گلبرگہ میں حج بھون کی تعمیر کیلئے 10/ کروڑ منظور کرنے رکن اسمبلی کنیز فاطمہ کا وزیراعلیٰ کو میمورنڈم

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 15th February 2020, 12:20 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو،14/ فروری(ایس او نیوز) گلبرگہ ایرپورٹ سے رواں سال سے عازمین حج کو سعودی کے لئے راست پروازی کی سہولت فراہم کئے جانے کے امکانات کے پیش نظر گلبرگہ کی رکن اسمبلی محترمہ کنیزفاطمہ نے وزیراعلیٰ بی ایس ایڈی یورپا کو ایک میمورنڈم پیش کرکے درخواست کی ہے کہ گلبرگہ میں حج بھون کی تعمیر کے لئے رواں سال کے بجٹ میں 10/ کروڑ رقم منظوری کی جائے۔

کانگریس رکن اسمبلی کنیز فاطمہ نے اپنی طلب کردہ پریس کانفرنس کے دوران بتایا کہ گلبرگہ میں حج بھون کی تعمیر کے لئے پہلے ہی 5/ایکڑ زمین منظور کی گئی ہے لیکن یہاں حج بھون کی تعمیر کے لئے حکومت سے ابھی فنڈس منظور نہیں کئے گئے ہیں۔ رواں سال کے بجٹ میں یہ فنڈس منظور کرنے کی انہوں نے وزیراعلیٰ سے درخواست کی ہے۔ ایک سوال کے جواب میں کنیز فاطمہ نے بتایا کہ حکومت کی بدائی اسکیم کے لئے حکومت کی جانب سے باقاعدہ فنڈس جاری کئے جانے کے نتیجہ میں گلبرگہ ضلع میں قمرالا سلام صاحب کے دور سے اب تک 13.5/ کروڑ کی رقم ریلیز کی گئی ہے۔بدائی اسکیم کے ذریعہ اقلیتی طبقہ سے تعلق رکھنے والے مسلم خاندانوں کے علاوہ عیسائی،بدھ دھرم، سکھ اور پارسی طبقات کی مستحق خواتین کی شادی کے لئے 50/ ہزار کی امدادی رقم جاری کی جاتی رہی ہے۔ بدائی اسکیم سے امداد کے لئے مسلم طبقہ سے ہی زیادہ درخواستیں داخل ہوتی ہیں بروقت اس اسکیم کے لئے فنڈس جاری نہ کئے جانے کے نتیجہ میں 2014ء سے اب تک 8838/ درخواستیں موصول ہوئی تھیں ان میں سے 5842 / درخواستیں منظور کی گئی۔ 167/ درخواستیں مسترد کی گئی تھیں۔ گلبرگہ میں پانی کی قلت دور کرنے کے لئے وہاں اب تک 290/ بورویل کھودے گئے ہیں اور زیر زمین پانی کی سطح بہتر رہنے سے بورویلس سے باقاعدہ پانی حاصل ہورہا ہے۔ رکن اسمبلی کی حیثیت سے وہ شہر میں بنیادی سہولتوں کی جانب زیادہ توجہ دے رہی ہیں۔

گلبرگہ سٹی کارپوریشن کے لئے انتخابات نہ ہونے سے ان کے پاس لوگ زیادہ تر بلدی مسائل لے آتے ہیں اور انہیں ان مسائل پر زیادہ توجہ دینی پڑرہی ہے۔ بیدرشاہین اسکول میں بچوں کے ڈرامہ کو لے کر جو کیس درج ہوا ہے اس سلسلہ میں کنیز فاطمہ نے کہا کہ انہوں نے بیدر ضلع میں ہی اور ریاست کے ڈی جی پی کو خط لکھ کر مطالبہ کیا ہے کہ اس سلسلہ میں جو کیس درج کئے گئے ہیں انہیں واپس لیا جائے اور جس ٹیچر کو حراست میں لیاگیا ہے انہیں جلد رہا کیا جائے۔ اس معاملہ کو ایوان میں بھی اٹھایا جائے گا۔

ایک نظر اس پر بھی

کورونا پرقابو پانے کے لئے بیدر میں خدمات انجام دینے والے ڈاکٹر محمد سہیل کے جذبے کو لوگ کررہے ہیں سلام

یدر شہر میں 10افراد کی کورونا وائرس سے متاثر ہونے کی تصدیق کے بعد بیدر شہر کو مکمل طورپر لاک ڈاؤن کردیا گیا ہے مگر اس دوران بیدر کے ایک ڈاکٹر محمد سہیل حسین انچارج قدیم سرکاری دواخانہ بیدر نے انسانی جذبہ ہمدردی سے سر شا رہوکر اپنے طبی عملہ کے ساتھ دن رات COVID-19 کورونا وائرس جیسے ...

منگلوروکے ایک دیہات میں لگا نیا پوسٹرہندو بیوپاریو! ہمارے گاؤں میں آکر تجارت کرو:منفی پروپگنڈا کرنے والوں کومنھ توڑ جواب

کورونا وائرس کی وباء کو مسلمانوں کی سازش قرار دینے اور ان کے سماجی بائیکاٹ کرنے کی جو لہر چل پڑی ہے اور مختلف مقامات پر مسلمانوں کے داخلے اور آمد ورفت پر پابندی کے جو پوسٹرس، بیانرس اور آڈیو مسیج عام ہورہے ہیں اس سے سماج میں ایک عجیب تشویش پیدا ہوگئی ہے۔

ایمرجنسی معاملات میں کیرالہ کے مریضوں کا علاج مینگلور کے ڈیرلکٹہ اسپتال میں کرنےجنوبی کینرا ڈپٹی کمشنرکی رضامندی

کورونا وائرس کی وبا ء پھیلنے کے بعد کرناٹکا نے کیرا لہ کے ساتھ لگنے والی تمام سرحدیں بند کردی تھیں، جس کی وجہ سے مینگلور سے لگے کیرالہ کے سرحدی علاقہ  کاسرگوڈ اور اطراف سے علاج کے لئے منگلورو آنے والے مریض بری طرح متاثر ہوگئے تھے۔پھر یہ تنازعہ سپریم کورٹ تک جا پہنچا تھا۔ اور ...

منڈیا کے گاؤں والوں نے کرنسی نوٹوں کو دھویا، مسلمانوں سے کرنسی لئے جانے کی بنا پر نوٹوں کو دھونے کی خبریں

ریاست کرناٹک  کے دیہی علاقوں میں کورونا وائرس کی وباء تا حال نہیں پہنچی مگر اس کے تعلق سے سماجی کلنک یہاں اپنی موجودگی کا احساس دلارہا ہے۔ کیمرے میں قید ایک واقعہ میں منڈیا کے کئی گاؤں والے کورونا وائرس کے خوف سے کرنسی نوٹوں کو دھوتے ہوئے نظر آرہے ہیں، جس کے تعلق سے بتایا جارہا ...

جن اضلاع میں کورونا نہیں وہاں لاک ڈاؤن میں رعایت کا امکان؛ 11/اپریل کو وزیر اعظم مودی کی ویڈیو کانفرنس کے بعد ریاستی حکومت کی طرف سے اعلان متوقع 

وزیر اعلیٰ بی ایس ایڈی یورپا نے اشارہ دیا ہے کہ مرکزی حکومت کی طرف سے منظوری ملنے کی صورت میں ان اضلاع میں لاک ڈاؤن ختم کیا جاسکتا ہے جہاں کورونا وائرس کے واقعات بہت کم ہیں یا نہیں ہیں۔