیر منکال وئیدیا کا کہنا ہے کہ کاروار میں ہر سال منعقد ہونےو الے کراولی اتسوا میں دیری اس لئے ہورہی ہے کہ  وزیرا علیٰ کا وقت طئے نہیں ہورہاہے۔ جب کہ  ضلع نگراں کار وزیر اس سے پہلے بھی آئی آر بی شاہراہ کی جدوجہد کےلئے عوامی تعاون حاصل نہ  ہونے کا بہانہ بتاتے ہوئے  عوام کوہی  ذمہ دار ٹہرایا تھا۔وزیر موصوف کے حالیہ  سیاسی چالیں ، بیانات اور رویہ  پر غور کریں تواندھوں کے شہر میں آئینے بیچنے کی طرح لگتاہے۔

اب  سب کے سامنے ایک سوال پیدا ہورہاہے کہ وزیر اعلیٰ کو ’بیٹے ‘ کہہ کر ہتک کرنے والے اننت کمار ہیگڈے کا جس وزیر نے  کوئی جواب نہ دیا ہو آخر وہ  وزیر اعلیٰ کا استقبال کرنے کے لئے  کھڑا ہوگا  ؟۔ ’اہندا‘ نامی تنظیم کے ذریعے کانگریس   کو اقتدارتک  پہنچانے والے وزیرا علیٰ کو ایک ایم پی ’’بیٹے ‘‘ کہہ کر ہتک کرنے پر ضلع نگراں کار وزیر کی حیثیت سے اس کا جواب دیں گے تو سیاست کیسے ہوگی ؟ اگر ایسا ہے تو پھرسوال پیدا ہوتاہے کہ ’’کیا آپ کانگریس پارٹی کے سیاسی نمائندے ہیں ؟‘‘یا کانگریس مٹھ کے سوامی ہیں ؟۔

وزیر موصوف شروع شروع میں جب وزیر کا حلف لئے تھے تو آئی آر بی کا ٹول بندکراؤنگا، آئی آر بی شاہراہ کی تعمیر مکمل ہونے تک ٹول فیس کی ادائیگی نہیں ہوگی جیسی   بڑی ٹھوس  باتیں کہیں تھیں۔ اب وہی آئی آربی کسی کی پرواہ نہ کرتے ہوئے اپنا کام روک کر پچھلی سرکار سے زیادہ گہری نیند میں ہے۔یہ توسب کو پتہ   ہے کہ  آئی آر بی کمپنی مرکزی وزیر نتین گڈکری کے خاندان والوں  کی ہے اور پچھلی بی جےپی کی سرکارمیں کمپنی اپنا کام جاری رکھے ہوئے تھی۔کانگریس کی نئی  سرکاربنی تو امید تھی کہ کام رفتارپکڑے گا۔ لیکن تعمیری کام پچھلی سرکار سے بھی زیادہ سست روی کا شکار ہے۔عوام مذاق اڑا رہے ہیں کہ  وزیر موصوف ٹول تو بند نہیں کراسکے۔ اگرانہیں  موقع ملا تو یہ ٹول ناکہ  ہی من پسند وزیر کے ضلع میں ٹرانسفر ضرورکروادیتے۔

وزیرا علیٰ سدرامیا کو’بیٹے ‘ کہہ کر مخاطب کرنےو الے ایم پی کے خلاف ریاست کے دیگر وزراء نے منہ توڑ جواب دیالیکن خود  ایم پی کے ضلع نگراں کاروزیر کی خاموشی بڑا دکھ دینے والی ہے۔ ذرائع کی مانیں تو وزیرا علیٰ نے اپنے دوستوں کے درمیان جب متعلقہ ایم پی کا ذکر چھڑا تو وزیرا علیٰ نے بڑے دکھ کے ساتھ کہا کہ میں ایک طرف  ماہی گیروں کو پسماندہ ذات میں شامل کرنے کی کوشش میں ہوں، دوسری طرف ایک ایم پی مجھے ’بیٹے ‘ کہہ کر میری ہتک کرتاہے اور ہمارے ضلع نگراں کار وزیرکووہی ایم پی بہت پسند ہے؟ ۔

اگر  ضلع کی ترقی یا کروالی اتسوا کی دعوت دینے کےلئے وزیر اعلیٰ کا سامنا ہوا تووزیر منکال وئیدیا کو یقینی طورپر خوف ستارہاہوگا کہ اگر وزیر اعلیٰ نے پوچھا کہ  ’’کیا تم وہی ہو، جس نے  رام کے تعلق سے  بات کرنےو الے کی ذہنی حالت ٹھیک نہ ہونے کی بات کہی تھی  ؟،کیا وہ تم ہی ہو جس نے  ہماری کابینہ کے وزیر راجنا کے خلاف تنقید کی تھی ؟، کیا تم ہی  ہماری کابینہ  کے وہ وزیر ہو، جب  مجھے ’بیٹے ‘ کہہ کر مخاطب کیاگیا تو  اُس کو جواب نہیں دیا ؟ کیا تم وہی ہو جو  ہماری پارٹی میں رہ کر  بی جےپی کا نمائندہ ہے ؟،   اس طرح کے سوالات اگر وزیراعلیٰ پوچھیں گے تو کیا جواب دیں گے ؟ 

