کرناٹک میں جے ڈی ایس مخلوط حکومت کو مستحکم رکھنے کانگریس خواہاں؛ تمام وزراء نے کیا کمارسوامی کی قیادت پر اظہار اعتماد

Source: S.O. News Service | By I.G. Bhatkali | Published on 25th May 2019, 4:02 AM | ریاستی خبریں |

بنگلورو۔24/مئی(ایس او  نیوز) لوک سبھا انتخابات میں کانگریس جے ڈی ایس اتحاد کی بدترین ناکامی کا آج وزیراعلیٰ ایچ ڈی کمار سوامی کی طرف سے طلب کی گئی غیر رسمی کابینہ میٹنگ میں جائزہ لیاگیا، اور طے کیاگیا کہ اس شکست سے مایوس ہوکر بیٹھنے کی بجائے آنے والے دنوں میں مخلوط حکومت کو اور متحرک اور مستحکم کرنے کے ساتھ اس کے ذریعے عوامی فلاح وبہبود کے لئے اگلے چار سالوں تک کام کرنے کی طرف پوری توجہ دی جائے گی۔

وزیراعلیٰ کمارسوامی کی طرف سے طلب کی گئی میٹنگ میں کانگریس اور جے ڈی ایس دونوں پارٹیوں کے وزراء نے کمار سوامی کی قیادت پر پورا اعتماد ظاہر کرتے ہوئے اعادہ کیا کہ کسی بھی حال میں مخلوط حکومت کو نقصان پہنچانے کی کوئی کوشش نہیں کی جائے گی۔ جو بھی آپسی اختلاف ہے اسے دور کرتے ہوئے چار سال تک اس حکومت کو آگے بڑھایا جائے گا۔

آپسی اختلافات کو بنیاد بناکر بی جے پی کانگریس کے کسی بھی رکن اسمبلی کو اپنی طرف راغب نہ کرنے پائے اس کے لئے تمام اراکین اسمبلی کو اعتماد میں لیا جائے گا اور ساتھ ہی ناراض اراکین اسمبلی کواقتدار میں مناسب نمائندگی دینے کی بھرپور کوشش کی جائے گی۔

وزیراعلیٰ کی ہوم آفس کرشنا میں طلب کی گئی میٹنگ میں تبادلہ  خیال کے بعد اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے نائب وزیراعلیٰ ڈاکٹر جی پرمیشور نے بتایاکہ انتخابات کے نتائج غیر متوقع رہے، اب ریاستی عوام نے جو فرمان دیا ہے اسے تسلیم کرتے ہوئے ریاستی حکومت کوشش کرے گی کہ عوام کی امنگوں کے مطابق کام کرے اور آنے والے دنوں میں ریاست میں سکیولر سیاسی طاقتوں کو مضبوط کرنے کی جدوجہد کی جائے ۔

لوک سبھا انتخابات میں کانگریس جے ڈی ایس اتحاد کی ناکامی کا فائدہ اٹھاکر بی جے پی کی طرف سے حکومت کو نقصان پہنچانے کی کسی بھی کوشش کا منہ توڑ جواب دیا جائے گا۔ نائب وزیراعلیٰ نے کہا کہ برگشتہ اراکین اسمبلی کسی بھی طرح آپریشن کمل کی زد میں نہ آئیں، اسی لئے انہیں طلب کرکے ان سے بات چیت کی جائے گی اور انہیں اعتماد میں لے کر ریاستی حکومت میں انہیں مناسب مقام اور مرتبہ دیا جائے گا۔ بتایاجاتا ہے کہ میٹنگ کے دوران وزیراعلیٰ کمار سوامی نے استعفے کی پیش کش کی اور کہاکہ کانگریس جے ڈی ایس اتحاد کی لوک سبھا انتخابات میں ناکامی کی اخلاقی ذمہ داری اپنے سر لیتے ہوئے وہ عہدے سے مستعفی ہوجائیں گے، تاہم وزیراعلیٰ کی تجویز کو تمام وزراء نے ایک ساتھ مسترد کرتے ہوئے کہا کہ کمار سوامی کی قیادت پر تمام وزراء کو اعتماد ہے، بحیثیت وزیراعلیٰ کمار سوامی کو پانچ سال تک ریاست کی کمان سنبھالنی چاہئے۔

کابینہ اجلاس میں شرکت سے پہلے کمار سوامی نے سابق وزیر اعظم ایچ ڈی دیوے گوڈا سے ملاقات کی۔ بتایا جاتاہے کہ اس ملاقات کے دوران مخلوط حکومت کو بچانے اور کسی بھی حال میں ریاست میں بی جے پی کو اقتدار پر آنے کا موقع نہ دینے کی تاکید دیوے گوڈا نے کی۔

بتایاجاتاہے کہ کل رات ٹمکور پارلیمانی حلقے سے دیوے گوڈا کی ہار کے بعد ان کے گھر میں صف ماتم بچھ گئی، وزیراعلیٰ کمار سوامی بھی دیر رات تک دیوے گوڈا کے ہمراہ موجود رہے۔ بتایاجاتاہے کہ دیوے گوڈا خاندان میں یہ تاثر قائم ہوگیا ہے کہ سابق وزیراعلیٰ سدرامیا نے منظم سازش کے تحت دیوے گوڈا کو ٹمکور پارلیمانی حلقے میں ناکامی کا سامنا کرنے پر مجبور کیا ہے۔

