کرناٹک کانگریس نے پی ایم مودی کے خلاف متنازعہ ٹویٹ کو ہٹا یا

Source: S.O. News Service | Published on 20th October 2021, 1:19 PM | ریاستی خبریں |

بنگلور،20؍اکتوبر (آئی این ایس انڈیا)کرناٹک کانگریس نے پی ایم مودی پر متنازعہ ٹویٹ کو شدید تنقید کے درمیان ہٹا دیا ہے۔ اس ٹویٹ میں پی ایم مودی کو انگوٹھا چھاپ یا ان پڑھ بتایا گیاتھا۔ کانگریس کی کرناٹک یونٹ نے ٹویٹ کو ایک نوسکھئیے کا کام قرار دیتے ہوئے حذف کردیا۔کرناٹک کانگریس کے صدر ڈی کے شیوکمار نے تسلیم کیا ہے کہ یہ تبصرہ مہذب اور سیاسی میدان میں پارلیمانی زبان کے خلاف ہے۔ بی جے پی نے اس ٹویٹ پر کانگریس یونٹ کو نشانہ بنایا تھا۔ پارٹی کے ترجمان نے کہا تھا کہ صرف کانگریس ہی اتنی نچلی سطح پر جا سکتی ہے اور یہ تبصرہ اس پر رد عمل دینے کے قابل بھی نہیں ہے۔

پارٹی نے اس پر افسوس کا اظہار کیا اور کہا کہ یہ غیر مہذب ٹویٹ پارٹی کے ایک نئے سوشل میڈیا منیجر نے پوسٹ کیا ہے۔ کرناٹک کانگریس کے صدر شیو کمار نے کہا کہ میرا ماننا ہے کہ سیاسی گفتگو میں سول اور پارلیمانی زبان سب سے اہم چیز ہے۔ شیو کمار نے ٹویٹ کیا کہ یہ غیر مہذب تبصرہ کرناٹک کانگریس کے آفیشل ٹویٹر ہینڈل سے ایک نئے سوشل میڈیا منیجر نے کیا ہے۔ اس پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے اسے واپس لینے کے بارے میں آگاہ کیا۔کرناٹک کانگریس کے ٹویٹ میں کہا گیا کہ کانگریس نے اسکول بنائے لیکن مودی کبھی پڑھنے نہیں گئے۔

ایک نظر اس پر بھی

جے ڈی ایس امیدواروں کی جیت کے ذریعے پارٹی کارکن اپنی طاقت کا مظاہرہ کریں: انیتاکمارسوامی

بنگلورو دیہی لوکل باڈیز حلقے سے ریاستی قانون ساز کونسل کیلئے ہورہے انتخابات کو جے ڈی ایس پارٹی نے سنجیدگی سے لیاہے اور اس انتخابات میں پارٹی امیدواروں کوکامیاب کرکے پارٹی کارکنوں کو اپنی طاقت کا مظاہرہ کرناہوگا۔یہ بات رکن اسمبلی انیتاکمار سوامی نے کہی۔

منگلورو : طلبہ کے درمیان گروہی تصادم - کئی طلبہ ہوئے زخمی -  پولیس نے مارا ہاسٹل پر چھاپہ - 6 طالب علم گرفتار ۔ مقامی لوگوں کا احتجاج ۔ ہاسٹل خالی کروانے کا مطالبہ  

شہر کے ایک ڈگری کالج میں زیر تعلیم اور گوجرکیرے علاقے میں واقع ہاسٹل میں قیام پزیر طلبہ کے دو گروہ آپس میں لڑ پڑے جس کے نتیجے میں بعض طلبہ زخمی بھی ہوگئے ۔ مار پیٹ اور تصادم کی اطلاع ملنے پر پولیس نے دیر رات ہاسٹل پر چھاپہ مار کر کئی طالب علموں کو گرفتار کر لیا ۔

چامنڈی پہاڑ پر زمین کھسکنے کے واقعات: نندی مجسمے کے راستے کو پیدل چلنے والے راستہ میں تبدیل کرنے اپیل

گزشتہ چند دنوں سے میسورو ضلع میں مسلسل بارشوں کی وجہ سے میسور کے قریب واقع چامنڈی پہاڑ پر زمین کھسکنے کے واقعات پیش آرہے ہیں جس کی وجہ سے پہاڑ پر واقع چامنڈیشوری دیوی کے درشن کو پہنچنے والے زائرین کو کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