ویسے  ضلع کی طرف سے  کاروار کے رکن اسمبلی ستیش سئیل کو وزیر بننا تھا، لیکن ماہی گیر طبقے سے کوئی دوسرا رکن اسمبلی نہ ہونے کی وجہ  سے  منکال وئیدیا کو وزیر بنایاگیا ہے۔ لیکن اپنی وزارت صرف کمانے اور انتظامیہ کو اپنی پکڑ میں لے کراپنا  کام نکالنے کے لئے استعمال کررہے ہیں۔ اسی  سے بیزار ہوکر کئی افسران ضلع سے اپنا   تبادلہ دوسری طرف کرانے کی کوشش کئے جانےکی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔

 اقلیتوں کےا حسان کو بہت جلد بھلا دیا :موصوف وزیر کی جیت میں بھٹکل ودھان سبھا حلقہ کے سو فی صد اقلیتوں کارول بہت معنی رکھتاہے، انہی کے مکمل تعاون سے وہ رکن اسمبلی بنے ہیں،  بالخصوص  مسلم طبقہ نے  اس بار جے  ڈی ایس کی طرف سے الیکشن لڑنے والے عنایت اللہ شاہ بندری کو  نہ صرف میدان میں  نہیں اتارا  بلکہ اپنے تمام ووٹ کانگریس کی جھولی میں ڈالتے ہوئے منکال وئیدیا کو 30ہزار سے زائد ووٹوں سے جیت دلائی۔  لیکن  یہ کیسا انسان ہے کہ مسلمانوں کے احسان کو اتنی جلدی بھول گیا۔

ایم پی اننت کمارہیگڈے   علی الاعلان   بھٹکل کی مسجد کو ، ہندؤوں کی  کہہ کرتنازعہ کھڑا کرتاہےاور یہ اپنی جیت کو اننت کمار کا احسان سمجھ کر  خاموش رہتا ہے۔کیا ہے  دھوکہ نہیں ہے؟ یہ کانگریس کےہیں یا بی جےپی کے ہیں ؟،آخر ودھان سبھا  حلقہ کے اقلیتوں کی نمائندگی کون کرے گا ؟ کیا یہ وہی کانگریس کا نمائندہ ہےجس نے اقلیتوں  کے ووٹوں سے جیت حاصل کی ہے!اتنا سب ہونے کےبعد بھی بھٹکل کے مسلمان بھائیوں نے فرقہ وارانہ بھائی چارگی اور خیر خواہی کی خاطر جس امن و شانتی کا مظاہرہ کیا ہے وہ واقعی اللہ کی دی ہوئی تعلیمات کا اثر  ہے۔

(بشکریہ  کنڑا روزنامہ کراولی منجاو۔۔۔ کاروار)

ایک نظر اس پر بھی

بھٹکل میں ووٹر بیداری مہم؛ سرکاری افسران نے طلبہ کے ساتھ نکالی ریلی؛ سو فیصد ووٹنگ کویقینی بنانے کی کوششیں

بھٹکل میں  صد فیصد ووٹنگ کا ٹارگٹ لے کر   اُترکنڑاضلعی انتظامیہ،  ضلع پنچایت، بھٹکل تعلقہ انتظامیہ اور تعلقہ پنچایت کے زیراہتمام  بھٹکل کے سرکاری آفسران  نے کالج طلبہ کو ساتھ لے کر  ووٹنگ بیداری مہم  کے تحت شاندار ریلی نکالی اور عوام پر زور دیا کہ وہ  کسی بھی صورت میں اپنی ...

بھٹکل میں مسلم رپورٹروں کی طرف سے غیر مسلم رپورٹروں کوپیش کی گئی عید الفطر کی مٹھائیاں

ورکنگ جرنلسٹ اسوسی ایشن   بھٹکل  کے مسلم رپورٹروں کی طرف سے بھٹکل کے غیر مسلم رپورٹروں کو عید الفطر کی مناسبت سے مٹھائیاں تقسیم کی گئیں اور اُنہیں عید کے تعلق سے  معلومات فراہم کی گئیں۔

بھٹکل: پی یو سی دوم میں انجمن پی یو کالج(بوائز) کو سائنس اسٹریم میں ملی صد فیصد کامیابی

سکینڈ پی یو سی  سائنس اسٹریم میں  انجمن بوائز پی یو کالج کو صد فیصد کامیابی ملی ہے، اور 61  طلبہ میں سے سبھی 61 طلبہ کامیاب ہوگئے ہیں۔ اس بات کی اطلاع کالج پرنسپال  یوسف کولا  نے دی۔یاد رہے کہ 10 اپریل کو آن لائن کے ذریعے نتائج ظاہر کئے گئے تھے،  لیکن  اب    پی یو  بورڈ  کی طرف سے ...

