کشمیر کو لے کر ٹرمپ کے ’ہندو -مسلمان‘ بیان پر اویسی برہم 

Source: S.O. News Service | By Shahid Mukhtesar | Published on 22nd August 2019, 12:02 AM | ملکی خبریں |

 نئی دہلی،21/ اگست (ایس او نیوز/آئی این ایس انڈیا) جموں و کشمیر کو لے کر امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ہندو مسلمان والے بیان پر آل انڈیا مجلس اتحادالمسلمین کے چیف اور حیدرآباد سے ممبر پارلیمنٹ اسد الدین اویسی نے مودی حکومت کی تنقید کی ہے۔  اویسی نے پوچھا ہے کہ کیا بھارت میں ہندو مسلمان ایک مسئلہ ہے؟ اگر نہیں تو حکومت خاموش کیوں ہے۔اسد الدین اویسی نے ٹوئٹ کر کے کہا ہے کہ کیا بھارت میں ہندو مسلمان مسئلہ ہے؟ اگر نہیں تو ڈونالڈ ٹرمپ کے بیان پر حکومت خاموش کیوں ہے؟ واضح ہو کہ ڈونالڈ ٹرمپ نے ایک بار پھر بھارت اور پاکستان کے درمیان ثالثی کی خواہش ظاہر کی ہے۔ ثالثی کی پیشکش کے درمیان انہوں نے متنازعہ بیان دیتے ہوئے کہا کہ کشمیر انتہائی پیچیدہ جگہ ہے۔ یہاں ہندو اور مسلمان بھی ہیں اور میں نہیں کہہ سکتا کہ:’ان کے درمیان اتفاق ہے۔ ثالثی کے لئے جو بھی بہتر ہو سکے گا، میں وہ کروں گا۔اس سے پہلے کل اسد الدین اویسی نے وزیر اعظم نریندر مودی اور ٹرمپ کے درمیان فون پر کشمیر مسئلے کو لے کر بات چیت پر بھی سوال کھڑے کیے تھے۔ اسد الدین اویسی نے کہا تھا کہ ہمارے وزیر اعظم نے فون پر کشمیر کو لے کر ڈونالڈ ٹرمپ سے بات چیت کی۔ ٹرمپ ہمارے لئے کیا ہے؟ کیا وہ پوری دنیا کے پولیس اہلکار ہیں یا وہ کوئی چودھری ہیں؟انہوں نے کہا کہ کشمیر ایک باہمی مسئلہ ہے اور کسی تیسری پارٹی کو مداخلت کرنے کی اجازت نہیں ہے۔غور طلب ہے کہ 19 اگست کو وزیر اعظم مودی نے ڈونالڈ ٹرمپ سے فون پر بات چیت کر ان سے پاکستان کی جانب سے دیئے جا رہے بھارت مخالف بیانات سے آگاہ کیا تھا۔ 

ایک نظر اس پر بھی

بابری مسجد انہدام کیس: کلیان سنگھ کو بطور ملزم عدالت میں پیش ہونے کا فرمان

 اترپردیش کے ایودھیا میں بابری مسجد کومنہدم کیے جانے کے مجرمانہ معاملے میں مرکزی جانچ بیورو (سی بی آئی) کی خصوصی عدالت (ایودھیا کیس) نے بی جے پی کے سینئر لیڈر کلیان سنگھ کو سمن جاری کر کے 27 ستمبر کو طلب کرلیا ہے۔