انتخابی نتائج کے فوراً بعد بعض حلقوں میں یہ قیاس آرائی کی جارہی تھی کہ کمار سوامی نے وزیراعلیٰ کے عہدے پر بنے رہنے سے انکار کردیا ہے، اور پیش کش کی ہے کہ کانگریس سے ہی کسی کو وزیر اعلیٰ منتخب کرلیا جائے جے ڈی ایس اپنی تائید برقرار رکھے گی۔ تاہم دیوے گوڈا نے کمار سوامی کو طلب کرکے سمجھایا کہ اس وقت اگر انہوں نے عہدہئ وزیر اعلیٰ استعفیٰ دے کر کانگریس کو حمایت کی پیش کش کی تو سدرامیا کے سوا کسی اور کو وزیراعلیٰ نہیں بنایا جائے گا۔ اسی لئے وہ چاہتے ہیں کہ کمار سوامی خود وزیر اعلیٰ بنے رہیں، آئندہ کوئی وزیر سدرامیا کے وزیراعلیٰ بننے کے متعلق بیان بازی نہ کرے۔ اسی مقصد کے تحت تمام وزراء کی میٹنگ طلب کرکے سیاسی مصلحت کامظاہرہ کیا گیا اور کمار سوامی نے جیسے ہی مستعفی ہونے کی پیش کش کی تو تمام وزراء نے کمار سوامی کی قیادت پر اپنا اعتماد ظاہر کیا۔ اپنی اس حکمت عملی سے کمار سوامی نے کابینہ میں شامل سدرامیا کے حامیوں کی زبانوں پر بھی تالے لگادئے۔

ایک نظر اس پر بھی

کیا کرناٹک کے وزیراعلیٰ یڈی یورپا کے خلاف بغاوت کے پیچھے ایک مرکزی وزیر کا ہاتھ ہے؟ کیا ریاست کی کمان کسی اور کو سونپنے کے لئے ہورہی ہیں کوششیں ؟

کرناٹک بی جے پی میں وزیر اعلیٰ یڈی یورپا کے خلاف 27 اراکین اسمبلی کی طرف سے شروع کی گئی بغاوت کو ایک مرکزی وزیر کی طرف سے ہوا دیئے جانے کی اطلاعات سامنے آئی ہیں۔

کرناٹک میں عبادت گاہیں یکم جون نہیں ، 8؍ جون کو کھلیں گی۔ ریاستی حکومت نے سابقہ فیصلہ واپس لیا، مساجد کے متعلق وقف بورڈ سے رہنما خطوط ایک دو دن میں

کرناٹک بھر میں ریاستی حکومت کی طرف سے یہ اعلان کیا گیا تھا کہ چوتھے لاک ڈاؤن 31 ؍ مئی کو ختم ہوتے ہی ریاست بھر میں یکم جون سے تمام عبادگاہوں کو کھول دیا جائے گا۔

ساحلی کرناٹکا میں رُکنے کا نام نہیں لے رہے ہیں کورونا معاملات؛ مینگلور میں دو دنوں میں 28 اور اُڈپی میں 23 معاملات؛ آج اُترکنڑا میں بھی پانچ پوزیٹو

مہاراشٹرا سے واپس آنے والوں میں  جس طرح کرناٹک کے دیگر اضلاع میں کورونا کے معاملات میں  تشویشناک حدتک اضافہ دیکھنے میں آرہاہے، اُسی طرح  ساحلی کرناٹکا کے اضلاع  اُترکنڑا، اُڈپی اور دکشن  کنڑا میں بھی کورونا کے معاملات میں روز بروز اضافہ دیکھا جارہا ہے۔

ریاستی بی جے پی حکومت میں میں بغاوت کے آثار، سرگرمیاں تیز ؛ جگدیش شٹر یا پرہلاجوشی کو وزیر اعلیٰ بنانے دو مختلف دھڑوں کی لابی

بھارتیہ جنتاپارٹی (بی جے پی ) میں دل بدلی کر کے آنے والوں سے پارٹی کے بنیادی ورکرس اور قائدین کے ساتھ ناانصافی ہورہی ہے، جس کی وجہ سے حکومت پھر ایک مرتبہ ڈانواں ڈول نظر آرہی ہے ۔ یہ بات کے پی سی سی کے کارگزار صدر شیش جارکی ہولی نے کہی۔

مرکزی اور ریاستی بی جے پی حکومتیں کورونا وائرس سے نپٹنے میں ناکام ؛ رام مندر سپریم کورٹ کے فیصلہ سے بن رہا ہے ، مودی اپنے سر سہرانہ بنادھیں : کانگریس

کرناٹک میں کانگریس نے کہا ہے کہ اس ملک کو ترقی کی راہ پر لانے کے لئے پچھلے 50 سال کے دوران جو محنت ہوئی تھی مودی نے اپنے 6 سالہ دور اقتدار میں اس ساری محنت پر پانی پھیر دیا ہے اور ملک کو انہوں نے اسی مقام پر پہنچا دیا ہے جب ملک کی حیثیت صفر تھی ۔کے پی سی سی صدر ڈی کے شیو کمار اور ...