کنداپور میں دستور کی حفاظت کے لئے دلت تنظیموں کی ریلی 

دیش کا دستور وضع کرنے والے ڈاکٹر بھیم راو امبیڈکر کے 133 ویں جنم دن پر  کنداپور شاستری سرکل کے پاس منعقدہ دلت تنظیموں اور دیگر ہم خیال اداروں کی مشترکہ ریلی سے خطاب کرتے ہوئے سینئر دانشور پروفیسر فنی راج نے کہا کہ اس وقت ملک میں دستوری مراعات اور حقوق کو ختم کرنے کی کوشش کی جا ...

منگلورو میں وزیر اعظم مودی کا زبردست روڈ شو 

پارلیمانی الیکشن میں منگلورو حلقے سے بی جے پی امیدوار کیپٹن برجیش چوٹا اور اڈپی - چکمگلورو حلقوں سے بی جے پی امیدوار کوٹا سرینواس پجاری کے حق میں تشہیری مہم کے لئے وزیر اعظم نریندرا مودی نے منگلورو شہر میں ایک زبردست روڈ شو کیا جس میں بی جے پی کارکنان، لیڈران اور عوام کے ایک جم ...

بھٹکل سنڈے مارکیٹ: بیوپاریوں کا سڑک پر قبضہ - ٹریفک کے لئے بڑا مسئلہ 

شہر بڑا ہو یا چھوٹا قصبہ ہفتہ واری مارکیٹ عوام کی ایک اہم ضرورت ہوتی ہے، جہاں آس پاس کے گاوں، قریوں سے آنے والے کسانوں کو مناسب داموں پر روزمرہ ضرورت کی چیزیں اور خاص کرکے ترکاری ، پھل فروٹ جیسی زرعی پیدوار فروخت کرنے اور عوام کو سستے داموں پر اسے خریدنے کا ایک اچھا موقع ملتا ہے ...

نئی زندگی چاہتا ہے بھٹکل کا صدیوں پرانا 'جمبور مٹھ تالاب'

بھٹکل کے اسار کیری، سونارکیری، بندر روڈ، ڈارنٹا سمیت کئی دیگر علاقوں کے لئے قدیم زمانے سے پینے اور استعمال کے صاف ستھرے پانی کا ایک اہم ذریعہ رہنے والے 'جمبور مٹھ تالاب' میں کچرے اور مٹی کے ڈھیر کی وجہ سے پانی کی مقدار بالکل کم ہوتی جا رہی ہے اور افسران کی بے توجہی کی وجہ سے پانی ...

بڑھتی نفرت کم ہوتی جمہوریت  ........ ڈاکٹر مظفر حسین غزالی

ملک میں عام انتخابات کی تاریخوں کا اعلان ہونے والا ہے ۔ انتخابی کمیشن الیکشن کی تاریخوں کے اعلان سے قبل تیاریوں میں مصروف ہے ۔ ملک میں کتنے ووٹرز ہیں، پچھلی بار سے اس بار کتنے نئے ووٹرز شامل ہوئے، نوجوان ووٹرز کی تعداد کتنی ہے، ایسے تمام اعداد و شمار آرہے ہیں ۔ سیاسی جماعتیں ...

مالی فراڈ کا نیا گھوٹالہ : "پِگ بُوچرنگ" - گزشتہ ایک سال میں 66 فیصد ہندوستانی ہوئے فریب کاری کا شکار۔۔۔۔۔۔۔(ایک تحقیقاتی رپورٹ)

ایکسپوژر مینجمنٹ کمپنی 'ٹینیبل' نے ایک نئی رپورٹ جاری کی ہے جس میں یہ انکشاف کیا گیا ہے کہ پچھلے سال تقریباً دو تہائی (66 فیصد) ہندوستانی افراد آن لائن ڈیٹنگ یا رومانس اسکینڈل کا شکار ہوئے ہیں، جن میں سے 81 فیصد کو مالی نقصان کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

مسلمان ہونا اب اس ملک میں گناہ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔از: ظفر آغا

انہدام اب ایک ’فیشن‘ بنتا جا رہا ہے۔ یہ ہم نہیں کہہ رہے بلکہ یہ مدھیہ پردیش ہائی کورٹ کا بیان ہے۔ بے شک مکان ہو یا دوکان ہو، ان کو بلڈوزر کے ذریعہ ڈھا دینا اب بی جے پی حکومت کے لیے ایک فیشن بن چکا ہے۔ لیکن عموماً اس فیشن کا نشانہ مسلم اقلیتی طبقہ ہی بنتا ہے۔ اس کی تازہ ترین مثال ...